Mother Language Day – Urdu

I have an opinion about celebrating ‘international days’.  As we know, it’s a part of globalization but I think the reason for fixing one day is not to promote but to assess the damage done to anything in three hundred and sixty five days.  That is because all they come up with is the statistics showing how things have declined or let’s say how much more careless people have become about their symbols or belongings or relationships.

Today, the world is celebrating ‘The International Language Day or International Mother Tongue Day’.  My mother language is Urdu.  It’s also my father’s language.  My siblings and relatives speak it too.  So it is my family language.  That’s not all.  Urdu is also our national language.  So it’s the most common source of communication for Paksitanis at every level.  The strange thing is that we still misunderstand each other.

One reason I love Suhail Rana is that he taught children the way to own symbols of Pakistan.  I couldn’t find the audio or video of his song that he composed about URDU but I remember the lyrics and the tone.  “apni zaban Urdu, qoumi zaban Urdu… hum sub ka naaz hay tu piyari zaban Urdu… tu Pakistan ka aizaaz hay sarmaya hay, tu nay hum sub ko ik markaz pay aan milaya hay, such to ye hay tun nay hum sub ka maan barhaya hay… teray saath duaaen sub ki jahan bhi jaye tu, apni zaban Urdu.  May Allah (SWT) bless Suhail Rana for his love and passion for this homeland and keep him healthy and wealthy.  Ameen!

اپنی زبان اردو, قومی زبان اردو۔۔۔ ہم سب کا ناز ہے تو پیاری زبان اردو۔۔۔ تو پاکستان کا اعزاز ہے سرمایہ ہے, تو نے ہم سب کو اک مرکزپہ آن ملایا ہے, سچ تو یہ ہے تو نے ہم سب کا مان بڑھایا ہے, تیرے ساتھہ دعائیں سب کی جہاں بھی جائے تو۔۔۔ اپنی زبان اردو, قومی زبان اردو۔۔۔۔

The history of Urdu language can be googled.  The horrible statistics about how this language is losing it’s value would be available everywhere in Pakistan.  So instead of talking about Urdu, I thought of talking in Urdu, I mean writing, I mean typing in Urdu.  Because the more you speak, read or write a language, the more it is promoted.  But what should I say?

How did my daughter learn Urdu so well?  I taught her the alphabets when she was three.  Then time to time, I helped her in spelling two or three letter words.  To pick the language, I used to sing her lullaby and poems in Urdu.  I played audios of children songs by Suhail Rana, national songs, songs from old Pakistani movies because they had lyrics and their music was soothing and Urdu dramas and comedy shows.  It’s easy.  Anyone can do that.

Another thing that I believe in is that language can be a source of communication, source of enjoyment, source of learning but not of progress.  China has already set an example.

یہ ساری چیزیں گول کیوں ہیں۔۔۔ کائنات ایک دائرے کے اندر۔۔۔ سیارے, ستارے, چاند, ایٹم, گیند ,پلیٹ, موسمبیاں, کینو, سیب, آلو, ٹینڈے, پوریاں, چوڑیاں, لڈو, گلاب جامن…… جو مکمل گول نہیں, ان میں بھی گولائی موجود ہے۔۔۔ جیسے درخت کا تنا, گاڑی کے پہیے, انسان کا سر, الطاف حسین اور اور انکے بیشتر چیلے, نواز بغیر شریف اور انکے رفقاء بدکار۔۔۔ ویسے ابلیس کی مجالس شوری میں یہ کون سے والے مشیر ہوسکتے ہیں۔۔۔

ڈاکٹرصاحب نے ٹھیک کہا تھا۔۔۔ دنیا دھیرے دھیرے اپنے منطقی انجام تک پہنچ رہی ہے۔۔۔ انسان اپنے ہاتھوں پہنچنے والی تباہی کےبعد خود اپنی مرضی سے اسلام پر راضی ہوں گے۔۔۔ گلوبلائزیشن نے اسلام کی خلافت ارضی  کا راستہ آسان  کردیا۔۔۔

صحیح بات ہے ورنہ مسلمان خود تو مل بیٹھنے سے رہے۔۔۔ پڑھتے پڑھاتے بھی نہیں۔۔۔ دوسروں کو کیا سکھاتے۔۔۔

اور دوسری صحیح بات یہ کہ انسان کی حقیقت ایک ذرہ کی ہے یعنی جیسے کلونجی کا دانہ ,رائی کبھی دیکھی نہیں ورنہ اسی کا دانہ کہتی ۔۔۔ اور یہ کہ۔۔۔ دانہ خاک میں ملکر گل وگلزار ہوتا ہے۔۔۔ اور خاک دھول مٹی کی کراچی میں کمی نہیں۔۔۔ اس مصرعہ پر یقین تب تب آتا ہےجب جب میں دسٹنگ کرتی ہوں۔۔۔ چھینک چھینک کر نظام تنفس ٹھیک ہوجاتا ہے, جھاڑ جھاڑ کرجسم ریت کا پہاڑ بن جاتا ہے۔۔۔ طویل غسل صفائی کے بعد شخصیت کا نکھارقابل دید ہوتا ہے۔۔۔
ویسے کراچی میں دھول مٹی آتی کہاں سے ہے اور آہی جاتی ہے تو پھر جاتی کیوں نہیں۔۔۔ لیکن جائےتو کیوں۔۔۔ لوگ اتنا دل سے لگا کررکھتے ہیں, کھانوں میں ملا کر کھاتے ہیں, چلتے چلتے اڑاتے ہوئے چلتے ہیں۔۔۔ اور یہ بھول جاتےہیں کہ دھول مٹی مشینری میں گھس جائے تو چیزیں کام کرنا بند کردیتی ہیں۔۔۔ جیسے کراچی میں رہنے والوں کے دماغ۔۔۔

تیسری بات یہ کہ۔۔۔ ابھی سرمد طارق کی سائٹ پران کی پوسٹ پڑھی, دیوار۔۔۔ انگریزی میں ہے۔۔۔ اچھا لکھتے ہیں مگر مشکل باتیں ہوتی ہیں۔۔۔ خیر۔۔۔ تو مجھے وہ پوسٹ پڑھ کے خیال آیا کہ یہ اپنے ہی استعمال میں آنے والی چیزوں کے ساتھہ لاتعلقی یا نہ جاننے کی بیماری  بیس تیس سال پہلے والی نئی نسل کی ہے۔۔۔ ورنہ ہماری بزرگ خواتین کواپنی ہر چیز کی تاریخ پتہ تھی۔۔۔ تاریخ سے ہندسوں اور مضمون, دونوں صورتوں میں جڑا رہنا ویسے بھی دل کو تسلی دیتاہے۔۔۔
تو انکو پتہ ہوتا تھا کہ انکی شادی کاجوڑا کہاں سے چلتا ہوا انکے پاس آیا۔۔۔ انکی ساڑھی پر سونے کے تاروں کا کام کس نے کروایا۔۔۔ شادی کا جھومر ساس کو انکی
ساس نے اپنی ساس کی نشانی کے طورپردیا تھا۔۔۔ گوٹا کس کس نے لگایا, دوپٹہ کیسے رنگا, کون سا موسم تھا, اس دن کیاپکا تھا,  کھانا پکانے والی آئی تھی کہ چھٹی کی تھی, کس کابچہ سیڑھیوں سے پھسلا تھا ۔۔۔

حالانکہ یہ خواتین گلی کےکونے پر کھڑی کردی جائیں تو گھر نہیں پہنچ سکتی تھیں لیکن اپنی چیزوں اور گھریلو واقعات کی ساری تاریخ ازبر یاد ہوتی تھی۔۔۔ ایک آجکل کی خواتین ہیں۔۔۔ پوچھو بچہ کہاں ہے تو کہیں گی پتہ نہیں ,ابھی تو یہیں تھا۔۔۔

نسل در نسل سفر کرنے والے زیور, کپڑے, جوتے,برتن۔۔۔ سب کی انوکھی داستان ہوتی تھی۔۔۔ جس سے اس زمانے کے رہن سہن کا ہی نہیں, بلکہ میل جول, رسم و رواج, ادب آداب کا بھی پتہ چلتا تھا۔۔۔
انسانی تاریخ کے ایک نسل سے دوسری تیسری نسل تک پہنچنے کا سب سے اہم ذریعہ انسانی زبان ہی تو ہے۔۔۔ اگر اس کا بھروسہ نہ کیا تو پھر کس کاکیا۔۔۔

I really enjoyed this tribute of Lata Haya, an Indian poetess, to Urdu language and the way she read it in rhythm.


About Rubik
I'm Be-Positive. Life is like tea; hot, cold or spicy. I enjoy every sip of it. I love listening to the rhythm of my heart, that's the best

4 Responses to Mother Language Day – Urdu

  1. بلوچ says:

    Mother languages should get their due right of development and must be recognized. Imposing imported languages invites terrible disintegration as in the case of Bangladesh it is witnessed .

    • Rubik says:

      “due right of development”?????
      You are right. Languages should not be imposed but many times people demand this imposition considering it inevitable for their progress, as in the case of English. English is in high demand in the entire South Asian region. It was known as a foreign language few decades ago. Now it has become the first language of the children of Pakistani immigrants. Our official and non-official documents are printed in English. Our job resumes are typed in English. The job interviews are taken in English. The computer software and internet sites are programmed to serve in English.
      Once the mother language of some German or Scandinavian group of dwellers, privileged with the “due right of development” has become the international source of communication. People don’t mind replacing their mother tongues with English.

      Languages grow when their speakers work on them, give world a reason to adopt them. Chinese have just set an example of progressing on the basis of their own mother language. They worked hard as one united nation to make it happen.

  2. Pingback: Mother Language Day – Urdu (via PIECEMEAL) « AHKath's Blog

  3. Taheem says:

    Thanks……………

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: