Things that I learned from my daughter’s wedding…

.

There is no company that can be compared to the family, rest is only the matter of give and take, profit and loss.  I am thankful to Allah (SWT) for returning the love of my family to me.

.

Single mothers should not be worried about their daughter’s marriage.  Fatherless daughters are given away more decently.

.

Young couples can live happily if they learn to do things on their own and try to balance all relations.

.

All tasks are accomplished only with the help of Allah (SWT).

My Mother

This is the most common topic given to Kindergarten or First Graders to write five or ten sentences about.  They all start with “My mother’s name is ____.  She cooks for us.  She keeps the house clean.  She takes care of us all the time.  She is the best person in my life.  I love my mother.”

The irony is that the reasons that children are given to respect their mothers are all a continuous work, sacrifices, and home-services.  That gives a concept of a maid.  Those children grow up with the thought that it is mother’s job to do everything about everything.

Women in Pakistan live under high moral pressure. As mothers, they are called the shade of love, a tree that keeps blooming services till their death. Likewise, daughters are said to be parents’ best caretaker. While those daughter either sacrifice their matrimonial proposals or be criticized by their in-laws and husbands.   Men as fathers or sons are exonerated from all responsibilities. How clever of men!

Especially sons as they are boys or men, never get to realize that mothers are not their maid but a human being.  They are the one who fascinate mothers more than daughters so it is them, the sons who should try to be the source of joy for them.  Respecting mothers shouldn’t be due to their services.  Mothers do services because they know it is their responsibility.  Sons or men should feel their responsibility as well and take care of their mothers in the best manner.  Ignoring mother because of wife is nothing but a disgrace to all men.

I remember when I was reminded many times by my sister-in-law’s mother that daughters love their parents more than sons.  It was a moral pressure on me to call my parents and let them live with me so their daughter can enjoy her husband, all his money and luxuries.  That is why I say “saanp kay katay ka ilaj hay, Dehli walon kay katay ka nahi”.

The disappointment falls when brothers keep silent yet expect sisters to keep their honour in front of their in-laws.  In such cases, I am a rebellious monster ha ha ha ha ha ha.

My sister-in-law’s mother is a MOTHER too, but only of her daughters.  While for others’ daughters, she is peace-snatcher.

I also remember Bano Qudsia’s play “Sanwal Mor Moharan”, quoting “when a woman becomes a mother, she is not woman anymore, she becomes mercy and peace for everyone.”

I salute Bano Qudsia for saying that but only GREAT, JUST, WISE and KIND-HEART people like my own mother can understand this philosophy.

.

.

.

.

Politics and Women

Islam is not the religion of personalities but characteristics.  People in Islam are identified by their qualities.  Like people of Makkah pointed at Prophet Muhammad (pbuh) calling him “the truthful” and “the trustworthy”.  Not the qualities like, if they can eat two-dozen moving worms, they can walk on their hands and stand on their head, can dance on a string and make people crazy with the twist of their tongue, etc.

Similarly, politics in Islam is simply defined as working for the betterment of people.  Islam does not classify the process of betterment of people into spiritual and political, thus, the governing bodies are not categorized into religious and non-religious or modern or secular.

The most unfortunate thing that has been happening in Pakistan is that ignorant keep joining politics, even those having bachelors and master degrees and running business have no idea what politics means in Islam.  No matter where they belong, they are the follower of same slavish mentality and same methodology.

More than new faces or new characters, Pakistan needs people who can be identified with characteristics.

.

.

قسم سے کہ رہی ہوں کہ اگر پاکستانی عوام، سیاستدانوں کی طرح وقتی اختلافات بھلا کے ایک ہوجائیں، ایک دوسرے کا کہا سنا معاف کر دیں، ایک دوسرے کو کردار کی تمام غلاظتوں کے ساتھ قبول کرنا شروع کردیں اور صرف مالی فائدوں کی فکر کریں… تو وہ بھی سیاستدانوں کی طرح بہت جلد خوشحال بن سکتے ہیں…
اسکی تازہ ترین مثال ماروی میمن ہیں… مرد اس سے بھی زیادہ خبیث ہیں لیکن عورتیں ذرا جلد نظر میں آ جاتی ہیں اور انکا فیصلہ بھی جلد ہو جاتا ہے… 
.
ماروی میمن کا ایکسپریس نیوز پر انٹرویو سن کر احساس ہوا کہ شاید مولوی حضرات ٹھیک ہی کہتے ہیں کہ عورت ناقص العقل ہے کہ صحیح فیصلہ نہیں کر سکتی… عورت بھول جاتی ہے اس لئے اس کی آدھی گواہی ہے مرد کے مقابلے پہ… عورت کی زبان پر بھروسہ نہیں کرنا چاہیے اور نہ ہی اسے کسی فیصلے میں شریک کرنا چاہیے… وغیرہ وغیرہ… 
حیرت کی بات یہ ہے کہ ماروی میمن کو کیا یہ اندازہ نہیں تھا کہ نواز شریف کے ساتھ ملیں گی تو ان سے کیا کیا سوالات پوچھے جائیں گے… اور میڈیا انکی پرانی وڈیوز اور دعوے نکال کر دکھا سکتا ہے… سب سے اچھی بے وقوفانا بات یہ کہ اتنے سارے سال پرویز مشرف کے ساتھ غلطی سے گزاردیے… کمال ہے، خود اپنے کردار اور خصوصیات کے گھٹیا ہونے کی گواہی دیتے آهن اور عوام اور میڈیا کچھ کہے تو پابندی لگاتے ہیں، توہین حکومت کے قوانین بناتے ہیں…. کچھ تو تیاری کر لیتیں… ویسے مزہ بہت آیا… کہ جو حشر یہ سیاستدان قوم کا کرتے ہیں وہ ایک گھنٹے میں انکا ہو گیا… 
.
کیا ماروی میمن صاحبہ اپنے بزنس وغیرہ کے معاملات بھی اسی طرح نمٹاتی ہیں؟  بزنس سے یاد آیا کہ نواز شریف بھی تو کاروباری آدمی ہے… خیر امید ہے نواز شریف کے ساتھ انکی ذہنی، سیاسی اور کاروباری ہم آہنگی ہو جاۓ گی… لہٰذا پاکستانیوں کو ماروی میمن سے بحیثیت انسان کچھ امیدیں تھیں تو وہ بھی ختم کر لینی چاہییں… کیونکہ پاکستان میں انسان، کردار اور سیاست ایک ساتھ نہیں چل سکتے…
.
پرویز مشرف صاحب نے جس طرح خاندان کا طعنہ ماروی میمن کو دیا… کاش اپنے ساتھ کھڑے مرد سیاستدانوں کو بھی یہ طعنہ دے دیتے… وہ زیادہ حقدار ہیں اس طعنے کے… انکو پتہ نہیں تھا کہ سیاستدانوں کا کوئی دین ایمان نہیں ہوتا، یہ اپنا ساتھ دینے کے وعدے پر پیسے گھسیٹتے ہیں اور فیصلہ دوسروں کو کرنے دیتے ہیں تاکہ بعد میں وہی پھنسے… سارے کے سارے اسی طرح کھیلتے ہیں… 
.
ادھر ایم کیو ایم، پیپلز پارٹی اور کراچی کی دوسری جماعتیں مل کر کیا بھتے کا چکر چلا رہی ہیں… لگ رہا ہے اس خونی اور وحشی کھیل کے ذریعے امریکہ کا کوئی کارنامہ چھپانے کی کوشش کی جارہی ہے… وہ تو بعد میں کھلتا ہے معاملہ کہ کیا ہو گیا… کیونکہ زرداری تو بس انتظار کرتا ہے الطاف کی فون کال کا… کہ فون کال آۓ گی، کوئی سخت اقدام کرے گی ایم کیو ایم تو پھر وہ ایکشن لے گا… اور کاروباری لوگوں کو دونوں نہیں پوچھ رہے… انکے نقصان کا کیا ہوگا… آگے انکی کیا سیکیورٹی ہے… کچھ نہیں… باقی سارے لیڈرز خاموش بیٹھے ہیں…
.
اور کاروباری لوگ بھی کتنے بے وقوف ہیں… ایم کیو ایم کی باتوں میں آ گئے… سب سے مکار تو یہی جماعت ہے… یعنی کہ کراچی میں بھتہ خوری اور کاروبار کی بد حالی پر احتجاج بھی کیا تو خود اپنا ہی کاروبار بند کر کے… کیا فرق پڑا حکومت، ممبران قومی اسمبلی اور سیاست دانوں پر… یہی تو انکو کام دیا ہے کہ کسی طرح انکا دیوالیہ نکال دو…. پہلے یہ دہشت گردی مچاتے ہیں تو بزنس کمیونٹی ہڑتال اور کاروبار بند کرنے کی دھمکی دے دیتی ہے… پھر ایم کیو ایم ہمدرد بن کر یوم سیاہ مناتی ہے اور احتجاج میں دکانیں بند کراتی ہے… 
.
اور جو ٹی وی پر یہ آ کر بکواس کرتے ہیں کہ ہم کیوں اپنے ووٹنگ ایریا میں تباہی لانا چاہیں گے، اس طرح تو ہمارے ووٹرز بھاگ جائیں……. تو یہ باتیں تو وہاں ہوتی ہیں جہاں ووٹرز کا ہی نہیں بلکہ ہر انسان کا احترام کیا جاۓ اور اس کا حق مانا جاۓ … فیئر الیکشنز ہوتے ہوں….
.
یہ ساری کی ساری جماعتیں تو بندوق کے زور پر سارے کام کرواتی ہیں… فنڈز انہیں اسی کام کے ملتے رہتے ہیں انکے غیر ملکی آقاؤں سے… ورنہ جو عوام کے فلاح و بہبود انکا مقصد زندگی ہوتا تو خدا بزرگ و برتر کبھی انسانوں سے مخلص لوگوں پر اپنی رحمت کے دروازہ بند نہیں کرتا… اب ایدھی اور انصار برنی ٹرسٹ اور بہت سے اداروں کے ہوتے ہو ۓ سیاسی جماعتوں کو خدمت خلق وغیرہ کھولنے کی کیا ضرورت تھی… انہیں تو نظام صحیح کرنا چاہیے… ملکی وسائل کو کس طرح استعمال میں لانا ہے، لوگوں کو اپنے پیروں پر کس طرح کھڑا کرنا ہے… گلی گلی لوگوں کے حالات اور خیالات کا جائزہ لینا وغیرہ… 
بہت ضرورت ہے کہ اسلامی طرز سیاست کے اعلی تصورات کو طلبہ اور نئی نسل میں عام کیا جاۓ… شاید کوئی نسل کبھی فائدہ اٹھا لے…

.
کاش خوشبخت شجاعت، نسرین جلیل، ماروی میمن اور بے شمار ان جیسی عورتیں سیاست میں آنے سے پہلے تحریک پاکستان کی عظیم خواتین محترمہ فاطمه جناح، رعنا لیاقت علی خان، بی اماں، لیڈی عبدللہ ہارون کے بارے میں پڑھ لیتیں کہ ملک کو حاصل کیسے کیا جاتا ہے اور کیسے قائم رکھا جاتا ہے…

ان سب کو یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ اسلام شخصیات کا نہیں کردار کا مذہب ہے… اور صرف کردار سے ہی نظام قائم بھی ہوتا ہے اور چلتا بھی ہے…

.
.

Which one is a better choice?

Burying daughters alive when they are infant or toddler OR raise them to adulthood and push them into the dungeon of unending trials, frighten them, torture them, listen to their screams and pleadings, throw acid on them, kill them?

Unfortunately, no other options are there for women to decide their fate.

Morally, legally and logically, both these choices are a sin but who cares about it.  Sin is no more a sin in civilized world until it is proven as a crime.

Arab tribes before Islam used to bury little daughters alive.  Now, we bury them after making their long horror movie.  

“And when the girl-child who was buried alive is asked, upon what sin was she killed for?”  Surah At-Takweer/The Rolling Up

“When one of them gets a baby girl, his face becomes darkened with overwhelming grief. Ashamed, he hides from the people, because of the bad news given to him. He even ponders: should he keep the baby grudgingly, or bury her in the dust. Miserable indeed is their judgment.” Surah An-Nahl/The Bee

Prophet Muhammad (pbuh) strictly condemned the act of burying little girls alive.  He strongly urged men to treat women gently and with kindness.  Most Muslims men disobey the Prophet (pbuh), which is a practical blasphemy.  Yet, no religious leaders raise their voice against this disobedience and pass verdict on this blasphemy.

On the contrary, women are forced to shut their mouth and tolerate torture in lieu of Paradise.

“So their Lord accepted of them (their supplication and answered them), “Never will I allow to be lost the work of any of you, be he male or female. You are (members) one of another…” Surah Al-e-Imran/The Family of Imran 195

Okay, both ways God Almighty be happy with women.  What about men, would God be happy the way men control women and spread the carpet full of nails and thorns for them to walk on it in order to please God?

.

God is mine too!

I say Allah (SWT) is my Lord.  He created me a human.  He raised me in a geographically well-defined piece of land called Pakistan.  He taught me how to talk.  He listens to my prayers.  He supplies all the provisions to me.  He enables me to see dreams, think ideas and carry on with my plannings.  He consoles me when I have fears.  He condoles me when I lose myself and helps me retrieve my spirit.  He has promised me the Paradise if I be humble and fair.  Even if I am not and I fail in doing good, I still expect Him to be Merciful and Kind to me.  For He is free of all needs and I am completely dependent upon His mercy.  

Men have abandoned the house of Allah for me though, no place for me in the mosque….but they can’t stop me from worshiping Him and remembering Him.  

I don’t feel like I am puppet to men.  I don’t need to see things through their eyes and speak their words as I have my organs functioning properly.  I don’t need men to impose their religious rulings on me.  By the Grace of God, I am an average intellectual and have low IQ.  I can read Qur’an, understand it and if I want to I can consult men scholars.  I seek refuge in Allah from depending upon men like a slave.  AMEEN!

However, I do believe in good man-ship and if it exists then women should show some good women-ship to prove that ships do run on land.  LOL!

Just like Whoopi sang, “Nothing in the world can take me away from my God”…

Women in Pakistan are produced, raised and consumed like a commodity.  After one thousand four hundred and thirty three years of coming of Islam, still the two genders have no sense of equality for each other.  Okay, gender equality is a controversial topic in religion, but they should delivered the due rights to each other as a human being at least.  Even women look upon themselves as a service to men and then they complain their dominance.

Nature receives our words as commands and responds accordingly.  What women keep reminding girls and other women fills air as their desire.  

Women don’t realize that brainwashing girls through so-called words of wisdom and as a reinforcement to their duties in Islam encourages men to act like God.  

1) Women can’t live without men and all men behave same to just tolerate them and women will be rewarded Paradise.  This sounds like admonishing women that there is no justice for them in this world.  Their entry to Paradise is conditioned to tolerate men as a deity – the angered one.  This is like challenging the verses of Qur’an and disregarding the God’s words.

“Believers, men and women, are protectors of one another. They enjoin what is just and forbid what is evil. They observe regular prayer and practice regular charity, obey God and His messenger, and on them God will pour His mercy, for God is exalted in power and right. God has promised to believers, men and women, gardens under which we were supposed to dwell therein, beautiful mansions and garden of everlasting bliss, for the greatest bliss is the pleasure of God, that is the supreme”… Surah At-Taubah/The Repentance 71

“And one of His signs that He created for you, your mate from among yourselves that you may dwell in tranquility with them and He has put love and mercy between your hearts verily in that are the signs for those who reflect”… Surah Ar-Room/The Rome 21

“Treat them (women) politely for even if you dislike them, perhaps you dislike something which God has placed much good”… Surah An-Nisa/The Women 19

2) Women should cover themselves because their grandfather or father or brothers want them to or they shouldn’t do certain things because their men don’t want them to.  I think women should fear God Almighty more than their men at home.  This is just like replacing God by men in likes and dislikes.  It is Allah (SWT) who ordained the commandments and to Him we all are answerable.  So, men and women should submit themselves to God Almighty and not to each other.

3) Men know better than women.  This statement is still unproven religiously, scientifically and logically.  I think it was a set up in jealousy to put their wisdom aside.  In other words, it was invented to kill the better-half potential.  I don’t feel low with this non-sense.  

In fact, I feel proud when I read about how Prophet Muhammad (pbuh) valued his women.  He loved and respected Hazrat Khadijah because she was his companion in every high and low.  At Hudaibiyyah, he (pbuh) listened to his wife Umm-e-Salama’s advise and changed his attire and slaughtered the animal in order to convince his companions to do so.  He helped his wives at home.  He greeted them, smiled at them, played with them, joked with them.  No wonder his wives adored him.

4) Men have the right to make final decision.  They must consult with their women especially if it has something to do with their lives and then men can announce it as their final decision.  Isn’t it fair?

5) All women go through these trials so just leave everything to God, He will deal with men.  All I could understand from this, is that women are born to play no role except what is decided for them by men, no words of their own except the script handed over to them by elders, no action unless signaled by the directors around them.  Hell to that, this is so robotic.  If this is the case, women had been created as animals or birds or they had been made in factories.  God Almighty had not given them a mind to think, a conscious to understand and a will to obey or rebel. 

Which trials do women should tolerate – God-descended or man-made?  Has God allowed men to put women into trails and be the judge to their right and wrong?  The God I believe in would never allow any of His creation to play God to their fellows.

Let God deal with men and men deal with women – why not let men and women deal with each other and let God be the judge to both? – this is the teaching of Islam after all.

6) Women should tolerate injustice for the sake of their daughters otherwise the society won’t respect them and won’t accept them.  First of all, keep aiding such society with thoughts of demoralization  and expecting no barbarism and disasters is not Islam at all.  This is not wise at all to state prejudgments about society unless you face it personally otherwise it starts happening for real and then you have to face it.  Either by choice or compulsion, tolerance is an inability to resist in a certain situation.  It should not be preached as a habit or characteristic, otherwise it guarantees the rise of brutality.  That is why Qur’an introduced the law of “equal reaction” – an eye for an eye – and believe me it does not make the world blind but warns those who love to make the world blind.

Girls or women should worry more about God’s approval or disapproval for He is the true Lord, the Exalted One.

.

Allah (SWT) is not the deity unjust.  He created both men and women as humans.  His book is a guidance for both men and women.  He ordained laws to establish justice between the two genders so they can lead a peaceful life for their generations.  

Women need to develop humanity in them, for themselves.  They need to remove the concept of men’s supremacy on them.  They don’t need to pretend so naive that they can’t retaliate an attack or can’t take any revenge.  Taking revenge or seeking justice is as lawful for them as it is for men.  They don’t need to be biased but it is their right to know their rights.  They must find out how their Lord Almighty addresses to them in Qur’an.  The verses of justice in Qur’an are for both men and women.  Women don’t need to rely upon men to tell them about their duties and their status.  That is because men will not be the judge on the Day of Judgment.  They will be standing beside us waiting for accountability.

.

.

Working Women

Women in Pakistan have their representation in almost every field of life.

The common or low-paid women are not recognized as an employee.  There no laws to protect their rights – type of work suitable to their physical structure, proper salary, flexible hours, their children’s education, etc.

This is their greatness that regardless of all poor conditions, they still prefer to earn money a dignified way and that is by hard work.

.

This slideshow requires JavaScript.

World Women’s Day – بین الاقوامی یوم نسواں

 “(In principle) corrupt women are for corrupt men and corrupt men for corrupt women; just as good, pure women are for pure men and pure men for pure women…” (Surah An-Noor)

This is the Quranic or Divine rule for the companionship of men and women.  They don’t get attracted to each other by their appearance but by their instinct of evil desires or virtues.

But even Muslims seldom doubt on this rule as each man and woman consider themselves pure, innocent, pious and sin-free person.  Men don’t pray and read Quran but they want their wives to be a punctual in religion and women do the same thing.  Women do cheat on their husbands and yet blame them for enjoying prostitute gatherings and men do the same thing.  Parents lie and expect their children to speak truth.  Men and women watch adult movies and obscene clippings and want their children to grow up pious.  They want to save little ones from the moral and financial corruption they couldn’t resist.

It is women who demand dowry and create all kinds of problems at homes, they burn their daughter-in-laws, they conspire for their sister-in-laws, they hate their mother-in-laws and then they are the one who step out and shout slogans against dowry.

I still don’t get it that what is the real purpose of observing women’s day.  Women’s rights are seized by their own men, women’s are tortured and abused by their men at home.  Those men rule the world outside home – the employer, the officer, the colleague, the vendor, the agent.  Who do then women stand against and who do they ask for help?

Don’t most women realize that they are abused by men because of how they amuse men?  Or take it this way that women abuse themselves when they try to amuse wrong men the wrong way.

What do they demand as their right – food, clothes, shelter, healthy environment, educational and working opportunities, their participation and representation in national and social issues OR dancing and singing on the streets, exposing their body parts?  And if they do so then why do they complain about men behaving like men and treating them like women, while they both don’t behave humanly?

Why isn’t there a day for men too, don’t they have problems created by women, don’t they suffer frustrations and commit crimes due to them?  Why don’t men tell the world how they feel when women are around and if they want to protect their dignity as well as women’s honour or they take advantage of the situation?

.


 

تپش تو چھاؤں میں سورج سے بھی زیادہ ہے
جھلس رہا ہوں کہ شیشے کے سائبان میں ہوں
” خبیث مرد خبیث عورتوں کے لئے اور خبیث عورتیں خبیث مردوں کے لئے… پاک مرد پاک عورتوں کے لئے اور پاک عورتیں پاک مردوں کے لئے…” (سوره النور) 
.
یہ قرآنی اصول ہے… لہذا عورتوں کو مردوں کی اور مردوں کو عورتوں کی شکایات کرنے سے پہلے اپنے کردار اور اوصاف بھی دیکھ لینے چاہییں… عورت اور مرد انسان پیدا کے گۓ ہیں… اگر عورت صرف خود عورت سمجھ کر اور عورت ہی کی خصوصیت کے ساتھ دنیا میں پیش کرے گی تو پھر مرد بھی صرف مرد بن کر ہی اس سے ملیں گے… 
.
عالمی یوم نسواں… خواتین کا عالمی دن… بین الاقوامی قوتوں نے چاہا کہ یہ دن یا کوئی بھی دن منائیں تو منا لیا… جو جو موضوع انہوں نے اس حوالے سے چاہا کہ اجاگر ہوں وہ کر دیے… اور کیوں نہ ہو ہما رے اور بین الاقوامی قوتوں کے درمیان یہ آقا اور غلاموں جیسا تعاون… آخر کو دنیا کے معاملات بگاڑنے میں انکی عقلمندی اور ہمارے انکی عقل پر ایمان لانے کا بہت بڑا حصّہ ہے….
.
اگر عورتوں کا عالمی دن ہو سکتا ہے تو مردوں کا کیوں نہیں؟  کیا مردوں کے مسائل نہیں ہوتے… انکے ساتھ بھی تو زیادتیاں ہوتی ہیں… انھیں بھی گھر کے اندر اور باہر پریشانیوں کا سامنا ہوتا ہے… انکی تربیت میں کمی یا زیادتی بھی تو مسائل کو ہی جنم دیتی ہے… 
.
اگر یہ عالمی دن ہر قسم کی خواتین کے لئے ہے تو اس کا اصل مقصد کیا ہوا؟ کیونکہ خواتین کوئی الگ مخلوق تو ہیں نہیں کہ ایک دن انکو سب دیکھیں اور انکی باتیں کریں اور تماشہ لگائیں… عورتیں خوش ہوں مبارکباد دیں کہآگیا آگیا ہمارا دن آگیا آگیا جیسے سال میں ایک مرتبہ عید بھی آتی ہے… خوشحال، مطمئن خواتین ان خواتین کا ذکر کریں جن پر ظلم ہوۓ ہیں… انکے لئے آواز اٹھائیں… اور مظلوم خواتین کو تھوڑی تسلی ہو جاۓ کہ کوئی ہمارا ہمدرد ہے… اور مل جل کر دن گزار لیا جاۓ…
.
اگر یہ دن مظلوم خواتین کے لئے ہے تو مبارکباد کیسی اور کس کی طرف سے کس کو؟ جس حساب سے ہم پورے سال خواتین کے حقوق، آزادی، مظلومیت، تشدّد اور جہالت کا رونا روتے رہتے ہیں… اس حساب سے تو سال کے تین سو پینسٹھ دن ہی خواتین کا ہی دن منایا جا رہا ہوتا ہے… تو اس ایک دن میں کیا خاص بات ہے… اور میں تو کہتی ہوں کیسی مظلومیت اور کیسے حقوق… ایم کیو ایم کے جلسے میں کیا کیا نہ کر گئیں… طوائفیں شریفوں کے گھروں میں نہیں آسکتیں تو کیا ہوا، گھروں کی  معزز خواتین تو سرعام ناچ گا سکتیں ہیں… اگر خوشبخت شجاعت صاحبہ دو لاکھ خواتین سے صرف اتنا بھی وعدہ لے لیتیں کہ وہ کوڑا سڑکوں پر نہیں پھینکیں گی اور اپنا اردو کا تلفظ ٹھیک کر لیں گی… تو یہ سمجھا جا سکتا تھا کہ انکا تعلیم و تہذیب سے کوئی تعلق رہ گیا ہے… 
.
.
عجیب ترین بات یہ ہے کہ زیادہ تر خواتین کے ساتھ جس بھی قسم کی زیادتی ہو وہ گھر میں ہو رہی ہوتی ہے لیکن انصاف مانگنے وہ سڑکوں پر نکل جاتی ہیں… لیکن کس سے، دوسرے مردوں سے جو کہ در حقیقت دوسرے مرد نہیں ہوتے بلکہ دوسروں کے مرد ہوتے ہیں اور کہیں نہ کہیں اپنی خواتین کے ساتھ زیادتیوں میں ملوث ہوتے ہیں؟… باپ، شوہر، بھائی، بیٹے، بہنوئی، جیٹھ، دیور، سسر، داماد، چچا، ماموں، تایا… اور ان سے رشتے میں بندھی ہوئی خواتین… اور پھر وہی مرد گھروں سے باہر کام کرتے ہیں بلکہ کہنا چاہیے کہ گھر سے باہر کی دنیا کے مالک بن جاتے ہیں… مختلف اداروں میں، مختلف کاروبار میں، مختلف روپ میں… 
.
ایک تازہ مثال وحیدہ شاہ کی ہی لے لیں… صرف تھپڑ ہی مارے تھے، زنا با لجبر نہیں کیا تھا، قتل نہیں کیا تھا، عورت کو برہنہ سر بازار نہیں گھمایا تھا… لیکن ہزاروں مرد نکل آۓ سڑکوں پر اور جھٹ پٹ سزا ہو گئی وحیدہ شاہ کو… وحیدہ شاہ کے گھر کے مردوں کو بھی شاید موت آ گئی تھی… یہی اگر وحیدہ شاہ کے باپ، بھائی، بیٹے یا شوہر کا معاملہ ہوتا تو وہ خود سڑکوں پر ماری ماری پھر رہی ہوتیں انکی عزت بچانے کے لئے… 
.
جبکہ ہزاروں مرد جنسی زیادیوں، قتل، عورتوں کو برہنہ کر کے سرعام پھرانے، تیزاب یا مٹی کا تیل یا پٹرول پھینک کر جلانے، ناک کان کاٹنے جیسے بھیانک جرائم کرتے ہیں اور نہ تو انکی خواتین انکے خلاف کوئی اقدام کرتی ہیں، نہ پولیس، نہ حکام اورنہ ہی علاقے کے مرد…
.
مرد اور عورت اگر دونوں انسان ہیں اور دونوں ہی ایک دوسرے کے لئے مسائل کا باعث ہیں تو انسانوں کا عالمی دن کیوں نہیں منایا جاتا، انسانی مسائل سے نجات کا عالمی دن کیوں نہیں منایا جاتا، عزت و احترام کا عالمی دن کیوں نہیں منایا جاتا؟  
.
مردوں اور عورتوں کے مسائل تربیت اور انصاف نہ ہونے کی وجہ سے ہیں… تو پھر انصاف اور تربیت کا عالمی دن کیوں نہیں منایا جاتا؟
.
انسانی کرداروں کے بجاۓ  انسانی کردار کا دن کیوں نہیں منایا جاتا؟  
.
ذرا سوچیں اگر ایک ایک دن بھی اس طرح منا لیں تو کتنا سدھر جاۓ دنیا…. کہ آج سچ کا عالمی دن ہے تو آج کسی حال میں جھوٹ نہیں بولنا ہے… آج ایمانداری کا عالمی دن ہے تو آج کسی بھی صورت کسی کو دھوکہ نہیں دینا ہے… آج احترام کا عالمی دن ہے تو آج سب کو نظریں جھکا کر اچھے الفاظ میں بات کرنی ہے… آج امانت داری کا عالمی دن ہے تو آج کسی کی چیزوں میں، باتوں میں یا عزت میں خیانت نہیں کرنی ہے… آج رشک کرنے کا عالمی دن ہے، اس لئے آج کسی سے حسد نہیں کرنی بلکہ کوئی اچھائی تلاش کر کے تعریف کرنی ہے اس کے لئے کہتے ہیں “بَارَكَ اللهُ فِيْكَ” لڑکوں یا مردوں کے لئے اور “بَارَكَ اللهُ فِيْكِ” لڑکیوں اور عورتوں کے لئے، مطلب یہ کہ الله آپ کو برکت دے، یا سیدھا سیدھا “ماشاء الله” کہ دیں…. آج دعاؤں کا عالمی دن ہے تو آج صرف ایک دوسرے کو دعائیں ہی دعائیں دینی ہیں کسی بھی زبان میں… آج برداشت کا عالمی دن ہے تو آج ہر ایک کی بد تمیزی کو نظرانداز کرنا ہے… وغیرہ وغیرہ….
.
خواتین کے عالمی دن کے موقعے پر میں اداکارہ میرا، ریما، صائمہ، ثنا، ریشم، نرگس، سنگیتا اور بہت سی ایسی ہی خواتین سے گذارش کروں گی کہ براۓ مہربانی فن اور اداکاری کے نام پر اپنے جسم کے حصّوں کو اتنے شدید جھٹکے نہ دیا کریں کہ ایسا لگے وہ ابھی آپ کے جسم سے نکل کر آپ کے چاہنے والوں اور پرستاروں کی گود میں جا گریں گے… خیر سے اسی کو بے ہودگی اور بے حیائی کہتے ہیں… فن اور اداکاری کے ذریعے دولت اکٹھی کرنا آپ کا حق ہے… فن اور اداکاری کے نام پر اپنے جسم کو آخری حدوں تک ننگا کرنا بھی آپ کا حق ہے لیکن شاید پبلک میں نہیں… اپنے ہی جسم کو برہنہ کر کے اپنے ہی ملک و قوم کے مردوں کو دیوانہ بنایا اور بھٹکایا تو کیا کمال کیا؟  تو پھر زرداری جیسے مرد ہی میرا کو صدارتی ایوارڈز دے سکتے ہیں کیوں کہ ایسے ہی کم نسلوں کو آپ تفریح فراہم کر رہی ہوتی ہیں… خیر ہو سکتا ہے کہ آپ کو عزت اور شرم و ہی کی یہی تعریف بتائی جاتی ہو…
.
.
عورتوں کے عالمی دن کے موقعے پر وہ ایک عہد کریں کہ کم از کم کسی ایسے لڑکے یا مرد سے شادی نہیں کریں گی جو کس بھی قسم کے کرائسس سے گذرا ہو اور پھر نارمل نہ ہو سکا ہو… ہمارے معاشرے میں ایسے مرد سری زندگی خود کو مظلوم سمجھتے رہتے ہیں اور عیش کرتے ہیں… کبھی امّاں آگے پیچھے، کبھی بہنیں دائیں بائیں، کبھی بیٹی کو جذباتی بلیک میلنگ، کبھی بیوی کو دھمکیاں اور تشدد… کبھی نشے میں غموں کا علاج ڈھونڈ رہے ہیں… کبھی طوائفوں کے در پر پڑے اپنی ناکامیوں کی داستان سنا رہے ہیں… خوب مزے ہو رہے ہیں… ایسے مردوں کی نفسیاتی کیفیت اور باؤلا پن بھگتنے کے لئے انکی شادی کر دی جاتی ہے… اور وہ ساری زندگی اپنی محرومیوں اور زیادتیوں کا بدلہ اپنی بیوی سے لیتے رہتے ہیں جس کا کوئی قصور نہیں ہوتا… ایسے مردوں کو ایک سال باسی روٹی گرم پانی سے دو وقت کھلانی چاہیے اور دونوں کھانوں کے درمیان میں بارہ گھنٹے کا وقفہ ہونا چاہیے….شادی سے پہلے لڑکوں اور مردوں کا ایک سالہ چیک اپ ہونا ضروری ہے اور دماغی امراض کے ڈاکٹر اور نفسیاتی معالج سے سرٹیفکیٹ لینا چاہیے کہ یہ انسان کا بچہ بن کر نارمل زندگی گزار سکتا ہے کہ نہیں… لڑکے کے گھر والوں کے بارے میں بھی چھان بین کرنی چاہیے کہ انکو کیا کیا دماغی تکلیفیں ہیں… نارمل ہیں کہ نہیں… 
.
خواتین کے عالمی دن کے موقعے پر خواتین عہد کریں کہ وہ کسی دوسری خاتون کے حقوق نہیں چھینیں گی، اس کو برباد نہیں کریں گی، اس کے منہ سے نوالہ نہیں چھینیں گی… طعنے نہیں دیں گی، اس کو گھر کے مردوں کے ذریعے تشدد نہیں کرائیں گی… اپنے بیٹوں کے عیب چھپا کر کسی لڑکی کو تباہ نہیں کریں گی… 

What can women do? عورتیں کیا کر سکتیں ہیں؟

غرورزہد نے سکھلا دیا ہے واعظ کو
کہ بند گان خدا پر زبان دراز کرے
.
اقبال کے اس شعرمیں اگرواعظ کی جگہ لفظ مردوں اور بندگان خدا کی جگہ عورتوں لگا دیا جا ۓ… تو آج کے معاشرے پرسو فیصد پورا اترے گا…
.
ہم بھی عجیب لوگ ہیں… پہلے گھسیٹ گھسیٹ کر خواتین کو آزادی، حقوق، انسانیت اور ترقی کے نام پرمعاشرے کے بیچ میں لا کر کھڑا کر دیتے ہیں…… تقریبا ہر دوسری لڑکی یا خاتون کو کوئی تحفظ اور کوئی رہ نمائی حاصل نہیں ہوتی… سب اس کے کردارآزمانے میں لگ جاتے ہیں… جب تک کہ وہ کوئی غلطی یا بھیانک غلطی نہ کر بیٹھے… پھر سب اسے اکیلا چھوڑ دیتے ہیں… ہر قسم کا بواۓ کاٹ سہتی ہیں… پھر قوم سے معافی بھی مانگتی ہیں… اور یہ لمحہ ہوتا ہے تمام مردوں کے لطف اندوز ہونے کا… لعنت، ملامت، گالیاں، الزامات… سب کی زبانیں ایسے کھل جاتی ہیں جیسے خود تو ابھی رسول الله صلی الله علیہ وسلم کی صحبت سے اٹھ کرآۓ ہیں… اور یہ وہ لمحات ہوتے ہیں جب رسول الله صلی الله علیہ وسلم کی کمی محسوس ہوتی ہے… 
سب کو چھوڑ دیں، مایا خان کا کیس نیا ہے… پہلے یہ اعتراض کہ اس نے کیوں ایسا شو کیا کہ لوگوں کی پرائیوٹ زندگی میں گھس گئیں… اور اب یہ پتہ چلا کہ وہ سب ایک ڈرامہ تھا… کیا ہوا اگر یہ ڈرامہ تھا… سیاست، دین، ذاتی زندگی، سکول، کالج، ٹی وی، فلمز سب ڈرامہ ہی تو ہو رہا ہے… کیا ہوا اگر مایا خان نے ایک ڈرامہ کر لیا… اس ڈرامے سے ڈر کس کو لگا… اگر میں کچھ غلط نہیں کر رہی، اگر میں اپنے گھر والوں کی اجازت سے کسی لڑکے یا لڑکی کے ساتھ ہوں، اگر میں اپنے کلینک، پارلر، سکول یا کسی بھی بزنس میں بے ایمانی نہیں کر رہی تو مجھے کسی بھی مایا خان یا پولیس کا کیا ڈر…… اور چلیں اس نے غلط کیا… اس کو ٹی وی سے نکال دیا گیا… کیا گالیاں، لعنت، طنزیہ جملے… مردوں کا یہ حق تھا کہ اسے کہتے… اور اس کی معافی سے کس کس کے دل میں ٹھنڈک پڑ گئی… 
.
مصطفے کمال نے کتنوں کو الو کا پٹھا کہا، کبھی معافی نہیں مانگی… سید بلال قطب نے عائشہ نامی لڑکی کو غلط طریقے سے مسلمان کرکے اسلام کا مذاق اڑایا، اس نے بھی معافی نہیں مانگی اور اب تک جیو پرپروگرام عالم آن لائن کر رہا ہے… الطاف حسین نے قرآن کے سامنے ناچ گانا کیا، کوئی معافی نہیں مانگی… اگر واقعی پاکستانی مرد اپنے ماں باپ کی جائز اولادیں ہیں تو ذرا ان کے بارے میں بھی یہی زبان استعمال کریں… انکو بھی دباؤ دلوا کر فارغ کروائیں ملازمتوں سے… 
.
میرا کی انگلش پر اعتراض ہے… ذرا خوشبخت شجاعت اور نسرین جلیل سے ایک تقریر انگلش میں کروالیں… پڑھی لکھی ہیں، ناچ گانا بھی ماشاللہ کر لیتی ہیں… بلکہ مصطفے کمال سے ہی انگلش میں تقریر کروالیں… اور پھر ذرا انکا مذاق بھی اڑا لیں اگر کسی مائی کے لال کی ہمّت ہے… 
.
منیر اس ملک پر آسیب کا سایہ ہے یا کیا ہے
کہ حرکت تیز تر ہے اور سفر آہستہ آہستہ
.
ہم ٹی وی کا نیا ڈرامہ “سسرال کے رنگ” کا گانا سنا؟  “ایسا ٹونہ کردے ماں پیوں پیوں آۓ سیاں، ایسا ٹونہ کر دے ماں جھکی جھکی آۓ ساسو”… 
.
ان حالات میں جب کہ پوری قوم جادو ٹونے کے سنجیدہ مسائل کی وجہ سے پریشان ہے… لوگ حقیقت میں اپنی خوشیوں اور زندگیوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں…ان کے گھر اجڑ گۓ ہیں، اولادیں بلکہ نسلیں برباد ہوئیں ہیں… ہم یہ دکھا رہے ہیں بلکہ کہنا چاہیے کہ ورغلا رہے ہیں قوم کو… 
.
دوسری بات یہ کہ آج کہ دور میں جب لڑکیوں کو انکی پسند کی شادی کا حق دلانے کی اور خود زندگی کا سامنا کرنے کی تربیت کی ضرورت ہے… ان میں اور انکی ماؤں میں پھر خیال جگانا کہ لڑکیوں کو شادی سے پہلے بھی اور بعد میں بھی ماں کی منفی کردار کی کتنی ضرورت پڑتی ہے… لوگوں کو یہ احساس دلانا کہ لڑکی کی ماں فساد کا باعث ہوتی ہے… اور لڑکیاں شوہر اور ساس کو قابو کرنے کے لئے اپنی ماں سے
جادو ٹونہ کی فرمائش کر سکتی ہیں…
.
ہم ٹی وی کے لئے تو یہ ہو گیا اینٹرٹینمنٹ کا سامان اور پیسہ بٹورنے کا ایک اور ذریعہ… اداکار اور اداکارائیں تو ہوتے ہی حساس، سادہ دل، اپنے کام سے کام رکھنے والے، بے جان  مٹی کے پتلے، لہٰذا ان سے کیا کہنا… رہ گئی ہماری ٩٥% جاہل عوام جس کی ٥٥% اور بم دھماکوں میں مردوں کے رضاکارانہ طور پر مرنے کے بعد شاید ٧٠% آبادی خواتین ہیں… 
.
ایسی خواتین جو لاکھوں کی تعداد میں ایک چھچھورے شخص سے چھچھورا سا گانا اور “آ ئی لو یو” سننے نہ صرف پنہنچ جاتی ہیں… بلکہ اس کی خوشی اور حکم پر سر عام ناچ گا بھی لیتی ہیں… تعلیم یافتہ خواتین انھیں لیڈ کرتی ہیں… 
.
ایسی خواتین جنہوں نے پہلے ہی مظلومیت کہ نام پر قیامتیں ڈھائیں ہوئیں ہیں… خاندانی سیاستوں میں انہوں نے زرداری اور نواز کو مات دے دی ہے… علاقائی اور لسانی فرقہ واریت، مذہبی رقابت، خونی رشتوں سے حسد اور سازشوں میں انکا کوئی ثانی نہیں… اس قسم کے گانے سن کر ان کی کتنی حوصلہ افزائی ہوگی… 
.
ہم ٹی وی نے ایک اور کمال یہ کیا کہ ہالی ووڈ کی کارٹون فلمز اور دوسری موویز اردو میں ڈبنگ کے ساتھ پیش کی جا رہی ہیں اور وہ بھی کس قسم کی اردو میں… اور ہم چاہتے ہیں کہ انگلش ماحول بن جا ۓ کسی طرح،  بچے انگلش سیکھ لیں… 
.
اور دوسری بات یہ نہیں سمجھ آتی کہ جب ہفتہ ہفتہ بھر صبح کے شوز میں شادیاں منائی جائیں… ڈراموں میں سواۓ لڑکی لڑکا کی محبت کے کوئی بات نہ ہو تو کیسے اس قوم کو پتہ چلے گا کہ یہ عشق، محبت، شادی اور بچوں کے علاوہ بھی کوئی اور کام بھی کر سکتے ہیں… ڈرامہ لکھنے والے حسب معمول آرٹس گروپ کے فارغ کیے ہوۓ ہوتے ہیں اور ہمارے ہاں آرٹس گروپ میں جو مضامین ہیں ان میں ایڈوانس اردو بہت کامن ہے… اردو ادب میں ابن انشاء کی تحریروں، کچھ مزاح لکھنے والوں کی تحریروں اور اقبال اور ایک دو اور شاعروں کی شاعری کو نکال دیں تو باقی سب عشق و محبت کی کہانیاں ہی ہیں… نسیم حجازی کی ناولز اردو ادب کا حصہ نہیں شاید، اسی لئے انھیں شامل نہیں کیا گیا سلیبس میں… لہٰذا ڈرامہ لکھنے والوں میں سائنسی خیالات یا تعلیمی خیالات کا پایا جانا بہت مشکل ہے… 
.
کافی سالوں سے سن رہے ہیں ملک جنگ کی حالت میں ہے… کون ہماری حرکتیں دیکھ کر کہے گا کہ ہم حالت جنگ میں ہیں… ملک میں دس ہزار مسلے ہیں… کیا ایدھی پر اور انکے مسائل پر کوئی ڈرامہ نہیں لکھا جا سکتا… کیا جانوروں کی حالت زار پر کوئی کچھ لکھنے کے قابل نہیں… کیا بچوں کو صرف گالیاں دینے اور ابے تبے کرنے کے لئے ڈراموں میں لیا جاتا ہے… بچوں کے لئے کوئی اچھا پاکیزہ کردار نہیں ملتا… کیا پودوں پتوں پر کچھ لکھنے کی اہلیت کسی میں نہیں… ایجوکیشن یعنی تعلیم تو آرٹس گروپ کا ہی مضمون ہے… لیکن اس کے باوجود کوئی لکھنے والا اس پر نہیں لکھتا… شرم سے ڈوب مرنے کا مقام ہے آرٹس گروپ کے بڑوں کے لئے… بس یا تو مسخرہ پن کروالو وہ بھی جس پر ہنسی نہ آۓ… یا پھر طوائفوں، وڈیروں اور امیروں کے تعلقات پر ڈرامے لکھوالو… سارے اینٹرٹینمنٹ چینلز کوٹھا بن کر رہ گئے ہیں… 
.
اگر اس ملک میں کسی کو تعلیم سے دلچسپی ہوتی تو یہ سوچا جا سکتا تھا کہ چلو ذرا سلیبس بدلیں، پرانے خطرناک تعلیمی نظام کو تبدیل کریں… لیکن ناچنے گانے سے فرصت نہیں… سنیماز، تھیٹراور  شادیوں وغیرہ میں تو خیر ہے… لیکن سکولوں اور کالجوں میں ناچ گانا، قائد اعظم کے مزار کے سامنے ناچ گانا… خواتین کے حقوق کی بات ہو رہی ہو اور سامنے فاطمه جناح اور رعنا لیاقت علی خان کی قبریں ہوں اور یہ سب کیا جاۓ…پاکستان کی گلی گلی کو طوائف کا کوٹھا یا فلم سٹوڈیو بنانے کی کوششیں ہیں… کسی جگہ کا کوئی تقدس نہیں اور پھر بھی یہی تعلیم یافتہ، تہذیب یافتہ اور عزت کے قابل کہلاتے ہیں… کیا جہل ہے…
.
ہر چیز کے غلط ہونے کی وجہ تعلیم کا نہ ہونا ہے… کونسی تعلیم کا نہ ہونا… پاکستان میں سکولز اور کالجز کی بھرمارہے… گلی گلی ٹیوشن سینٹرز  کھلے ہیں… ہزاروں لڑکے لڑکیاں تعلیم لے لے کر نکل رہے ہیں… گلی گلی مدرسے کھلے ہیں، حافظ پیدا ہو رہے ہیں… لاکھوں کی تعداد میں دینی دنیاوی کتابیں موجود ہیں… قرآن کی آسانیاں کس کس شکل میں موجود نہیں ہیں….. کونسی تعلیم چاہیے اب؟  کون سے استاد پڑھانے آئیں گے؟  کون سی کتابیں لکھی جائیں گی؟  کیسا ماحول چاہیے اور وہ کون بناۓ گا؟  
 

Colors of Women- “وجود زن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ”

جب میرے منہ میں میری زباں ہے تو کیوں نہ میں
جو کچھ کہوں یقین سے کہوں بر ملا کہوں
احمد ندیم قاسمی
.
بات تو صحیح ہے… حساب کتاب بھی اسی بات کا ہوگا… کہ جو زبان دی تھی اس کا کیسا استعمال کیا… اسی لئے میں نے زبان کی صفائی شروع کر رکھی ہے, گالیاں دینے کا کام بھی انگلیوں پر چھوڑ دیا ہے…  
.
علامہ اقبال نے فرمایا تھا… “وجود زن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ”…. پاکستان کے تو سارے رنگ ہی خواتین کے دم سے ہیں… محترمہ فاطمه جناح، رعنا لیاقت علی خان، بلقیس ایدھی صاحبہ، میڈم نور جہاں پاکستان کے وہ باوقار رنگ ہیں جس پر کائنات بھی ناز کرتی ہے… لیکن یہ شاید خواتین کے کافی “ہارڈ امیجز” ہیں اسی لئے نہ لوگوں کی سمجھہ آتے ہیں نہ بھاتے ہیں… حالانکہ آسکر تو پاکستان کو ملنا چاہیے تھا اس بات پر کہ ان جیسی خواتین یہاں سے تعلق رکھتی ہیں… چاروں کی چاروں، وقت، حالات اور مردوں کو مات دینے والیاں… خواتین کی وہ قسم، جن پر رشک بھی آۓ  اور حسد بھی ہو کہ ہاۓ ہاۓ میں کیوں نہ ایسی ہوئی… 
.
پھر یہاں وینا ملک سمیت بہت سی خواتین نے کچھ اور قسم کے رنگ بکھیرے… اس امید پر کہ یہ پاکستان کا “سوفٹ امیج” بن کر سب کو بھائیں گی… وہ بھی نہ ہوا… ہر طرف سے لعنت ملامت ملی… وینا ملک نے تو ہالی ووڈ کے معیار پر پورا اترنے کی کوشش اور مزید آفر بھی کر ڈالی… لیکن ہالی ووڈ کو متاثر نہ کر سکیں… کیوں کہ انھیں ننگے پن میں بھی مقصد اور کوالٹی چاہیے ہوتی ہے… 
.
سیاست میں ایک خوبصورت رنگ بے نظیر بھٹوصاحبہ کا بھی تھا… جو اپنے ہی جیسے لوگوں کے بناۓ ہوۓ نظام کی نذر ہو گئیں… 
.
پھر ایم کیو ایم کے جلسے میں نسرین جلیل اور خوشبخت شجاعت کو حیدر عبّاس رضوی اور دوسرے مردوں کی حفاظت میں ناچ گانے کے رنگ بکھیرتے دیکھا… جلسے، تعلیم اور سیاست…تینوں کا حق ادا ہو گیا… یہ کسی حد تک ‘سافٹ امیج’ تھا شاید اسی لئے میرے علاوہ اس پر کوئی نہیں بھڑکا….
.
پھر پرسوں پیپلز پارٹی کی وحیدہ شاہ کی وڈیو دیکھی جس میں وہ خواتین کو ہی مار پیٹ کر خواتین کے حقوق کا بلا خوف خطر بھر پور استعمال کر رہیں تھیں… 
.
لیکن بہر حال امریکا اور ہالی ووڈ کو پاکستان کی خواتین کے اتنے رنگوں میں سے بالاخر شرمین چناۓ کی “سیونگ فیس یہی چہرے بچانا یا بچاؤ” پسند آ گئی… موضوع تو وہی ہے جس پر دنیا بهر میں فلمیں، ڈارمے اور دستاویزی فلمز بن چکی ہیں… کیوں کے عورتوں پر تشدد کے واقعات پوری دنیا میں ہو رہے ہیں… اور نئے سے نئے طریقوں سے… دنیا کے کچھ کونوں کو اگر نہیں بھی پتہ تھا تو اب پتا چل گیا ہو گا کہ پاکستانی خواتین کتنی “مظلوم، بے بس، بد حال خواتین” ہیں اور مرد کتنے سخت اور ظالم ہیں… ایسا نہ ہو کہ نیٹو افواج ان خواتین کی مدد کو آ جائیں… کیا بھروسہ ان لوگوں کا… 
.
یقینا فلم میں کوئی ایسی بات ضرور ہوگی کہ ہالی ووڈ کو پسند آئی کیوں کہ وہ کوالٹی پر سمجھوتہ نہیں کرتے… لیکن پاکستان سے کوالٹی لیتے وقت بھی اور بہت سی چیزوں کو سامنے رکھتے ہیں… اب کون ہے جو پاکستان میں ان خواتین کے بارے میں سوچے گا کہ انکے لئے کیا ہونا چاہیے… ہاں سب شرمین چناۓ بننے کے خواب ضرور دیکھیں گے… اور ہالی ووڈ اور امریکا کے ایوارڈز تک پھنچنے کا طریقہ “مظلوم، بے بس، بد حال خواتین” پر کوئی فلم… اور عورتوں کو اس حال تک پنہچنے والے “مردوں کے خفیہ ہاتھ” بالکل نظر انداز … کوئی ان مردوں پر توجہ نہیں دے گا جو اس حال تک پنہچاتے ہیں.. 
.
اچھا مزے کی بات یہ ہے کہ جو مرد عورتوں کی مدد کرتے ہیں جیسے کہ ایدھی صاحب اور صارم برنی صاحب… انھیں کوئی ایوارڈز نہیں ملتے… لوگ پہچانتے بھی نہیں… حالانکہ عورتوں کی حالت زار کا پرچار کرنے سے عورتوں کو انکے پیروں پر کھڑا کرنا اور انھیں چھت فراہم کرنا زیادہ انسانیت ہے…
.
اس آسکر کے لئے خواتین کے ساتھ ساتھ مردوں اور قانونی اداروں کا بھی شکریہ، اگر یہاں انصاف کا، آواز اٹھانے کا انتظام ہوتا تو یہ کارنامے کیسے انجام پاتے جن دستاویزی فلمیں بنائی جا سکیں اور ایوارڈز لئے جا سکیں…  
.
.
خیر چھوڑیں… پھر سب کہیں گے ہمیشہ ایسی ہی باتیں کرتی ہوں… 
.
گو کہ لوگوں کہ سوچنے اور سمجھنے کی صلاحیتیں ختم ہو چکی ہیں اور وہ بھیڑوں، بکریوں، گا یوں، گدھوں کی سی زندگی پر عمدہ نظر آتے ہیں… لیکن پھر بھی چند سوال ادھر ادھر کی زبانوں سے نکل ہی آتے ہیں… کہ آخر کیا ہونے والا ہے، ہمارا کیا ہوگا، کہاں جائیں، کیسے پورا ہوگا… اس سوالات کو سن کر لگتا ہے کہ شیطان یعنی سیاستدان کامیاب ہو گۓ ہیں اور انسان ناکام… وہ جو قاسمی صاحب نے کہا تھا نہ کہ 
.
فقط اس جرم میں کہلا ۓ گناہگار کہ ہم
 بہر ناموس، وطن جامہ تن مانگتے ہیں
.
حالانکہ ان سوالات کا جواب بہت آسان ہے… جو کچھ ہونے والا ہے وہ ہم سب کے اعمال کا نتیجہ ہوگا… کیوں کہ ہم بدل نہیں رہے اپنے آپ کو، اس لئے اچھا نہیں ہوگا… ان اعمال کے ساتھ کہیں بھی چلے جائیں، بربادی ہی ملے گی کیوں کہ اعمال خوشیوں کے ضامن ہوتے ہیں زمین اور ملک نہیں… اور پورا اسی طرح ہوگا جیسے آج تک پورا ہوا ہے…
.
حل کی طرف آتے ہیں…. بہت آسان ہے…. سنت رسول الله پرعمل کریں…… مولوی بننے کو کون کہ رہا ہے… ویسے بھی مولوی بننا سنت نہیں ہے… صحابہ کو دیکھا تھا، ایک ایک صحابہ میں سینکڑوں خصوصیات تھیں، حافظ، امام، قاضی، عابد، زاہد، عالم، استاد، خطیب، سیاستدن، حکمران، قانوندان، جرنیل، سپاہی، سوشل ورکر… 
.
دنیا کے تمام حکمرانوں کی طرح پاکستان کے سیاستدانوں کی بھی نفسیات ایک ہے، کہ کس طرح زیادہ سے زیادہ لوگوں کو اپنی انگلیوں پر نچایا جا سکتا ہے… اس طرح کہ یہ بس ہمارے بارے میں باتیں کریں، اپنے کام بھول جائیں، اپنے فرائض بھول جائیں، اپنے گھر والوں کو بھول جائیں، اپنے آپ اکو بھول جائیں…جیسے اداکار اور اداکاراؤں کی ہوتی ہے کہ سب کو دیوانہ بنانا ہے تو دیوانہ بنا دے… کچھ بھی کرکے ہوش اڑا دیں…… 
.
پاکستانی سیاستدان اس لحاظ سے منفرد ہیں کہ لوگوں کو اتنا گرا دینا چاہتے ہیں کہ لوگ ان کے آگے دو روٹی کے لئے گڑگڑاتے رہیں اور یہ خوش ہوتے رہیں کہ یہ کتنے سخی اور نرم دل ہیں…  اسی لئے یہ کبھی پاکستانی عوام کو خوش نہیں ہونے دیں گے….. 
.
اس بات پر مجھے محترم اقبال عظیم کا شعر یاد آگیا…
غم غلط کرنا کوئی مشکل نہیں
انتقاما مسکرانا چاہیے 
.
مکہ کے سرداروں کی بھی یہی نفسیات تھی… کیسا ڈیل کیا تھا رسول الله صلی الله علیہ و سلم نے ان سے… عام لوگوں سے کہا کہ رزق الله کی طرف سے آتا ہے، لہذا صبر کرنا اور کسی کے آگے ہاتھ نہ پھیلانا… اور تو اور غلام آزاد کرنے شروع کر دیے کہ آزاد ہو، کماؤ اور کھاؤ…..
.
تپنے شروع ہو گئے تھے مکّے کے سردار کہ نہیں… جب وہ مفلس، غریب، بدحال عوام کو تمام تر تکلیفوں اور پریشانیوں کے باوجود مطمئن اور با کرداردیکھتے… لوگوں نے انکے سامنے گڑگڑانا بند کر دیا تھا… آہستہ آہستہ اپنے پیروں پر کھڑے ہونے لگے تھے…. حالانکہ بہت سے مسلمان یہودیوں کے ہاں کام کرتے تھے اس وقت بھی… اور اس وقت یہودی اس لئے رکھتے تھے انھیں کے یہ محمد کے ماننے والےجنگ تو کر سکتے ہیں لیکن مخالفت کے باوجود ایک پیسے کا بھی دھوکہ نہیں کریں گے… یہی اقبال کا درس خودی ہے… 
.
توپاکستانی عوام اگراپنی بھلائی اور دنیا سے اپنی عزت کروانا چاہتی ہے تو اس کو بھی آزاد کرنا ہے خود کو، ان رشتوں اور ان تعلقات کی غلامی سے، جن کو پاکستان میں وہ رزق کے چھن جانے کے خوف سے نہیں چھوڑتے… لیکن جب امریکا کا ویزہ مل جائے تو ایسے روتا پیٹتا چھوڑ جاتے ہیں حق صلہ رحمی بھی بھول جاتے ہیں… 
.
سورہ طلاق الله سبحانہ و تعالی فرماتے ہیں کہ ” اور جو بھی الله سے ڈرتا ہے الله اس کے لئے نجات کی راہ پیدا کر دیتا ہے اور اسے ایسی جگہ سے رزق دیتا ہے جس کا خیال بھی نہیں ہوتا اور جو خدا پر بھروسہ کرے گا خدا اس کے لئے کافی ہے(٢/٣)… اور جو خدا سے ڈرتا ہے خدا اس کے کام میں آسانی پیدا کر دیتا ہے (٤) اور جو خدا سے ڈرتا ہے خدا اس کی برائیوں کو دور کر دیتا ہے اور اس کے اجر میں اضافہ کر دیتا ہے ……
.
سوره نوح میں الله سبحانہ و تعالی کا ارشاد ہے… “پس میں نے کہا اپنے رب سے بخشش مانگو، بے شک وہ بڑا بخشنے والا ہے… وہ آسمان سے تم پر موسلا دھار مینہ برساۓ گا… اور مال اور اولاد سے تمہاری مدد کرے گا اور تمھارے لئے باغ بنا دے گا اور تمھارے لئے نہریں بنا دے گا (١٠/١٢) 
.
رسول الله صلی الله علیہ و سلم نے فرمایا، “جو چاہتا ہے کہ اس کی زندگی میں برکت ہو اور رزق میں اضافہ ہو، اسے چاہیے کہ صلہ رحمی کرے”….
.
پھر فرمایا کہ “جو شخص علم کے لئے نکلتا ہے، الله اس کے لئے ایک سال کا رزق مقرر کر دیتا ہے اور اس کے لئے آسانیاں پیدا فرماتا ہے، اور سمندر کی مچھلیاں تک اس کے لئے مغفرت کی دعا کرتی ہیں”.
.
اورکتنے وعدے چاہیئں رزق کے لئے… اور اگر یہ سب شرائط نہیں پوری کرنی الله اور اس کے رسول کی تو پھر کروڑوں بھی کما لیں تو کسی کام کے نہیں… 
 

Bookshelves

“A bookshelf is as particular to its owner as are his or her clothes; a personality is stamped on a library just as a shoe is shaped by the foot.”  Alen Bennett

“The true university these days is a collection of books.”  Thomas Carlyle

“Respect books, you’ll be respected by the world.”  Ammi Huzoor (my mom)

 

Children بچے

Once there was a town, where lived many families with their children.  The parents were worried about their children’s behaviour.  They complained to each other that their children are irresponsible, abusive, undisciplined, non-serious about their education.  An old scientist also lived there.  He wanted to help the parents so he prepares a magical formula called “parentade” to improve children’s behaviour.  Parents were excited.  The formula worked.  Children started doing things on time, by themselves.  No more mess on dinning tables, no more shouting and running around, no more fighting.  Genius talks, mind blowing ideas, they all got A+ in their exams.  That was it.  Parents were sick and tired.  They were sick and tired of coping with their children’s extraordinary discipline and responsible behaviour.  Their children refused to accept the fun ideas their parents had for them, instead they started guiding their parents to make their life useful.  Finally, all parents arranged a meeting and invited the scientist.  They wanted him to prepare the antidote to that formula.  They wanted their children back to normal as they were before.

Above is the summary of an English poem “Parentade”, a very interesting idea for parents and to learn their lesson.

.

کب کب ایسا نہیں ہوتا کہ جب جب کمپیوٹر پر کچھ لکھنے بیٹھتی  ہوں تب تب کمپیوٹر کے سب سب بانیوں کوسلام کرنے کو لب مل مل جاتے ہیں، دل کھل کھل جاتا ہے، ذہن دھل دھل جاتا ہے… گو کہ گفتگو میں تکرار ایک عیب سمجھا جاتا ہے لیکن ہمیشہ نہیں… انگریزی میں یہ بھی زبان خوبی کہلاتی ہے…

May God guide my parents, ameen!

.
اگر کمپیوٹر شیطانی ایجاد ہے بھی تو فی الحال تو آدھے سے زیادہ اسلام کو پھیلانے اور اسلامی مظاہروں کا کم اسی پر ہو رہا ہے… اردو بھی شاید اب کمپیوٹر پر ہی لکھی پڑھی جا رہی ہے… میں نےتو کچھ بچوں کو کہا بھی کہ بھی انٹرنیٹ پر جواردوٹا ئیپنگ کی سا ئیٹس ہیں ان پر اردو ٹائپ کیا کرو تو اردو کی ہجے ٹھیک ہو جا ے گی… شعروشاعری بھی ہے، کہانیاں بھی، محاورے بھی… طالبعلموں کے لئے تو بہت فاعدہ مند ہے… 
.
پرسوں ڈاکٹرعلی رضا نقوی کی خبر سنی تو دل باغ باغ ہو گیا… ایران کی حکومت نے انہیں کافی ایوارڈز دیے ہیں اوراب ایران کی حکومت نے انھیں اپنے ملک کے سب سے بڑے ادبی ایوارڈ سے نوازا ہے… ڈاکٹرعلی رضا نقوی ایک پاکستانی ہیں… انہوں نے کہا کہ پاکستان کی حکومت اور عوام، دونوں کو علم سے کوئی دلچسپی نہیں… بالکل  ٹھیک کہا…با لکل صحیح اگر اس ملک میں علم کی اہمیت ہوتی تو علم کے  ساتھ گورنر عشرت العباد اتنا بڑا اور برا مذاق نہ کرتے کہ رحمن ملک کو ڈاکٹریٹ کی ڈگری دیتے… کھلا جرم ہے یہ… لیکن یہ دلچسپی جب پیدا ہوتی ہے جب اہل زبان اپنی زبان میں نئے خیالات کا تعارف کرتے ہیں اور وہ بھی اپنی قوم کے مزاج، ذہنی سطح اور مختلف عمروں کا خیال رکھتے ہوۓ… خیر یہ تو نہیں کہا جا سکتا کہ اردو میں کچھہ لکھا ہی نہیں جا رہا… حقیقت یہ ہے جو ڈاکٹرعلی رضا نقوی نے بیان کی کہ عوام کو دلچسپی نہیں…
.
تو ایک کام یہ بھی ہے کہ عوام کو بد تمیزی اور جہالت سے نکال کر شائستگی اور اردو کی طرف کیسے لایا جاۓ… اکثر لوگ شائستگی کا مطلب لیتے ہیں چکنی چپڑی باتیں مسکراتے ہو ۓ کرنا، بلاوجہ لوگوں کی تعریف کرنا، جیسے کہ صبح کے شوز میں ہوتی رہتی ہیں… شائستہ نام رکھنے سے، ہندی تلفظ میں بات کرنے سے، بھارتی اداکاروں کے قدموں پر گر پڑنے سے، انکو خدا بنا کر پیش کرنے سے کوئی شائستہ نہیں ہوجاتا… بلکہ یہ امن، دوستی اور انسانیت کا نہایت گھٹیا تصور ہے… لیکن کیا کریں، جب کوئی اپنی ذاتی ترقی اور پیسے کے پیچھے پاگل ہوجاۓ تو اس سے کچھ بھی توقع رکھی جا سکتی ہے… 
.
ویسے لوگوں کو میری باتیں پسند نہیں آتیں، کہتے ہیں اس طرح کہنے سےلوگوں کے دل ٹوٹ جاتے ہیں… ارے بھئی، لوگ پاکستان کی قدریں برباد کریں، ملک توڑیں، پاکستانیوں کو غلط سوچ دیں، اردو زبان کے ساتھ مذاق کریں، عورت کی عزت کو ناچنے گانے جلوے دکھانے کے لئے مخصوص کر دیں، معصوم بچوں کے ذہنوں کو منی اور شیلا کی جوانیوں کے تصور سے آلودہ کریں اور میں شائستگی دکھاؤں انکو… انکے دل ٹوٹنے کا خیال کروں، ارے ان کمبختوں کا تو سر توڑ دینا چاہیے… اور اس کالے  بھوتوں کے بادشاہ کا جو لندن میں بیٹھا ہے قیمہ کر دینا چاہیے…
.
خیر… شائستگی کا مطلب ہے ڈھنگ کی باتیں، جس میں ملک و قوم کی عزت اور غیرت کے ساتھ ساتھ اپنے لوگوں کی ذہنی تعمیر کا بھی خیال رکھا جاۓ… 
.
اس سلسلے میں کچھہ ٹی وی ڈراموں نے اچھی کوشش کی… جیسے کہ “ہمسفر” میں احمد فراز کی غزل… سب کو یاد ہو گئی… ڈراموں کے نام فیض احمد فیض اور دوسرے شاعروں کے مصروں پر بھی اچھی بات ہے… کاش مزاحیہ ڈراموں کے نام محاوروں پر ہوتے… بلکہ پاکستان کی ساٹھہ فیصد آبادی یعنی بچوں کے لئے, جو کہ اکثریت ہونے کے باعث اپنا جمہوری حق رکھتے ہیں, چھوٹی چھوٹی کہانیاں تو بنائی ہی جا سکتی ہیں… دس ہزار قسم کے علمی مقابلوں کا انتظام کیا جا سکتا ہے… بچے ویسے ہی مقابلوں سے بڑے خوش ہوتے ہیں… اتنے چینلز ہیں لیکن بچوں کے لئے ایک بھی نہیں… دو چار پروگرامز ہوتے ہیں وہ بھی شاید ہی کوئی بچہ دیکھتا ہو… سب ہندی ڈبنگ کیے ہو ۓ انگلش چینلز دیکھتے ہیں…  دنیا کے بچے جب بڑے ہوۓ تو انہوں نے اپنے بچوں کو کھیلوں کے نئے سٹائلزدیے… پتنگوں، غبّاروں، پتلیوں کے تماشوں، سٹریٹ گمیز، کو نئی شکل، نئے رنگ دیے… امریکا اور دوسرے ممالک میں بڑے بڑے اداکار بچوں کی فلموں میں کام کرتے ہیں، مشہور گلوکار گانے گاتے ہیں، بڑے بڑے با صلاحیت ہدایتکار اور مصنف اس میں دلچسپی لیتے ہیں…
.
پاکستان کی فلمی تاریخ میں “بیداری” واحد فلم ہے جس میں سنتوش کمار صاحب نے کام کیا، کوئی ہیروئن نہیں تھی، صرف بچے اور انکا استاد جو انھیں پاکستان سے محبت کا درس دیتا رہتا ہے… “آؤ بچوں سیرکرائیں تم کو پاکستان کی”، “یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران”، “ہم لاۓ ہیں طوفان سے کشتی نکل کے”… اسی فلم کے گانے تھے جو آج تک گاۓ جا رہے ہیں… ٹی وی پر “عینک والا جن”، سہیل رعنا کے موسیقی کے پروگرامز کے علاوہ کوئی بچوں کی چیز نہیں جو بچوں نے دیکھی ہو شوق سے… اور تو اور چودہ اگست پر یوم آزادی کے پروگرامز میں بھی وہی گھسے پٹے اداکار گلوکار آ جاتے ہیں پرفارمنس کے لئے اور بڑے بوڑھے وزراء اور پرانے اداکار گلوکار خوش ہو کر تالیاں بجا رہے ہوتے ہیں… ارے ایک ایک منٹ کا سکرپٹ لکھ کر نہیں دیا جا سکتا بچوں کو کہ صدر، وزیراعظم کے سامنے پرفارم کر سکیں…  
.
بچے بچوں سے سیکھتے ہیں اور شوق سے سیکھتے ہیں… پاکستان کے بچوں کا تو جواب نہیں… پہاڑوں جیسی ہمّت ہے انکی… اور دریاؤں اور سمندروں جتنا خون جگر، جو ساری زندگی رستا رہتا ہے اور ختم نہیں ہوتا… کیسے کیسے حالات سے گذرتے ہیں، عجیب بے ہنگم ماں باپ کو برداشت کرتے ہیں… بدتمیز، جاہل، گا لیاں دینے والے اور مجرم سیاست دانوں اور حکمرانوں کی دہشت سہتے ہیں… اور ان سے توقع رکھی جاتی ہے کہ تہذیب یافتہ، تعلیم یافتہ، ترقی یافتہ بڑے ہوں… کبھی کبھی سوچتی ہوں کہ بچوں کا دل چاہتا ہوگا کہ کاش ہمارے ماں باپ ہمارے ہاں پیدا ہو ۓ ہوتے تومزہ چکھا دیتے والدینیت کا…
.
انکی پیدائش کے وقت سے جو ڈرامہ شروع ہوتا ہے تو وہ وقت تک ختم نہیں ہوتا جب تک وہ اذیت سے چیخ نہ اٹھیں… اور اس وقت مولوی حضرات سامنے آ جاتے ہیں اپنے جنّت اور جہنّم کے فتوے لے کر… حمایت علی شاعر کے الفاظ کو تھوڑا سے تبدیل کردیں تو ماں باپ سے کہا جا سکتا ہے… تخلیق کے ہر کھیل میں ہوتا ہے بہت جان کا زیاں، اولاد کو اولاد سمجھ مشغلہ دل نہ بنا… بھوک، پیاس، گندگی، خوف، بیماریاں، زبان اور قومیت کے بارے میں احساس کمتری، چالیس چالیس پچاس پچاس سالوں کی عمروں والے زندہ کارٹون…. کوئی اچھا نظارہ نہیں پاکستان اور خاص کر کراچی کے بچوں کے پاس، جگہ جگہ تو الطاف حسین کی بد صورت تصویروں کی صورت میں اذیت کے سامان موجود ہیں… اچھی سوچ آۓ کہاں سے…

Happiness for Elderly People – خوشیاں بزرگوں کے لئے

The sources of happiness are innumerable.  They are spread all around and are present in every colour, even in dark in form of sweet dreams.
.
Happiness matters a lot in old age.  Elderly people should know how to make their last years cheerful for themselves and memorable for others.  Humans are not scarce and all mankind is one family.  They can make new ties and build new relationships.  It is a blessing to spend time among a group of your own age.  Oldies can make new friends, listen to their stories, comfort each other, share good memories and enjoy hobbies, such as reading, writing, painting, watching movies.  They are weak physically but still can discuss ideas.
.
In Pakistan, retirees, disabled or unwanted parents or grandparents who get to live in shelters or charities should be grateful to God Almighty for handing them over to better care-takers and new companions.  They should also be thankful to the administration, staff and donors to supply them with food, water, clothes and accommodation.
.
To make Pakistan a productive society, people must change their mind-set of relying upon their children in old age.  It was a problem long ago, not now.  Kudos to Mr. Abdus-Sattar Edhi and many other charities for their life time services in this regard.  Recalling the apathy and insensitivity of blood relation instead of enjoying the new fortune is ungratefulness and not a healthy exercise.
.
Old age is not a curse or a disease.  People just need to remind themselves that they can’t be completely useless after having a life time experience of almost everything.  If nothing they can do, still can use their tongue to express their feelings, say invocations in abundance, speak out the truth, teach the goodness, recite Qur’an, names of Allah, wazaif, pure words and say prayers for everyone.
.
However, there are many examples of how some men and women in old age succeeded in sustaining themselves.  There is a lady, illiterate though and underprivileged, at the age of 60, she has found a job to look after disabled old lady in a well-off family.  I have spoken to many rickshaw drivers aged above 70 who are driving rickshaw and making their own money because they don’t want to be a burden on their sons and daughters.  There is a gol-gappay wala, a decent man with a charming smile, age around 65, still working while his sons are earning too.  Many gardeners of age above 70 work at road-side nurseries and provide home services for taking care of plants.
.
If elderly people can find working opportunities under these crucial circumstances, why can’t the educated youth of Pakistan?
.
.
شکایت کیوں اسے کہتے ہو یہ فطرت ہے انساں کی
مصیبت میں خیال عیش رفتہ آ ہی جاتا ہے….
جوش ملیح آبادی
کون کہتا ہے نجومی، ہاتھ دیکھنے والے، زائچہ بنانے والے لوگوں کے مستقبل کے بارے میں پتہ ہوتا ہے کہ کل کیا ہوگا… ہمیں تو یہ بھی نہیں پتہ ہوتا کہ صبح اٹھہ کر کیا دیکھنا نصیب ہوگا یا شام کو اچانک کیا خبر مل جائے گی… ابھی یہی ہوا… اچانک دروازے پر دستک ہوئی، چوکیدار نے کہا باجی نیچے ڈاکٹر ریحانہ آئی ہے آپ کو بلا رہی ہے… میں نے کہا انکو کیسے پتا چلا کہ کہ میں یہاں ہوں اور وہ خود اوپر کیوں نہیں آئیں… کہنے لگا ہمیں نہیں پتہ، آپ نیچے آ کر خود بات کرو… میں گئی تو واقعی وہی تھیں… تین سال بعد دمام سے واپس آئیں ہیں، بتانے لگیں کہ وہاں کینسر ہو گیا تھا، پھر آپریشن ہوا، اب ٹھیک ہیں… شکر خدا کا… حالانکہ نفسیاتی ڈاکٹر نہیں ہیں پھربھی خواتین کو زندہ دلی کے ساتھ زندگی گزارنے کے طریقے بتانے کی ماہر ہیں… ڈاکٹر بھی اپنے علاج کے لئے کبھی کبھی دوسرے ڈاکٹروں کا محتاج ہو جاتا ہے… 
آج کے دور میں سب سے زیادہ کس کی اہمیت ہے؟  بالکل ٹھیک کہا، ٹی وی کی…چلیں ڈراموں کی بات کرتے ہیں… صرف تین ڈرامے…
ڈراموں پر اطہر شاہ خان جيدي کے دو شعر یاد آ گۓ…  
اک اداکار رکا ہے تو ہوا اتنا ہجوم
مڑ کے ديکھا نہ کسي نے جو قلمکار چلا
چھيڑ محبوب سے لے ڈوبے گي کشتي جيدي
آنکھ سے ديکھ اسے ہاتھ سے پتوار چلا
.
“ہمسفر” دیکھنے میں اچھا ہے لیکن اس پر بات کرنے کو کچھہ خاص نہیں ہے…
.
“میرے قاتل میرے دلدار” اچھا ہے، اس میں ہیروئن کا فیصلہ اچھا لگا کہ اس نے اپنے جیٹھہ سے شادی کرلی جس نے اس کا گھر تباہ کیا تھا… کیوں باقی لاٹھی اسی کے ہاتھہ میں ہے جس سے وہ سب کو ٹھیک رکھتا ہے… 
.
“جنت سے نکالی ہوئی عورت”… بڑا اچھا لگا اس میں ثمینہ پیرزادہ کا کردار… گوکہ مجھے یہ خاتون پسند نہیں لیکن ہیں خوبصورت اور بہت اچھی اداکارہ بھی… ایک خاتون کو ساٹھہ سال کی عمرمیں طلاق ہو جائے تواسکی زندگی کیا ہو جاتی ہے… لیکن مجھے بہت ہی پسند آیا کہ ایک تو یہ خاتون جاب کرتی ہیں اور دوسرے کسی کا معاملات میں نہیں بولتی اور تیسرے یہ کہ بیٹے کے گھر میں اپنی وجہ سے مسلے دیکھہ کر وہ اپنے والد کے پرانے گھر میں آ جاتی ہے اور اکیلے رہنے لگتی ہے…
.
اسی طرح کرنا چاہیے، غصے میں نہیں، بلکہ اپنی آزادی اور اختیار کے لئے… مرد ہو یا عورت، جوان ہو یا بوڑھا… کیا ضروری کہ کسی پر بھی بلاوجہ بوجھہ بنا جائے اور اولاد یا کسی بھی رشتے پر اخلاقی اور جذباتی دباؤ ڈالا جائے… بلکہ مجھے تو ان بوڑھے لوگوں پرغصہ آتا جو ایدھی اور مختلف اداروں میں زندگی گذار رہے ہیں، کھانا پینا مل رہا ہے، ایک چھت کے نیچے ہیں، بہت سے کمانے والوں کا پیسہ ان پر خرچ ہورہا ہے… اور پھر وہ ان رشتوں کو روتے رہتے ہیں جو انکو چھوڑ کر چلے گئے… کیا پتہ مجبوری ہو… اور نہ بھی ہو تو بھئی نئے رشتے بنالیں… انسانوں کی کمی نہیں… شکرکریں کہ گھر کی چخ چخ سے جان چھوٹی… دعا دیں انکو جنہوں نے اتنا انتظام کیا، آپ کو سڑک پر رلنے سے بچا لیا… اب نئی جگہ پر نئے لوگوں سے لطف لیں… ضروری نہیں کہ پچھلوں کی شکایتیں کریں کہ ہے کیسے نکلے… یہ سوچیں آپ نے کہاں کہاں کس کس کو اپنی اولاد کی خاطر نقصان پہنچایا… اور کیا کبھی اولاد کو الله کے احکامات اور احترام انسانیت سکھایا… جس طرح آپ اپنی زندگی کا کنٹرول چاہتے تھے اسی طرح آپ کی بہو بیٹے بیٹیاں بھی چاہتے ہیں… ان کے سر پر سوار نہ رہیں… خود بھی خوش رہیں اور انھیں بھی خوش رہنے دیں… 
بزرگ بہت خوش رہ سکتے ہیں اگر وہ یہ سوچ لیں کہ وہ بیکار نہیں ہیں… اتنی زندگی کے تجربات کے بعد بیکار ہو بھی نہیں سکتے… اگر کچھ بھی نہیں کر سکتے تو کم از کم زبان سے قرآن، درود، کلمات، دعائیں تو پڑھ سکتے ہیں… 
.
اس ڈرامے کی طلاق کا کیس دیکھہ کر باجی کی کالج کی ایک دوست یاد آ گئیں… ان کے والد نے اسی طرح ایک دن غصے میں کھانےکی میز پراپنی خاموش صفت بیوی کو طلاق دے کر بائیس تئیس سال کی شادی ختم کردی… ایک بیٹے کو جو کالج میں ماں کے ساتھ رہنا پڑا اور بیٹی جو کالج میں تھیں اور چھوٹے بیٹے کو باپ کے ساتھہ… پتہ نہیں کیسے سامنا کیا ہوگا ان سب نے باقی سب کا…
.
جب سے پاکستان بنا ہے، کراچی کی قوم پاکستان سے پہلے کی خوشیوں کو روۓ جا رہی ہے… اور پاکستان کے ذریعے ملنے والی تمام خوشیوں کے مواقع برباد کئے چلے جا رہی ہے… پرانی رسمیں، پرانی یادیں، حسرتیں، ملامتیں، اپنےعزیز رشتوں سے کبھی انتہا ہمدردی کبھی شدید انتقام کبھی نہ ختم ہونے والی شکایتیں کبھی دھمکیاں… بس ایک چکرہے جوچلے چلے جا رہا ہے، سب اس سے پریشان لیکن کوئی اسے روکنے پرتیارنہیں…
.
بھئی الله نے اتنی بڑی دنیا بنائی ہے کچھہ اس پر بھی توجہ دے لو، ہزاروں قسم کے لوگ ہیں، حسین نظارے ہیں… خوشحالی اور خوشی وہ چیزیں ہیں جو ہرجگہ اورہررنگ میں بکھری پڑی ہیں… حتی کہ اندھیرے میں بھی خوابوں کی شکل میں… بس لوگوں کے پہچاننے کی دیر ہوتی ہے…
.
.

Human Empowerment – مرد کے سکون اور عورت کے اختیار کی ابتدا

‘Women Empowerment’, what is so fascinating about this slogan?  And more stupid it sounded when thousands of men sent their women on streets to beg before a politician who being the citizen of another country, self-exiled for many years, promised them to help in getting their rights through Pakistani parliament.  It appeared to be even more hideous when women started the jalsa with emotional speeches and ended with singing and dancing for no reason.

Which rights and authority are they talking about – that women will not be treated inhumanly at homes (the homes that they had come from), get their rights of education and making decisions for their life?  These rights are already mentioned in both constitutions – Qur’an and the national constitution of Pakistan.  It is only that men and women don’t respect both of them and obey none.

Those women at Bagh-e-Jinnah were representing thirty or fourty thousand families of Karachi.  Were they there as a victim of their men’s injustice at home?  Then what would parliament do about this?  If Altaf Hussain is their saviour, as their quaid he can just order the Karachiite men to behave and that is it.  This way it would set an example for ‘macho man’ all over Pakistan.

So basically, what I think that this jalsa was arranged to achieve many goals, such as, diverting people’s attention from Balochistan issue and to warm Imran Khan to keep his hands off Karachi – but to solve women’s issues.

Just think about it.  There was no Altaf Hussain when Ms. Fatimah Jinnah, Mrs. Rana Liaquat Ali Khan and Mrs. Bilqees Edhi were born.  How these honourable ladies grew up to be so powerful and stepped forward with leading and administrative qualities.  Their men at home encouraged them and helped them, not the stupid strangers on the streets.

LEARNING is important for women.  Women need to learn how to read, write and calculate, how to raise their sons not as their supporting cane but as a useful citizens for all, how to discuss issues with their men at home and find their solution, how to keep their honour while being out on the streets.  Why do they wait for men to give them a purpose of life, define their status in society, teach them what Qur’an says about their status?

Men’s period of tranquility begins when they accept women as equal human beings and let them live and perform accordingly. Crushing women’s rights in the name of securing their honour and dignity results in men’s own destruction.

عبدالستار ایدھی کو پاکستان نے ایک شناخت دی جس کا بدلہ انہوں نے نیکیوں کے ایک ختم نہ ہونے والے سلسلے کو شروع کر کے دیا…اور آج ایدھی صاحب ذاتی طور پر ایک بہت بڑا نام ہی نہیں بلکہ پاکستان کی پہچان ہیں… 
١٩٢٨ گجرات میں پیدا ہو ۓ… انیس سال کی عمر میں ١٩٤٧ میں ہجرت کر کے پاکستان آۓ… ١٩٥١ میں اپنی مدد آپ کے اصولوں کے تحت ایدھی ٹرسٹ کے نام سے  میٹھادر میں ایک ڈسپنسری  قائم کر کے باقاعدہ فلاح وہ بہبود کا سلسلہ شروع کیا… ١٩٦٥ میں ٣٧ سال کی عمرمیں ١٨ سالہ  بلقیس ایدھی صاحبہ سے شادی کی جو کے انکی ہی ڈسپنسری میں نرس تھیں… انکے دو بیٹوں اور دو بیٹیوں نے اپنے والدین کے نقش قدم پر چلتے ہو ۓ انکے مشن میں انکا ساتھہ دیا… 
انسانوں کی فلاح و بہبود کے اسلامی تصور کو عملی طور پر ثابت جس طرح ان دونوں نے کیا، آج کے زمانے میں اور پاکستان میں اسکی مثال نہیں ملتی… 
انکی کامیابی کا راز کیا ہے… دونوں میاں بیوی کوئی خاص تعلیم یافتہ نہیں… دولتمند بھی نہیں تھے… دونوں انگلش سے بلکل فارغ… لیکن بچے پڑھے لکھے بلکہ فیصل ایدھی تو ڈاکٹر ہیں… سٹائلش بھی نہیں… لیکن حکومت کی برابری کی سطح پر ایک فلاحی نظام قائم کر کے دکھانا اور چلانا بہت بڑا کارنامہ ہے… کونسی فلاحی عامه کی سروس ہے جسکا ایدھی فاونڈیشن  نے انتظام نہیں کیا ہوا ہے… 
انکی اہلیہ بلقیس ایدھی صاحبہ گو کہ کبھی کبھی ایدھی صاحب کی ایک شوہر کی حیثیت سے.شکایات کرتی نظر آتی ہیں .. لیکن انہوں نے ایدھی صاحب کا جس طرح ساتھہ دیا خاص طور پر خواتین کے معاملات حل کرنے میں اور انکو صحیح سوچ دینے میں، انکو عزت کا راستہ دکھانے میں، انکو ایک چھت مہیا کرنے میں… وہ انکا بڑا کارنامہ ہی نہیں بلکہ انکی حکمت اور سمجھداری کی علامت ہے… ایدھی صاحب لا کھہ کوشش سے بھی خواتین کے لئے خود کچھ نہیں کر سکتے تھے… 
مادرملّت اور رعنا لیاقت علی خان کی  قائدانہ اور انتظامی صلاحیتیں تمام پاکستانی خواتین کا لئے مثال ہیں… محترمہ فاطمه جناح اور رعنا لیاقت علی خان کے بعد بلقیس ایدھی صاحبہ تیسری خاتون ہیں جنہوں نے اپنے عورت ہونے کا ہر لحاظ سے بہترین استعمال کیا… اور اپنے ہی گھر کے مردوں کے ساتھہ مل کر پاکستان کی بہتری کے لئے کام کیا… عورتوں کے حقوق، آزادی، اختیار کیا ہوتا ہے کس حد تک ہوتا ہے اور اسے پاکستان کی عزت، معاشرتی قدروں اوردینی حدود کو قائم رکھتے ہوۓ کس طرح استعمال کیا جاتا ہے، کس طرح خود کوعورتیں قابل بھروسہ اورقابل عمل بنا سکتی ہیں… ان خواتین نے سکھایا… 
یہ وہ خواتین ہیں جن کو سخت ترین حالات ملے کام کرنے کے لئے، اپنی صلاحیتوں کو منوانے کے لئے، عورت کی طاقت اور ہمّت کا صحیح مظاہرہ کرنے کے لئے، عورت کا ایک انسان ہونے کے ناطے اپنا حق اور اختیار استعمال کرنے کے لئے، عورت کے درست اور بروقت فیصله  کرنے کی اہلیت دکھانے کے لئے … انکو عیش وعشرت، سہولتوں، گھر کی چار دیواری میں بیٹھ کر معاشرے کو جہنّم بنانے کے طریقوں، چار نوالوں اور پانچ کپڑوں اور چند زیورات کے لئے سازش اور چالاکیاں کرنے، شوہر کو قابو کرنے اور بھائیوں کو بھڑکانے کے منصوبوں سے کوئی سروکار نہ تھا… انکی زندگی کا مقصد اپنے جسم کی چوٹی چوٹی خواہشات پوری کرنا نہیں تھا بلکہ پاکستان جیسے تحفے کا احترام کرنا، اس خطہ زمین کا نام روشن کرنا اور اپنی قوم کے لوگوں کو انکے پیروں پر کھڑا کرنا اور انھیں خودداری کا راستہ دکھانا تھا…
اگر انکے گھر کے مرد انکی راہ میں رکاوٹ بنتے تو کیا یہ اتنا سب کچھ کر پاتیں؟  یا اگر یہ خواتین اپنے مردوں کی راہ کی رکاوٹ بن جاتیں تو وہ مستقل مزاجی کے ساتھ کام کر پاتے؟  کیا تحریک پاکستان کامیاب ہوتی اور پاکستانی میں اتنے بڑے بڑے فلاحی ادارے قائم ہوتے؟  تو بات ساری ہے ایک دوسرے کو سمجھنے کی…. معاشرے ہمیشہ سے مردوں کے ہاتھوں میں رہے ہیں اور شاید قیامت تک رہیں گے… کامیاب صرف وہ معاشرے ہو ۓ جہاں مردوں نے خواتین کو انسان تسلیم کیا اور پہلے انکو انکے حقوق اور عزت انکے گھروں میں دئے…. 
چاہے معامله عورتوں کو گھرکی چار دیواری کے اندر بٹھاکر رکھنے کا ہو یا تعلیم، ملازمت یا کسی بھی مقصد کے لئے گھر سے باہر جانے کی اجازت دینے کا… ملک و قوم کی ترقی اور خوشحالی تب ہی ہوتی ہے جب ایک خاندان کی عورتیں اور مرد مل کر کوئی فیصلہ کرتے ہیں، کسی بھی قسم کے حالات میں کوئی متفقہ راستہ اختیار کرتے ہیں، گھر کے اندر انصاف اور آزادی را ۓ کی فضا پیدا کرتے ہیں… ہر رشتہ دوسرے رشتے کی آزادی اور حقوق کا خیال رکھتا ہے… ایک گھر کے افراد ایک دوسرے پر بھروسہ کرتے ہیں… 
یہ ہوتی ہے مرد کے سکون اور عورت کے اختیار کی ابتدا… جب مرد اور عورت مل کرخوشی خوشی  ذمہ داریاں بانٹ لیتے ہیں… جس کو جو آسان لگے اور وہ اسے ایک طویل عرصے تک انجام دے سکے…

 

Beauties and the beast -فریادی عورتیں الطاف کے در پر

Anyone think Altaf is stupid? No, he is not.  He is the best beast to control the people of Karachi, even women.  No one should doubt now how fake peer, faqeer, aamil and few ignorant mullahs control women and make them go crazy.  Hence proved that women of Karachi are born brainless, with the purpose to be cheated by cunning men.  Men give them wise advise, they will reject.  Men say to them, I Love You, admire their beauty, their dresses, their figure and sing them cheap, they will love you.

I can’t believe they are so slavish.  They don’t want to learn those techniques to control their own lives and make good decisions.  Just running after men (even if he is ugly like Altaf) to seek refuge from men.

 ابھی تک یہ سمجھ نہیں آیا کہ الطاف حسین نے ایک تیر سے اتنے شکار کر کیسے لئے؟…
بیرونی باطل طاقتوں کو بھی خوش کردیا… بلوچستان کا مسلہ بھی دب دبا گیا کراچی کی عوام میں… وہ مرد جو اپنی خواتین کو “آئی لو یو” کہنے پر، رومانوی گانے سننے پر اور لڑکوں کو دکھانے کے لئے  فیشن کرنے پر اتنا غصّہ کرتے ہیں کہ اریب قریب کے کسی بھی نا معقول لڑکے سے رشتہ طے کر دیتے ہیں، ان کو بھی چکّر دے دیا… عمران خان کو دکھا دیا کہ کراچی کی عورتیں بھی الطاف حسین کے ساتھ ہیں لہذا ایم کیوایم ہی قابض رہے گی کراچی پر، چاہے وہ کچھ کرے یا نا کرے، اتنی نفرت بھر دی ہے مہاجر کے نام پر… مولویوں اور انتہا پسندوں کو کھلا چیلنج کر دیا ساری لڑکیوں اور عورتوں کو سرعام نچا کر… طوائفوں کو ایک نکتہ دے دیا کہ اگر سری عورتوں کو کھلے عام نا چنے کا حق ہے تو انکے لئے الگ جگہ کیوں… خود خواتین بھی خوش ہو گیں کہ کھلے میں ناچنے گانے کا موقع مل گیا اور انکے گھر کے مردوں نے برا بھی نہیں منایا… اور اب عورتیں بھی اعتراض نہیں کرسکتیں اپنے شوہروں پرکہ فلاں ناچنے والی کے پاس کیوں گئے… 
لیکن بھئی خوشبخت شجاعت، نسرین جلیل بھی جوش میں خوب ناچیں حیدر عبّاس رضوی کے سنگ… فیملی کے لوگ تھے اپنے ہی…
نسرین جلیل کو تو یہ سب کچھ کرنے کا صلہ فورا ہی مل گیا اور وہ ڈپٹی کنوینر بن گیں… خوشبخت شجاعت صاحبہ بھی جلد ہی کوئی پو زیشن پا لیں گی… حالانکہ بقول انکے، انکے سکول کے امیر بچوں کے امیروالدین تک انکی نصیحت نہیں سنتے… 
اگراسٹیج پر عتیقہ اوڈھو یا ثمینہ پیرزادہ یا بشری انصاری یا کوئی اور اداکارہ ہوتیں تو حیرت کی بات نہ ہوتی… کیوں کہ یہ ڈائیلا گ تو وہ بھی یاد کر کے بول سکتی تھیں… ناچنے گانے اور اداکاری کے لئے انہوں نے اپنی زندگی وقف کی ہوئی ہے… لہذا یہ کام تو انکا تھا… 
سنا ہے ایک لا کھہ خواتین تھیں جلسے میں… چلو دو لا کھہ کرلو… دو لا کھہ کا مطلب ہے کہ تقریبا تیس چالیس ہزارخاندانوں کی نمائندہ… کیا سب کی سب غریب خاندانوں سے تھیں؟  کیا سب کی سب جاہل تھیں؟  کیا سب کے ہی مرد قتل ہوے تھے اور وہ اکیلی زندگی گذار رہی ہیں؟ سب کی سب کیا سن کر اور کیا سمجھ کر گئیں…
کیا اختیارچاہیے… کہ مرد انکو ماریں نہیں بلکہ وہ مردوں کو ماریں، شوہر پورا خرچہ اٹھائیں اور تمام خواہشات پوری کریں، ان سے بچے زیادہ نہ پیدا کروائیں، تعلیم مکمل کرنے دیں، ملازمت کی اجازت دیں یا گھر بیٹھ کر کھلائیں، ساری رسومات اور روایت پوری کرنے کے لئے دولت لا کر دیں، انکے بیٹے انکی مرضی سے شادی کریں، انکے بھا ئی انکے لاڈ اٹھاتے رہیں، انکو ناچنے گانے کی آزادی چاہیے… 
عورتیں بچے پیدا کرنے سے گھبراتی ہیں، مسائل پیدا کرنے سے نہیں… عورتوں کے مسائل زیادہ ترگھریلواور انکے اپنے پیدا کردہ ہوتے ہیں ہوتے ہیں، ان کا حل کس کے پاس ہے؟  مرد اگر نہیں سنتے تو کیا اس طرح سن لیں گے؟  
سب سے اہم سوال یہ ہے کہ جلسے میں موجود دو لا کھہ خواتین خود بھی ان ہی مسائل میں گھری ہوئیں ہیں یا صرف ملک کے دوسرے حصوں کی خواتین کی نمائندہ تھیں؟ کن مردوں کی شکایات لے کر کس کے پاس گئیں تھیں؟  اگروہ خود ان ہی مسائل کا شکار ہیں توآج تک الطاف حسین نے انکے مردوں کو کیوں نہیں سدھارا یا مرد صرف قانون پاس کرنے سے سدھرتے ہیں؟  اتنے سالوں میں ایم کیو ایم نے انکی تعلیم، صحت اور خوشحالی کے لئے کیا کیا اور اب وہ ایم کیو ایم کے جھنڈے تلے کس سے فریاد کرنے آئیں تھیں؟  کیا انہوں نے تعلیم، صحت، ملازمتوں، مہنگائی، سڑکوں پر ماحول، گندی جیسے اہم مسائل پر مطالبات پیش کئے؟
کسی عورت نے یہ کہا کہ میرا باپ، شوہر، بھائی، بیٹا پان تھوک تھوک کر کراچی کو گندا غلیظ کرتے ہیں. انکو کوڑے لگاۓ جائیں… کسی عورت نے یہ کہا کہ میرا باپ، شوہر، بھائی، بیٹا ہماری فرمائشوں کے لئے کراچی کے اداروں میں کرپشن کرتے ہیں انکو جیل بھیجا جائے… کسی عورت نے یہ کہا کہ میں صبح کہ شوز دیکھنے کے بجاۓ کہیں قرآن کی تجوید ٹھیک کرنے یا انگلش یا حساب سیکھنے جاؤں گی تاکہ اپنے بچوں کو خود پڑھا سکوں… کسی عورت نے یہ کہا کہ میں مجرم ہوں پاکستان کی کہ کراچی کی سڑکوں پر بلڈنگ اور گھروں سے بھربھرکر کوڑا پھینکتی ہوں مجھ کو سدھارنے کے لئے مجھ پرسرعام لعنت بھیجئے… کسی عورت نے یہ اعتراف کیا کہ میں ہی اپنے گھر میں ساس، بہو، نند، بھابی کو اذیتیں دیتی ہوں، بچوں کو گلی میں کھیلنے دیتی ہوں تاکہ وہ اغوا ہوجایئں یا مار جایئں تو شور مچا سکوں کہ یہ کیسا ملک ہے اور کیسا نظام ہے؟  

 
اور سب سے بڑی بات کہ اگر مرد اتنے ہی برے ہیں تو ان سے شادیاں کیوں کرتی ہیں… ماں باپ زبردستی کرتے ہیں تو پھر انکا گریبان پکڑیں، انکے خلاف جائیں عدالتوں میں کہ انہوں نے یہ غلاظت پسند کی تھی مرے لئے…
مجھے یقین ہے خوشبخت شجاعت کو بھی یہ خیالات نہیں آۓ ہونگے… وہ تو ڈائیلا گ بول کر، ناچ گا کر چلی گئیں… با اختیارخاتون ہیں نا آخر…
اگر مسلہ صرف مردوں کے سلوک کا اور حقوق کا ہے تو وہ تو الطاف حسین کی ایک دھاڑ کی مار ہے… کس مرد کے بچے کی مجال کے کراچی میں الطاف حسین کی بات ٹالے… الطاف حکم کرے اور نیم کے درخت نہ لگ جائیں… الطاف ایک دھاڑ مارے اور کراچی کی سڑکوں پر دھول مٹی نظر آ جائے… الطاف پھٹ پڑے اور پھر کوئی تھوک کر دکھاۓ …

 
دنیا نے صرف الطاف حسین کی تقریر، گانا، رومانس اور خواتین کا ناچ گا نا دیکھا… 

Altaf Hussain ki soi hoi “I love you” hasratain – there is an educational crisis in Pakistan

Once upon a time, in a beautiful land called Pakistan, the citizens had a very graceful female role model, Ms. Fatima Jinnah, the educated, civilized, full of wisdom.  People trusted her to be their mother.  As a sister, she didn’t let her brother down in leading the nation after him.  She was a great woman, the pride of Pakistan.

In a conservative and narrow-minded society like Pakistan, saying I Love You to thousands of women at a time, entertain them with romantic Indian song and asking them what are they wearing is really courageous…..and very cheap too.

I have never seen a leader so disgraceful like Altaf Hussain.  He has never been worth-listening to and worth-watching but his last two speeches are enough proof to discredit him as a sane leader.  Even stupid comedians would show some grace in their performance.

Seeing women supporting him for an absurd slogan, I must say there is an educational crisis in Pakistan and Pakistani identity is in danger.  Altaf Hussain has appeared as the proof of negative impacts of our collapsed and corrupt educational system.

Do women of Karachi have any standard or any ideal for leadership?  Making a political party in the name of ‘injustice on muhajireen’, reviving pre-partition culture and identity in Karachiites, gathering people to divert their attention from national issues (all done at foreign signals) …. is not a talent but a crime, a disgusting game to divide people of Pakistan.  These women have proved the old saying to be true that women attract towards evil more fervently than man.

Altaf Hussain knows women psychology very well.  A typical mentality, all they want to hear ‘I love you’, romantic songs and someone focusing on their appearance.  He lost control on his feelings and emotions over a mass gathering of girls and women.  Even Nasreen Jaleel and Khushbakht Shuja’at  were obsessed with his cheap melody and started dancing along with Haider Abbas Rizvi and other liberals.  Who can call this a political jalsa?  Does politics include music and dancing in the syllabus of political science?

For their kind information, singing and dancing on street doesn’t need any college degree or political planning.  Any illiterate or slave woman and even monkeys can dance on streets.  Women should have a better purpose to be on the streets, the one which can stand them as dignified human against men.

Altaf is not a stupid man.  He chose the lyrics very wisely.  He is a sorcerer.  But as pious people have said, sorcery only works on those who have lost guidance.

God knows if Altaf Hussain would say this in front of me, I would give him hard slap saying, ‘siyasat ker, dhanda na ker, apni soi hoi hastratain na jaga’.

God forbid if Khushbakht Shuja’at is chosen as the educational minister, what would she do to us?  She is already expert in playing with words.  What does she exactly mean by women empowerment – singing and dancing on the streets?  Is she aware of the educational crisis in Pakistan?  What has her so-called educated party done in this regard?  According to her, she has already failed in controlling her school kids and their parents.

Nasreen Jaleel has already won the positions by taking innocent children to Nishat Cinema to watch an Indian movie.

Javeria Saud with her husband has earned millions I hope by producing a drama based on obscene language.

Whatever happened in that jalsa shows any seriousness to the crisis we are going through, any hope to the rest of Pakistan, any respect to the place they were standing in front of, any positive message to the women of the world?

The representation of girls and women regardless of all the disadvantages in their areas – Arfa Karim, Sitara Burooj Akbar, Malala Yusuf Zai, Naima Gul…… and from Karachi – attitude and Indian obsession.

Follow

Get every new post delivered to your Inbox.