Useful Donation

To reduce unemployment in Pakistan is the antonym of just donating money to spread it.  The world was much different fourteen hundred years ago.  However, the idea and the ideology still prevail as a workable primacy.

Who is responsible for destroying economic opportunities in Karachi?  I don’t have the exact answer.  The shops in Karachi are full of Indian products.  The shopkeepers chant for their quality.  I ask them if we are able to produce the same.  Their reply is “Yes, we can” then the explanation goes on like “the cost of quality products in Pakistan is higher than in India and manufacturers don’t expect a good profit.  We prefer India’s best quality products because they are available at reasonable prices”.

So, it means the end of any kind of industry in Pakistan???  I don’t think so.  If somehow people can manage to follow a couple of precautions, the situation can be handled temporarily.

Pakistanis are number one donors in the world.  A donation without a follow-up is worthless.  It fills the stomach of very few but encourages joblessness at large.  The donors know that the money is non-refundable and non-profitable.  Keeping these two facts in mind, they can collect a handsome amount of charity to establish small or home-based industries in poor areas.  Poor people can get busy in manufacturing quality products at homes or at little workshops, others may be paid to spread them at competitive or lower prices in markets.

May God Almighty be the Guardian of Pakistan, Ameen!

پچھلے چار سال میں جتنا برا میں نے ایم کیو ایم کو کہا ہے شاید ہی کسی اور کو کہا ہوگا۔۔۔ اب دیکھیں, پچھلے تین سال میں جو کڑھائی والے ہیں انھوں نے کان پکا دیے ہیں انڈیا کے موتی ستاروں کی تعریف کرکرکے۔۔۔ کہتے ہیں اسک جواب نہیں, پاکستانی مال گھٹیا ہوتا ہے۔۔۔ دل چاہا کہوں مال ذہن سے بنایا جاتا ہے لہذا گھٹیا مال نہیں لوگوں کا ذہن ہے۔۔۔ لیکن یہ سب باتیں انکو سمجھہ نہیں آتیں۔۔۔ شاید اسلئے کہ غیر پڑھے لکھے ہیں یا پھر صرف پڑھے لکھے۔۔۔ تعلیم یافتہ نہیں۔۔۔ میں نے پوچھا ایسی چیزیں پاکستان میں نہیں بنتیں کیا۔۔۔ جواب ملتا ہے بن سکتی ہیں لیکن کون بنائے گا, اس پرلاگت زیادہ لگتی ہے اور بنانے والے منافع زیادہ مانگتے ہیں جبکہ انڈیا کامال کم قیمت پر مل جاتا ہے۔۔۔
میں نے سوچا لوگ جو ہزاروں لاکھوں روپے عطیات اور خیرات دے کر بےکاری میں اضافہ کرتے ہیں وہ نام کی وجہ سے تو ہو سکتا ہے لیکن انھیں یہ معلوم ہوتا ہے کہ یہ پیسہ واپس نہیں آنا۔۔۔ تو پھر جس پیسے کی واپسی یا منافع کی امید نہیں اسے اپنی کاٹیج یا چھوٹی انڈسٹری کو فرغ دینے میں استعمال کرلیں۔۔۔ وہ مال انڈیا کے مال سے کم قیمت مگر بہترین کوا لیٹی پر مارکیٹ میں پھیلا دیں۔۔۔ اسطرح بیروز گاری کم ہو گی اور ایم کیو ایم کا زور بھی۔۔۔ ان سے بچیں کیونکہ ایم کیو ایم کے کسی کارکن کو پتہ چلا تو اپنے غیر ملکی آقاؤں کو مخبری کر دیں گے اور پھر وہی طالبان سے ڈرانے ڈرونے کا سلسلہ شروع ہو جائے گا۔۔۔

About Rubik
I'm Be-Positive. Life is like tea; hot, cold or spicy. I enjoy every sip of it. I love listening to the rhythm of my heart, that's the best

One Response to Useful Donation

  1. asqfish says:

    Thank you for raising this important point and raising awareness!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: