Unknown People

کافی سال پہلےاربعین نووی سے حدیث جبریل پڑھی جو حضرت عمر رضی الله تعالی عنھ سے روایت ہےاور ڈاکٹر صاحب نے اسے بہت اچھی طرح سمجھایا بھی۔۔۔ مزے کی جو بات مجھے لگی وہ یہ کہ صحابہ کرام نے کس طرح حضرت جبریل کو ابزرو کیا۔۔۔۔۔۔ ایک شخص کارسول سے ملنا اور رسول کے گھٹنے سے گھٹنا ملا کر بیٹھنا بغیر تعارف کے مخاطب کرنااسطرح جیسے ایکدوسرے کو جانتے ہوں جبکہ رسول کے علاوہ کوئی بھی اس شخص کو نہیں جانتا تھا جس کا مطلب کہ وہ اجنبی تھا۔۔۔ اجنبی ہونے کا مطلب کہ وہ کہیں دوردراز کا سفر کرکے آیا تھا لیکن سفر کے آثار ظاہر نہیں ہو رہے تھے۔۔۔ کوئی سواری نہیں۔۔۔ صاف ستھرا لباس, ہشاش بشاش خوبصورت چہرہ, بال چمکدار سیاہ۔۔۔ صحابہ حیرت زدہ سوال وجواب سنتے رہے۔۔۔ اس شخص کے جانے کے بعد رسول نے بتایا کہ یہ جبرئیل تھے جو تمھیں تمھارا دین سکھانے آئے تھے۔۔۔۔۔۔
آج ہماری ابزرویشن کا کیا حال ہے۔۔۔ ایک شخص بھرے مدرسے, بھری مسجد, بھری امام بارگاہ یا کسی بھی مجمع میں گھس کر خود کو اڑا لیتا ہے ساتھہ میں بہت کی جان لے لیتا ہے۔۔۔ کوئی یہ دیکھتا ہی نہیں کہ کون ہے کہاں سے آیا ہے۔۔۔ کسی کو بھی مکان دکان کرائے پر دے دیں گے۔۔۔ دھیان رکھیں کہ کوئی بلاوجہ کیوں بازار یا دکانوں کے آس پاس گھوم رہاہے۔۔۔ کیوں کوئی گھنٹوں ہوٹل پر بیٹھہ کرچائے ہی پئے جارہاہے۔۔۔ یا اتنی مہنگائی میں کوئی گھربیٹھے عیش کررہا ہے تو اسکا ذریعہ معاش کیا ہے۔۔۔ اسکی فنڈنگ تو نہیں ہو رہی یا منشیات کاکاروبار تو نہیں۔۔۔ اگر کسی پر شبہ ہو تو کوئی نمبر ہونا چاہئیے جس پر اطلاع دی جاسکے۔۔۔ اور جن کو اطلاع دی جائے وہ بھی اندھا دھند کاروائی کرنے کے بجائے اپنی تفتیش کریں پہلےثبوت حاصل کریں پھر پکڑیں۔۔۔

یہ نامعلوم افراد ہیں کون اور اچانک کہاں س آجاتے ہیں۔۔۔ کراچی کی آبادی اور ٹریفک کا جو حال ہے اس میں یہ تو ممکن نہں کہ آئے دن کوئی دوردرازسے ہتھیار لہراتا ہوا چہرہ چھپائے موٹر سائیکل پر آئے اور واردات کرے کیوں کہ وہ لوگوں اور پولیس کی نظروں میں آجا ئے گا۔۔۔ اور اگر وہ واردات کی جگہ سے نزدیک رہتا ہےتو پھر وہ نامعلوم نہیں ہو سکتا کوئی تو اسے پہچانتا ہو گا۔۔۔ ویسے بھی اجنبی شخص کو راستوں سے واقفیت اور اجنبی جگہ پر کوئک اینڈ ایکیوریٹ کاروائی کے لئے وقت لگتا ہے۔۔۔ رمضان میں بقائی ہاسپٹل کے پیچھے جانا ہوا۔۔۔ گھر والوں نے بتایا کہ دو تین گھر چھوڑ کرایم کیو ایم کے ایک کارکن کا گھر ہے۔۔۔ دو دن پہلے دو موٹر سائیکل سوارآئے اورگولی مارکر چلے گئے۔۔۔ اس علاقے میں ہر وقت چہل پہل ہوتی ہے پھر بھی کسی نے دھیان نہیں دیا کہ کہاں سے آئے اورگئے۔۔۔۔۔۔ اور شاید یہ بات تمام کاروائی کرنے والوں کو معلوم ہے کہ یہاں عام لوگ چاہے گلی محلوں میں ہوں دکانوں پر یا گھومنے پھرنے کی جگہوں پر۔۔۔ اپنے آپ سے بھی غافل ہوتے ہیں اور اردگرد سے بھی۔۔۔ اسی یقین کی وجہ سے انھیں کاروائی کرنے میں مشکل نہیں ہوتی۔۔۔  اسی علاقے میں دو لڑکے بم دھماکے کے شک میں پکڑے گئے۔۔۔ ایک فرار ہوگیا۔۔۔ کچھہ مہینوںبعد واپس آگیا اور اب کھلے عام پھرتاہے علاقے کے لوگوں کو پتہ ہےمگر کوئی کچھہ نہیں کہتا۔۔۔ کوئی اس کے گھروالوں سے نہیں پوچھتا کہ اچانک دولت کہاں سےآئی۔۔۔ اس علاقے کے سیاسی غافلین کو کچھہ تو خبر ہو گی۔۔۔
بات اصل یہ ہے کہ یہ نامعلوم افراد ہم نے خود تخلیق کئے ہیں۔۔۔ ہمیں خود اپنے گھر کے افراد, محلے کےلوگوں اور رشتہ داروں کا پتہ نہیں ہوتا کہ کیا کررہے ہیں۔۔۔ کون کس کا ایجنٹ بن چکا ہے۔۔۔ کس کے رات دن کہاں گذررہے ہیں۔۔۔ اولادوں کے پاس کہاں سے چیزیں آرہی ہیں نئی نئی۔۔۔
ایک جاہل قوم کا مقصد حیات صرف روٹی کپڑا اور مکان بن جائے اور اسکو صرف اپنی مرضی اوراپنی ذاتی پسند اور ناپسند کااختیار دے دیا جائے تو پھر موت, سوگ, رونا گانا, منہ بسورے شکایت کرتے رہنا جیسی نحوستیں اس قوم کامقدر بن جاتی ہیں۔۔۔

About Rubik
I'm Be-Positive. Life is like tea; hot, cold or spicy. I enjoy every sip of it. I love listening to the rhythm of my heart, that's the best

One Response to Unknown People

  1. Pingback: Unknown People (via PIECEMEAL) « AHKath's Blog

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: