Noun – اسم

اسم 
.
اسم وہ کلمہ ہے جو کسی دوسرے کلمے کو ملاۓ بغیر بھی معنی دے … یہ کسی شخص، جانور، جگہ، چیز کا نام، انکی صفات یا انکے کام کی پہچان ہوتا ہے… اسم وہ کلمہ بھی ہوتا ہے جو کہ اسم کی جگہ یا اسم کی طرف اشارہ کرنے کے لئے استعمال کیا جاۓ… اسم اور حرف ہی اصل کلمات ہیں… فعل اسم سے بنتے ہیں لیکن اپنی خصوصیات کی وجہ سے اسم اور حرف کی طرح اپنی الگ پہچان رکھتے ہیں… 
.
اسم کی علامات 
.
اسم، حرف اور فعل سے مختلف ہے اس کی چارعلامات ہیں جن سے اسے پہچانا جاتا ہے… جنس، عدد، حالت، حیثیت 
.
١) اسم کی پہلی پہچان اسکی حیثیت ہے یعنی کہ اسم پر تنوین اور اَلْ  آتے ہیں… یہ دونوں اسم کی علامتیں بھی کہلاتے ہیں اور دونوں ایک ساتھ کسی اسم پر نہیں آسکتے… 
.
تنوین یعنی دو زبر، دو زیر، دو پیش توکسی اسم کے آخری حرف پر لگتی ہے اور اسم کے نکرہ (a, an, some) یعنی عام ہونے کی پہچان ہے… اسم نکرہ کسی جملے کی خبر بن سکتا ہے… 
 
مثلا… کِتَابٌ ایک کتاب – قَلَمٌ ایک قلم – بَیْتٌ ایک گھر – یَدٌ ایک ہاتھ
مَاءٌ  کچھ پانی  –  جَمِیلَةٌ  ایک خوبصورت  
.
” اَلْ The” جو اسم کے شروع میں آتی ہے… ایسا اسم، اسم معرفہ یا خاص اسم کہلاتا ہے… اسے معرف بالام بھی کہتے ہیں… اسم معرفہ کے آخر میں تنوین نہیں آتی…  اسم معرفہ کسی جملے کا مبتداء بن سکتا ہے…
الکِتَابُ کتاب – القَلَمُ قلم – الَبَیْتُ گھر – الیَدُ ہاتھہ  –  المَاءُ  پانی  –  الجَمِیلَةُ  خوبصورت
ضمیر منفصل مرفوع، اسم علم یعنی انسان یا جگہ کا خاص نام، اسم اشارہ، اسم موصول، معرف بالام، حرف ندا یا پہلی پانچ قسموں پر مضاف ہو… یہ سب جملے مبتدا بنتے ہیں اور  اسم معرفہ ہوتے ہیں… 
 .
فعل اور حرف عام یا خاص یعنی نکرہ یا معرفہ نہیں ہوتے… اور نہ ہی ان پر ( اَلْ ) اور تنوین آتے ہیں…
 .
٢) اسم کی دوسری پہچان جنس ہے… اسم یا تو مذکر ہوتا ہے  یا موَنث… عربی میں اسم کے جاندار یا بے جان ہونے کا تصور نہیں ہے… اس لئے انگلش کی طرح اس میں ” اٹ ” نہیں ہوتا…
.
اسم جامد میں بعض مذکر اور موَنث کی پہچان واضح ہوتی ہے… اسم کے آگے ( ة ) لگی ہو تو وہ موَنث ہوتا ہے… ضروری نہیں کہ ان میں سبکے مذکر بھی موجود ہوں…

مِرْأَةٌ  آئینہ  –  قَیَامَةٌ  قیامت  –  سَاعَةٌ  گھڑی  –  دَرَّاجَةٌ سائیکل  
مَدْرَسَةٌ  مدرسہ  – مِسْطَرَةٌ  ناپنے کا اسکیل   –  نَشَّافَةٌ  نقشہ  
رِسَالَةٌ  خط  –  نَظَّارَةٌ  عینک  – سَیّارَةٌ  گاڑی  –  مِرْوَ حَةٌ  پنکھا
کُرَّةٌ   گیند –  بِنْتٌ  بیٹی  – اُخْتٌ  بہن 
.
اسم، اسم الصفہ، اسم الفاعل اور اسم المفعول کو ( ة ) لگا کرمذکر سے موَنث بنایا جا سکتا ہے اور ( ة ) ہٹا کر واپس مذکر بنایا جا سکتا ہے…
 مُسْلِمَةٌ  مسلمان عورت  –  مُؤْمِنَةٌ  مومنہ  –  صِدِّیقَةٌ  سچی
 صَائِمَةٌ  روزہ دار عورت  –  نَاصِرَةٌ مددگار عورت  
صَابِرَةٌ   شَاکِرَةٌ  حَامِدَةٌ   مَشْکُورَةٌ  مَحْمُودَةٌ  مَظْلُومَةٌ  مَعْرُوفَةٌ  مَنْصُورَةٌ  فَرْحَانَةٌ 

اسکے علاوہ جسم کے وہ اعضاء جو جوڑوں کی صورت میں ہیں، موَنث ہوتے ہیں…
عَیْنٌ آنکھ  –  اُذُنٌ  کان  –  کَتَفٌ کندھا  –   یَدٌ ہاتھہ  –  قدم  پاؤں  –  رِجْلٌ  ٹانگ 
.
اسکے علاوہ… نَارٌ آگ –  نَفْسٌ جان – رِيحٌ ہوا –  اَرضٌ زمین  بھی موَنث مانے جاتے ہیں…
.
اسکے علاوہ  الف مقصورہ یعنی حُبْلَی صُغْرَی  کُبْرَی عُظْمَی  اور ہمزہ کے ساتھ  حَمْرَاءُ  بَیْضَاءُ خِضْرَاءُ  بھی موَنث ہوتے ہیں…
.
عَلَّامَة اور خَلِيفَة اردو میں بھی اسی طرح لکھے جاتے ہیں… گو کہ یہ موَنث ہیں لیکن انکا مذکر نہیں ہوتا اور یہ اسی حالت میں مذکر کے لئے استعمال کئے جاتے ہیں، موَنث کے لئے نہیں…
.
حرف مذکر موَنث نہیں ہوتے اور نہ اس مقصد کے لئے استعمال کئے جاتے ہیں… فعل میں مذکر موَنث کی پہچان کے لئے علامات اور ضمیر مختلف ہوتی ہیں… 
.
٣) اسم کی تیسری پہچان ہے عدد… واحد یا مفرد ، تثنیہ یا دو یا جوڑا ، جمع یا دو سے زیادہ…

واحد یا مفرد اسم کے آخر میں تنوین آتی ہے…

کَافِرٌ کافر  –  مُؤْمِنٌ  مومن  –  کَرِیمَةٌ  کریمہ  –  کَاذِبَةٌ   جھوٹی 
.
اسم اگر تثنیہ ہو تو اس کے آخر میں ( انِ )  یا ( يْنِ ) آتا ہے… 
کَافِرَانِ  کَافِرَيْنِ  دو کافر –  مُؤْمِنَانِ   مُؤْمِنَيْنِ  دو مومن  –  
کَرِیمَتَانِ  کَرِیمَتَيْنِ  دو نیک عورتیں  –  کَاذِبَتَانِ  کَاذِبَتَيْنِ  دو جھوٹی عورتیں  
.
اسم اگرجمع مذکر ہو تو اس کے آخر میں ( وْنَ ) یا( يْنِ ) آتا ہے… اور اگر جمع موَنث ہو تواسم کے آخر میں ( اتٌ ) آتا ہے… یہ جمع سالم کہلاتی ہے کیونکہ اس میں اصل اسم برقرار رہتا ہے… اسم الفاعل اور اسم المفعول کے جمع کا اصول یہی ہوتا ہے…
کَافِرُونَ کَافِرِيْنَ بہت سے کافر  –  مُؤْمِنَونَ مُؤْمِنِيْنَ  مومنین  –  
کَرِیمَاتٌ  کَرِیمَاتًا  بہت سی نیک عورتیں  –  کَاذِبَاتٌ  کَاذِبَاتًا بہت سی جھوٹی عورتیں 
 
.
بہت سے اسماء کی جمع کے آخر میں ( وْنَ ) ، ( يْنَ ) یا ( اتٌ ) نہیں لگا ہوتا اور اس میں اصل اسم کے حروف بھی اس ترتیب سے نہیں ہوتے جیسے واحد میں ہوتے ہیں… ایسی جمع کو جمع مکسّر کہتے ہیں اور اس کا کوئی قاعدہ نہیں ہوتا…
جمع مکسر کے لئے جملوں میں خبر اسم نکرہ موَنث آتی ہے…
.
بَیْتٌ  کی جمع  بُیُوتٌ گھر  –   کِتَابٌ  کی جمع  کُتُبٌ  کتاب  –  عَالِمٌ  کی جمع عُلَمَاءٌ  عالم   

عَبْدٌ کی جمع عِبَادٌ                 عَالِمٌ کی جمع عُلَمَاءُ                 نَبِیٌّ کی جمع اَنْبِیَاءُ                
رَسُولٌ کی جمع رُسُلٌ            نَجْمٌ کی جمع نُجُومٌ                  مَرِیْضٌ کی جمع مَرْضَی
فِرْقَةٌ کی جمع فِرْقٌ                غُلَامٌ کی جمع غِلْمَانِ              مَسْجِدٌ کی جمع مَسَاجِدُ          
طِفْلٌ کی جمع اَطْفَالُ                اُمٌّ کی جمع اُمَّھَاتٌ                  فَمٌ کی جمع اَفْوَاہٌ  
مَآءٌ کی جمع مِیَاہٌ                  اِنْسَانٌ کی جمع اُنَاسٌ                ذُوْ کی جمع  اُولُوا 
اِمْرَأَةٌ  کی جمع نِسَاءٌ  عورت   
 
.
حرف اعداد میں نہیں ہوتے… فعل میں مفرد، تثنیہ اور جمع کے لئے مختلف علامتیں ہوتی ہیں…
.
٤) اسم کی چوتھی پہچان ہے اسکی حالت… کہ آیا اسم حالت رفع میں ہے، حالت نصب میں ہے یا حالت جر میں….
.
اسم عموما حالت رفع میں ہوتا ہے اور مرفوع کہلاتا ہے… حالت رفع کی علامت یہ ہے کہ اس کے آخری حرف پر پیش، دو پیش، ( انِ ) یا ( وْنَ )  (اتٌ) ہوگا… جسکا مطلب ہے کہ وہ فاعل، اسم معرفہ ہونے کی صورت میں جملے میں مبتداء بن سکتا ہے… ان جملوں میں پہلا اسم مرفوع ہے…

مُحَمَّدٌ رَسُولٌ   محمد رسول ہیں  
القُرَآنُ کِتَابٌ عَظِیمٌ  قرآن عظیم کتاب ہے 
عَقِیلٌ نَصَرَ عقیل نے مدد کی 
عَائِشہ نَصَرَتْ  عائشہ  نے مدد کی 
مُسْلِمَانِ نَصَرَا  دو مسلمانوں نے مدد کی 
مُشْرِکَانِ ضَحَکَا دو مشرک ہنسے 
.
اسم جب حالت نصب میں ہو تو منصوب کہلاتا ہے… حالت نصب کی علامت یہ ہے کہ اس کے آخری حرف پر زبر، دو زبر، ( يْنِ ) یا ( يْنَ ) ہوگا… جسکا مطلب ہے کہ وہ مفعول ہے…

سَاجِدٌ ضَرَبَ فَاسِقًا  ساجد نے ایک فاسق کو مارا  –  
المُعَلِّمةُ قَرَاَتْ رِسَالَةً  استانی نے خط پڑھا
المُسْلِمُ نَصَرَ طَالِبَیْنِ ایک مسلمان نے دو طالبعلموں کی مدد کی –  
المُشْرِکُ قَتَلَ مُسْلِمَیْنِ ایک مشرک نے دو مسلمانوں کو قتل کیا – 
.
اسم سے پہلے اگر حرف جر لگا دیا جاۓ تو حالت جر میں آجاتا ہے اور مجرور کہلاتا ہے… حالت جر کی علامت یہ ہے کہ اس کے آخری حرف پر زیر، دو زیر، ( يْنِ ) یا ( يْنَ ) آتا ہے… اور یہ فاعل اور مفعول دونوں کے لئے آسکتا ہے…
 
مِنَ الْجِنَّةِ  جنوں سے                      اِلَی الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ  مسجد حرام کی طرف
عَلَی مُحَمَّدٍ محمد پر                        عِنْدَ السَّاعَةِ  قیامت کے بارے میں
بِاالْقَلَمِ  قلم سے                              لِلْوَالِدَیْنِ  والدین کے لئے 
عَلَی الْمُسْلِمَیْنِ  دو مسلمانوں پر       عَلَی الْمُسْلِمِینَ سارے مسلمانوں پر 
.
.
.
اسم کی قسمیں 
.
اسم کی چار قسمیں ہیں… اسم جامد, اسم منسوب, اسم مصدر اور اسماۓ غیرمُتَمَكِّن…
.
1- اسم جامد وہ کلمہ ہے جو نہ خود کسی دوسرے لفظ سے بنا ہو اور نہ ہی اس سے کوئی دوسرا لفظ بنے… یہ کسی شخص، جگہ، جانور یا چیز کا نام ہوتا ہے اور کسی کام کے معنی نہیں دیتا… اسم جامد (یعنی اسم ذات, اسم علم اور اسم معنی) کو اسم ظاہر بھی کہتے ہیں…اسماء جامد کسی قاعدے یا اصول کے تحت نہیں بنتے بلکہ جیسے اہل زبان انھیں بولتے آۓ ہیں ویسے ہی بولے جاتے ہیں… لیکن انکا تعلق کسی نہ کسی مادّے سے ہوتا ہے…
فَرَسٌ گھوڑا – بَیْتٌ گھر – قَلَمٌ قلم – مَلَکٌ فرشتہ – مَلِکٌ بادشاہ – رِجْلٌ ٹانگ – رَجُلٌ  آدمی
 عَدْلٌ انصاف – نَصْرٌ مدد – ظُلْمٌ ظلم – نَجَاحٌ کامیابی 
.
اسم علم – اسم جامد میں وہ اسم  ذات جو کسی شخص، جگہ، جانور یا کتب کا خاص نام ہو… جیسے باکستان، قرآن، محمد، فاطمه، مکّہ، ہما…
.

2- اسم منسوب – وہ اسم ہے جو اسم ذات یا اسم معنی کی طرف نسبت کرتا ہے… اور اسم کے آخر میں يَ ، يّة ، ة ، يّ لگانے سے بنتا ہے… اسم منسوب کو مرکب نہیں کہا جا سکتا کیونکہ مرکب کے لئے کم از کم دو با معنی الفاظ کا ملنا ضروری ہے… جبکہ اسم منسوب میں يَ ، يّة ، ة ، يّ با معنی الفاظ نہیں ہیں، لاحقے ہیں…   

بَاكِسْتَانُ سے بَاكِسْتَانِىَ اور بَاكِسْتَانِيَّة – مَدْرَسَةٌ سے مَدْرَسِىٌّ
دِرَاسَةٌ سے دِرَاسِىٌّ اور دِرَاسِيَّةُ      –  أَمْرِيْكَا سے أَمْرِيكِيٌّ  
اِسْلَامُ سے اِسْلَامِىَ اوراِسْلَاميَّة       – فَرَنْسَا سے فَرَنْسِيٌّ
عَرَبِ سے عَرَبِىَ اورعَرَبِيَّة            – كَنَدَا سے كَنَدِيٌّ
مَكَّة سے مَكِّىٌّ اور مَكِّيَّة                 – هِنْد سے هِنْدِيٌّ  
نُورٌ سے نُورَانِىٌّ                           – حَقٌّ سے حَقَّانِىٌّ  
مَدِينَةٌ سے مَدَنِىٌّ                            – سَمَآءٌ سے سَمَاوِىٌّ
مَولى سے مَولَوِىٌّ                         – صَرَفِىٌّ
.           
3- اسم مصدر وہ کلمہ ہے جو کسی قاعدے کے تحت نہیں بنتا بلکہ اہل زبان جس طرح بولتے ہیں اسی طرح لیا جاتا ہے… اسم مصدر میں کسی کام کے ہونے یا کرنے کے معنی پاۓ جاتے ہیں… اسم مصدر کے مادّے سے جو اسم یا فعل بنایا جاۓ اسے مشتق کہتے ہیں… اسم مصدر کے صیغوں کے وزن میں کام کے معنی کے اعتبار سے کچھ تبدیلیاں کی جاتی ہیں… 
ضَرْبٌ مارنا – ذَھَابٌ جانا – طَلَبٌ طلب کرنا تلاش کرنا – غُفْرَانٌ بخش دینا – سُعَالٌ کھانسنا – فِسْقٌ نافرمانی کرنا – قُعُودٌ بیٹھہ رہنا 
.
مصدر کی چار خصوصیات
مصدر میں اگر ایک مرتبہ کام کرنے کے معنی کہنے ہوں تو اسے ثلاثی مجرد میں فَعْلَةٌ کے وزن پر بنایا جاتا ہے اور ثلاثی مزید فیہ اور رباعی مجرد اور مزید فیہ میں مصدر کے آخر میں ة لگائی جاتی ہے… اسی لئے اسے مَصْدَرُالْمَرَةِ یا اسمِ مَرَّة کہا جاتا ہے…
اَکْلَةٌ ایک بار کھانا – شَرْبَةٌ ایک بار پینا – سَجْدَةٌ ایک سجدہ کرنا – ضَرْبَةٌ ایک ضرب – جَلْسَةٌ ایک نشست –
تَسْلِیمَةٌ ایک سلام – اِسْتِفْهَامَةٌ ایک استفسار – اِقْشِعْرَارَةٌ ایک کپکپی 
جس اصلی مصدرکے آخر میں اگر پہلے سے تا موجود ہو وہ اسم مرہ کے معنی نہیں دیتا… 
دَعْوَةٌ وَاحِدَةٌ  ایک پکار –  اِشَارَةٌ وَاحِدةٌ  ایک اشارہ 
.
مصدرهَيْئَة کام کے مخصوص ہونے کے معنی دیتا ہے… اسےفِعْلَةٌ کے وزن پر بنایا جاتا ہے…
 
نِظْرَةٌ مخصوص نظر                         جِلْسَةٌ مخصوص نشست
مِشْیَةٌ مخصوص چال                         عِیْشَةٌ مخصوص طرز زندگی
مِیْتَةٌ مخصوص موت 
.
مصدرمیم، مصدر کے شرو میں ایک زاید میم لگانے سے بنتا ہے… یہ ثلاثی مجرد میں مَفْعِلٌ مَفْعَلٌ مَفْعِلَةٌ مَفْعَلَةٌ کے وزن پر اور باقی تمام افعال میں انکے مفعول کے وزن پرآتا ہے…
.
مَقْدَمٌ آنا – مَرْجِعٌ لوٹنا – مَمَاتٌ مرنا – مَحْیَا زندگی – مَسِیْرٌ چلنا 
مَصْرَعٌ مارنا – مَسْعَی کوشش کرنا – مَطْلَبٌ طلب – مَشْرَبٌ مشروب 
مَعْرِفَةٌ مَوْعِظَةٌ مَعْصِیَةٌ مَقْدِرَةٌ مَنْفَعَةٌ مَرْحَمَةٌ مَفْسَدَةٌ مَقْرَبَةٌ  مَحَبَّةٌ
.
مصنوعی مصدر کسی اسم کے آخر میں يَاءِ مشدّد اورة یعنی يَّةٌ لگا کر بنایا جاتا ہے…
.
اِنْسَانِیَّةٌ انسانیت – مَسْؤُلِیَّةٌ ذمہ داری – نَفْسِیَّةٌ نفسیات – جُمْهُورِیَّةٌ جمہوریت – اَقَلِّیَّةٌ اقلیت
اَکْثَرِیَّةٌ اکثریت جَاھِلِیَّةٌ جاہلیت – حُرِّیَّةٌ آزادی – عِلْمَانِیَّةٌ سیکیولرازم -اِشْتِرَاکِیَّة ٌ سوشلزم

.
اسم مصدر کی قسمیں 
اسم مصدر کی دو قسمیں ہیں… اسم مشتق اور فعل مشتق (افعال مشتقہ گو کہ اسم مصدر کے مادّے سے بنتے ہیں لیکن یہ اسماء کے زمرے میں نہیں آتے بلکہ انکو اسم اور حرف سے الگ، کلمہ کی ایک تیسری قسم فعل بنایا گیا ہے کیونکہ انکی علامات اور صفات اسم سے مختلف ہوتی ہیں… تمام افعال مصدر سے مشتق کے گئے ہیں اس لئے انھیں افعال مشتقہ کہتے ہیں)  
.
اسم مشتق وہ کلمہ ہے جو اسم مصدر کے مادّے سے کسی خاص وزن پر بنتا ہے… اسم مشتق کی آٹھ قسمیں ہیں اسم الفاعل ، اسم المبالغہ، اسم المفول ، اسم الظرف ، اسم الصفہ ، اسم التفضیل ، اسم التصغیر, اسم آلہ…   
.
١- اسم الفاعل وہ مشتق اسم ہے جومصدرکے کام کرنے والے کو ظاہر کرتا ہے اور یہ ثلاثی مجرد میں فَاعِلٌ کے وزن پر بنایا جاتا ہے… جبکہ مزید فیہ اور رباعی مجرد اور مزید فیہ میں حرف مضارع (ی) کی جگہ میم مضموم (مُ) اور آخری سے پہلے حرف کو زیر لگا دی جاتی ہے…
 
نَاصِرٌ مدد کرنے والا – کَاتِبٌ لکھنے والا – عَابِدٌ عبادت کرنے والا – عَالِمٌ علم حاصل کرنے والا – ظَالِمٌ ظلم کرنے والا 
.
جبکہ مزید فیہ اور رباعی مجرد اور مزید فیہ میں حرف مضارع (ی) کی جگہ میم مضموم (مُ) اور آخری سے پہلے حرف کو زیر لگا دی جاتی ہے…
 
مُکْرِمٌ   مُضَارِبٌ   مُتَضَارِبٌ    مُسْتَخْرِجٌ    مُدَحْرِجٌ   مُبَعْثِرٌ   مُتَدَحْرِجٌ 
.
٢- اسم المبالغہ، اسم الفاعل کے معنی میں زور اور کثرت کے مفہوم کو ظاہر کرتا ہے…
یہ فَعَّالٌ فَعَّالَةٌ فَعُولٌ فَعِیلٌ فِعِّیلٌ مِفْعَالٌ فَعِلٌ فَعُّولٌ فُعُّولٌ فَاعِلَةٌ مِفْعِیلٌ فُعَّالٌ فُعَلَةٌ کے وزن پر بناۓ جاتے ہیں…
 .
رَزَّاقٌ کثرت سے رزق دینے والا – قَوَّالٌ کثرت سے بولنے والا – غَدَّارٌ کثرت سے عہد توڑنے والا
.
وَہَّابٌ کثرت سے عطا کرنے والا – عَلَّامَةٌ کی علوم کا ماہر – فَھَّامَةٌ حد درجہ دانا – مِفْرَاحٌ بہت خوش
.
مِقْدَامٌ انتہائی بہادر – سِکِّیرٌ نشے میں چور – صِدِّیقٌ سراپا صداقت –  لَعُوبٌ بہت کھیلنے والا
.
شَکُورٌ بہت شکرگذار – حَسُودٌ سخت حاسد – حَقُودٌ نہایت کینہ پرور – أَکُولٌ بہت کھانے والا 
.
رَحِیمٌ نہایت رحم کرنے والا – بَشِیرٌ بہت خوشخبری دینے والا – حَکِیمٌ بہت حکمت والا
.
نَذِیرٌ بہت ڈرانے والا – شَحِیحٌ بہت خنجوس – نَصِیرٌ بہت مدد گار –  حَذِرٌ نہایت چوکنّا
.
شَرِہٌ نہایت لالچی – قَیُّومٌ ہر چیز کا محافظ – سَبُّوحٌ نہایت پاک – سُبُّوحٌ نہایت پاک
.
قُدُّوسٌ ہر عیب سے پاک –  رَاوِیَةٌ کثرت سے روایت کرنے والا – دَاعِیَةٌ مبلّغ
.
مِسْکِینٌ نہایت غریب قلّاش – مِعْطِیرٌ ہر لمحہ معطر –  طُوَّالٌ طویل القامت
.
کُبَّارٌ بہت بڑا –  لُمَزَةٌ بہت چغلخور – ھُمَزَةٌ سخت عیب جو – ضُحَکَةٌ  بہت ہنسنے والا 
.
٣– اسم المفول وہ مشتق اسم ہے جو اس اسم کو ظاہر کرتا ہے جس پر کام ہوا ہو… یہ ثلاثی مجرد میں مفعول کے وزن پر بنایا جاتا ہے… اورثلاثی مزید فیہ اور رباعی مجرد اور مزید فیہ میں مضارع کے حرف مضارع کے جگہ مضموم میم لگا کر، آخر سے پہلے حرف پر زبر لگا دیتے ہیں…
مَنْصُورٌ جس کی مدد کی گئی – مَکْتُوبٌ جس کو لکھا گیا – مَعْبُودٌ جس کی عبادت کی گئی – مَظْلُومٌ جس پر ظلم کیا گیا
 
مُکْرَمٌ  مُضَارَبٌ   مُتَضَارَبٌ   مُسْتَخْرَجٌ    مُدَحْرَجٌ    مُبَعْثَرٌ   مُتَدَحْرَجٌ 
.
٤- اسم الظرف وہ اسم مشتق ہے جو کسی کام کی جگہ اور وقت کے لئے استعمال ہوتا ہے… اسکی دو قسمیں ہیں… اسم زمان کا تعلق وقت سے اور اسم مکان کا تعلق جگہ سے ہوتا ہے… یہ ثلاثی مجرد میں مَفْعِلٌ اور مَفْعَلٌ کے وزن پر بنتا ہے… ثلاثی مزید فیہ اور رباعی مجرد اور مزید فیہ میں اسم المفعول کے وزن پر بنتا ہے… یعنی اس کے شروع میں حرف مضارع کے جگہ مضموم میم (مُ) لگا کر منصوب کر دیا جاتا ہے…

مَطْلَعٌ طلوع کا وقت – مَرْحَلٌ روانگی کا وقت – مَرْجِعٌ واپسی کا وقت   –  مَوْعِدٌ ملاقات کا وقت
 .
مَدْخَلٌ داخل ہونے کی جگہ – مَخْرَجٌ نکلنے کی جگہ 
 .
مَرْصَدٌ رسد گاہ  –  مُخْتَبَرٌ تجربہ گاہ  –  مَطْعَمٌ طعامگاہ یا ریستوران – مَمَرٌّ گزرگاہ یا راستہ – مَدْرَسَةٌ درسگاہ
 .
مَطْبَخٌ  باورچی خانہ  –  مُتْحَفٌ عجائب گھر –  مَشْغَلٌ ورکشاپ – مَلْعَبٌ کھیل کا میدان – مَجْمَعٌ ادارہ 
.
مَوْسِمٌ موسم – مَوْقِفٌ اڈہ  –  مَطَارٌ ہوائی اڈہ  –  مَوْلِدٌ جاۓ پیدائش – مَنْزِلٌ گھر – مَجْلِسٌ بیٹھک 
.
مَوْقِعٌ محل وقوع  – مَحَلَّةٌ محلہ – مَقَامٌ جگہ – مَجَالٌ میدان – مَصْنَعٌ کارخانہ – مَلْجَأٌ مورچہ
.
مَکْتَبٌ دفتر یا آفس – مَنْظَرٌ منظر –  مُجْتَمَعٌ معاشرہ – مُصَلًّی جاۓ نماز – مُسْتَشْفَی ہسپتال
.
مُسْتَوْدَعٌ اسٹور – مُسْتَوْصَفٌ ڈسپنسری  –  مَکْتَبَةٌ لائبریری – مَقْبَرَةٌ قبرستان
.
مَزْرَعَةٌ زرعی فارم – مَجْزَرَةٌ قتل گاہ – مَحْکَمَةٌ عدالت – مَحَطَّةٌ اسٹیشن – مَغْسِلَةٌ لانڈری 
.
مَسْجِدٌ مَشْرِقٌ مَغْرِبٌ مَنْسِکٌ مَجْزِرٌ مَنْبِتٌ
.
٥ اسم الصِّفہ وہ اسم مشتق ہے جو اسم ذات یا اسم معنی کی صفت یعنی خوبی یا خامی کو ظاہر کرے… اگراسم الصِّفہ فاعل کے وزن پر ہو تو موصوف میں صفت کے عارضی طور پر طاری ہونے کا مفہوم ہوتا ہے جیسے کسی پر رحم کھانا، یاد کرنا، کچھ سننا وغیرہ…
.
کچھ صفات عارضی ہیں مگر بار بار طاری ہوتی ہیں تو وہ  فَعِلٌ کے وزن پرآتی ہیں جیسے بھوکا ہونا، پیاسا ہونا، خوش ہونا، ناراض ہونا… 
.
فَعِیْلٌ کے وزن پر ہو تو موصوف میں مستقل صفت ہوتی ہے جیسے ہمیشہ رحم کرنا، ہر چیز پر قادر ہونا، ہر وقت سننا … 
.
اسی طرح کچھ صفات کا تعلق ظاہری عیب یا حلیے سے ہوتا ہے جیسے کہ لنگڑا ہونا، اندھا ہونا، گونگا ہونا، کالا ہونا، سبز ہونا… 
.
اسم الصِّفہ کے اوزان کا کوئی قاعدہ نہیں ہوتا… ان اوزان میں ة اور کھڑے زبر کے ساتھ  ي، موَنث کے لئے ہے… 
فَعِلٌ  فَعِلَةٌ   فَعْلَانُ   فُعْلَانَةٌ  فَعْلَی   فُعْلَانُ   اَفْعَلُ   فَعْلَاءُ   فَعِیْلٌ   فَعِیلَةٌ   فَعْلٌ    فَعْلَةٌ
فَعَلٌ  فَعَلَةٌ   فَعَالٌ    فُعَالٌ    فِعْلٌ     فِعْلَةٌ      فُعْلٌ   فُعْلَةٌ     فَیْعِلٌ   فَیْعِلَةٌ   فَاعِلٌ   فَاعِلَةٌ
.
مندرجہ ذیل مثالوں میں پہلا لفظ مذکر اور دوسرا لفظ موَنث کے لئے ہے… 

فَرِحٌ فَرِحَةٌ  خوش                اَسِفٌ اَسِفَةٌ رنجیدہ               حَزِنٌ حَزِنَةٌ غمزدہ –
مَرِحٌ مَرِحَةٌ خوش مزاج        قَلِقٌ قَلِقَةٌ پریشان                  بَطِرٌ بَطِرَةٌ خود سر 
.
ظَمْآنُ ظَمْأَی یا ظَمْآنَةٌ پیاسا                  جَوْعَانُ جَوْعَی بھوکا          عَطْشَانُ عَطْشَی یا عَطْشَانَةٌ پیاسا
فَرْحَانُ فَرْحَى یا فَرْحَانَةٌ خوش باش    مَلْأَنُ مَلْأَنَةٌ لبریز                 عُرْیَانُ عُرْیَانَةٌ ننگا 
.
أَبْیَضُ بَیْضَاءُ سفید                        أَسْوَدُ سَوْدَاءُ کالا                    أَخْضَرُ خَضْرَاءُ سبز
أَحْمَرُ حَمْرَاءُ سرخ                       أَصْفَرُ صَفْرَاءُ پیلا                  أَزْرَقُ زَرْقَاءُ نیلا 

أَعْرَجُ لنگڑا اور عَرْجَاءُ لنگڑی              أَعْمَی اندھا اور عَمْیَاءُ اندھی
أَحْمَقُ حَمْقَاءُ بے وقوف                         أَشْیَبُ بوڑھا اور شَیْبَاءُ بوڑھی 
.
کَرِیْمٌ کَرِیْمَةٌ نیک، سخی                      عَفِیْفٌ عَفِیْفَةٌ پاکدامن                     نَشِیْطٌ نَشِیْطَةٌ چست
عَلِیٌّ عَلِیَّةٌ بلند                                      رَدِئٌ رَدِیَةٌ بے کار                     قَوِیٌ قَوِیَّةٌ طاقتور
مَرِیْضٌ مَرِیْضَةٌ بیمار 
.
عَذْبٌ عَذْبَةٌ میٹھا              رَطْبٌ رَطْبَةٌ تازہ                       صَعْبٌ صَعْبَةٌ مشکل
شَھْمٌ شَھْمَةٌ زود فہم          ضَخْمٌ ضَخْمَةٌ موٹا                    سَھْلٌ سَھْلَةٌ آسان 
.
حَسَنٌ حَسَنَةٌ اچھا                     بَطَلٌ بَطَلَةٌ بہادر، ہیرو                    جَبَانٌ جَبَانَةٌ بزدل
جَوَادٌ جَوَادَةٌ فیاض                   شُجَاعٌ بہادر                                 فُرَاتٌ میٹھا پانی 
.
صِفْرٌ صِفْرَةٌ خالی – مِلْحٌ مِلْحَةٌ کھارا پانی – حُرٌّ حُرِّيَّةٌ آزاد – صُلْبٌ صُلْبَةٌ سخت
حُلْوٌ حُلْوَةٌ میٹھا – سَیِّدٌ سَیِّدَةٌ سردار – جَیِّدٌ جَیِّدَةٌ اچھا – طَیِّبٌ طَیِّبَةٌ عمدہ – ھَیِّنٌ ھَیِّنَةٌ آسان
مَیِّتٌ مَیِّتَةٌ مردہ – صَاحِبٌ صَاحِبَةٌ ساتھی – طَاهِرٌ طَاهِرَةٌ پاک – فَاضِلٌ فَاضِلَةٌ  فاضل 
.
٦-  اسم آلہ وہ اسم مشتق ہے جو ان اوزار یا ہتھیار کے نام بتاۓ جن کے ذریعے کام کیا گیا ہو…
اسم آلہ کے اوزان یہ ہیں…  مِفْعَلٌ مِفْعَلَةٌ مِفْعَالٌ فَعَّالَةٌ 
.
مِصْعَدٌ لفٹ – مِدْفَعٌ توپ – مِرْسَمٌ پنسل – مِلَفٌّ فائل  –  مِنْشَفَةٌ تولیہ – مِسْطَرَةٌ پیمانہ – مِطْرَقَةٌ ہتھوڑا
.
مِرْوَحَةٌ پنکھا – مِلْعَقَةٌ چمچہ – مِکْنَسَةٌ جھاڑو – مِرْآةٌ آئینہ – مِکْوَاةٌ استری – مِمْحَاةٌ اریزر
.
مِبْرَاةٌ پنسل تراش – مِشْکَاةٌ لالٹین – مِنْظَارٌ دوربین – مِقْرَاضٌ قینچی – مِفْتَاحٌ چابی – مِیْزَانٌ ترازو
.
مِنْشَارٌ آری  –  نَظَّارَةٌ عینک –  طَیَّارَةٌ ہوائی جہاز اور پتنگ – دَبَّابَةٌ ٹینک – بَرَّادَةٌ کولر
.
خَلَّاطَةٌ بلینڈر، مکسنگ مشین 
.  

٧- اسم التفضیل وہ اسم مشتق ہے جو اپنے مصدر سےأَفْعَلُ کے وزن پر بنایا جاتا ہے اور دو یا دو سے زیادہ اسماء میں تقابل کے لئے استعمال ہوتا ہے… یہ ثلاثی مجرد میں أَفْعَلُ (مذکر) اور فُعْلَى (موَنث) کے وزن پر آتا ہے… لیکن جو اسم الصفہ أَفْعَلُ کے وزن پر ہوں جیسے کہ رنگوں کے نام، تو وہ اسم التفضیل یعنی تقابل کے لئے نہیں ہوتے… انھیں اسم التفضیل بنانے کے لئے انکے ساتھہ اَشَدُّ اَکْثَرُ یا اَقَلُّ لگا کر مصدر کو منسوب کر دیا جاتا ہے… خَیْرٌ (اَخْیَرُ) اور شَرٌ (اَشَرُّ) دونوں اسم التفضیل ہیں…

اَفْضَلُ زیادہ افضل – اَکْبَرُ، کُبْرَی زیادہ بڑا یا سب سے بڑا – اَصْغَرُ ، صُغْرَی زیادہ چھوٹا
.
اَحْسَنُ ، حُسْنَی زیادہ اچھا – اَسْھَلُ زیادہ آسان – اَصْعَبُ زیادہ مشکل 
.
اَکْثَرُ اِکْرَامًا زیادہ عزت دینے والا –  اَقَلُّ اِجْتِھَادًا کم محنتی – اَشَدٌّ حُمْرَةً زیادہ سرخ – اَشَدُّ بَیَاضًا زیادہ سفید 
.
٨- اسم التصغیر – وہ اسم جس میں چھوٹائی یا حقارت کے معنی پاۓ جائیں… 
.
عَبْدٌ سے  عُبَیْدٌ  رَجُلٌ سے رُجَیْلٌ  جَعْفَرٌ سے جُعَیْفِرٌ 
.
3- اسم منسوب – وہ اسم ہے جو اسم ذات یا اسم معنی کی طرف نسبت کرتا ہے… اور اسم کے آخر میں يَ ، يّة ، ة ، يّ لگانے سے بنتا ہے… جیسے کہ 
 
بَاكِسْتَانُ سے بَاكِسْتَانِىَ اور بَاكِسْتَانِيَّة                 – مَدْرَسَةٌ سے مَدْرَسِىٌّ
دِرَاسَةٌ سے دِرَاسِىٌّ اور دِرَاسِيَّةُ                       –  أَمْرِيْكَا سے أَمْرِيكِيٌّ  
اِسْلَامُ سے اِسْلَامِىَ اوراِسْلَاميَّة                       – فَرَنْسَا سے فَرَنْسِيٌّ
عَرَبِ سے عَرَبِىَ اورعَرَبِيَّة                            – كَنَدَا سے كَنَدِيٌّ
مَكَّة سے مَكِّىٌّ اور مَكِّيَّة                                  – هِنْد سے هِنْدِيٌّ  
نُورٌ سے نُورَانِىٌّ                                            – حَقٌّ سے حَقَّانِىٌّ  
مَدِينَةٌ سے مَدَنِىٌّ                                             – سَمَآءٌ سے سَمَاوِىٌّ
مَولى سے مَولَوِىٌّ                                          – صَرَفِىٌّ                          
 
.
اسم منسوب کا مرکب
 
الرَّجُلُ العَرَبِيُّ – المَعْهَدُ الاِسْلَامِيُّ – العَالِمُ الْبَاكِسْتَانِيُّ – اللُّغَةُ العَرَبِيَّةُ – 
.
الجَامِعَةُ الإِسْلَامِيَّةُ – المَجَلَّةُ البَاكِسْتَانِيَّةُ –  طَالِبٌ كَنَدِيٌّ – مُسْلِمٌ فَرَنْسِيٌّ  رَأْيٌ اَمْرِيْكِيٌّ
.
4- اسم غیرمُتَمَكِّن وہ اسماء ہیں جنکے اعراب میں کوئی تبدیلی نہیں آتی یعنی کہ یہ مبنی ہوتے ہیں… یہ کسی مادّے سے نہیں بنتے… اسم غیر مُتَمَكِّن کی چار قسمیں ہیں… ضمیر موصولہ، اسم اشارہ، اسم صوت اور ضمیر یا مضمرات…
(انکے علاوہ مرکب میں مرکب بنائی، فعل میں اسماۓ افعال اور حروف میں اسم یا حرف ظرف اور اسم کنایہ بھی غیر متمکن ہیں)…
.
١) ضمیر موصولہ جملے کا حصّہ ہوتے ہیں اوراس اسم کی طرف اشارہ کرتے ہیں جس کے بارے میں کوئی خبر دی جاۓ… یہ اسم معرفہ ہوتے ہیں… یہ بھی دو قسم کے ہوتے ہیں… ضمیر موصولہ اور حرف موصولہ  (حرف موصولہ کا بیان حروف میں ہے) …
ضمیر موصولہ – الَّذِی وہ جو (ایک مرد) – الَّذِینَ وہ جو (سب مرد)
                         الَّتِی وہ جو (ایک عورت) – اللَّاتِی وہ جو (سب عورتیں) 
.
٢) ضمیر اشارہ کسی اسم کی طرف اشارہ کرتے ہیں… جس اسم کی طرف اشارہ کیا جاۓ اسے مشارالیہ کہتے ہیں… یہ اکثر اسم کے ساتھ ملکر مبتداء بنتے ہیں اور مبتداء خبر کے ساتھ مل کر جملہ اسمیہ بناتے ہیں… یہ اسم معرفہ ہوتے ہیں… اسم اشارہ قریب اور بعید، دونوں کے لئے الگ ہیں…
.
اشارہ قریب – ھٰذا یہ ایک مرد – ھٰذهِ یہ ایک عورت – ھٰؤلَاءِ یہ سب مرد یا عورتیں   
.
اشارہ بعید – ذلک وہ ایک مرد – تلک وہ ایک عورت – اُولآ ئِكَ وہ سب مرد یا عورتیں
.
٣) اسم صوت کسی بھی آواز کو کہتے ہیں جیسے کہ اُحْ اٌحْ کھانسی کی آواز، اُفْ درد یا غصّے کی آواز 
.
٤) ضمیر (یا مضمرات) وہ اسم ہے جو اسم ظاہر کی جگہ استعمال ہو… ضمائر کے بارے میں تفصیل ضمیر کے باب بیان کی گئی ہے… ضمیر اشارہ اور ضمیر موصول کے علاوہ ضمیر دو قسم کی ہوتی ہیں… ضمیر منفصل اور ضمیر متصل…
.
ضمیر منفصل وہ ضمیرہے جو اپنے اسم کے ساتھ ملی ہوئی نہیں ہوتی بلکہ الگ لکھی جاتی ہے… 
.
ضمیر منفصل مرفوع اپنے فاعل سے جدا، جملے میں مبتداء بنتی ہے… یہ اسم معرفہ ہوتے ہیں جبکہ اسم نکرہ خبر ہوتی ہے… یہ مبنی ہوتی ہے… اس کے چودہ صیغے ہیں… 
 
مذکر – ھُوَ وہ ایک – ھُمَا وہ دو – ھُمْ وہ سب – أَنْتَ تم – اَنْتُمَا تم دونوں – اَنْتُمْ تم سب 
موَنث – ھِیَ وہ – ھُمَا وہ دو – ھُنَّ وہ سب – أَنْتِ تم – اَنْتُمَا تم دونوں – اَنْتُنَّ تم سب 
مذکر و موَنث – أَنَا میں – نَحْنُ ہم 
 
جملے – ھُوَ طَالِبٌ وہ ایک طالبعلم ہے – ھِیَ طاَلِبَةٌ وہ ایک طالبہ ہے 
.
ضمیر منفصل منصوب اپنے فعل سے جدا ہوتی ہے اور لاحقہ ہوتی ہے … اسکے چودہ صیغے ہیں… 
 
اِیَّاہُ اِیَّاھُمَا اِیَّاھُمْ اِیَّاھَا اِیَّاھُمَا اِیَّاھُنَّ اِیَّاکَ اِیَّاکُمَا اِیَّاکُمْ اِیَّاکِ اِیَّاکُمَا اِیَّاکُنَّ اِیَّایَ اِیَّانَا
.
ضمیر متصل اپنے اسم یا حرف جر کے ساتھ ملی ہوئی ہوتی ہے اور الگ نہیں لکھی جاتی… 
.
مذکر غائب و حاضر
ہُ اسکا  – هُمَا ان دونوں کا – هُمْ  ان سب کا  –  كَ تمہارا  –  كُما تم دونوں کا – كُمْ  تم سب کا 
.
موَنث غائب و حاضر
هَا اسکی  –  هُمَا ان دونوں کی –  هُنَّ ان سب کی –  كِ تمھاری  –  كُما تم دونوں کی – كُنَّ تم سب کی 
.
مذکر موَنث متکلّم
ى  میری  میرا –  نَا  ہماری ہمارا  
.
متصل ضمیر حروف جر(بِ لِ مِنْ فِی عَنْ اِلَی عَلَی) کا لاحقہ بنے تو مجرور بالجر کہلاتی ہے… 

لَهُ لَهُمَا لَهُمْ لَهَا لَهُمَا لَهُنَّ لَكَ لَكُما لَكُمْ لَكِ لَكُما لَكُنَّ لِى لِنَا
مِنْهُ مِنْهُمَا مِنْهُمْ مِنْهَا مِنْهُمَا مِنْهُنَّ مِنْكَ مِنْكُما مِنْكُمْ مِنْكِ مِنْكُما مِنْكُنَّ مِنِّى مِنَّا
عَنْهُ عَنْهُمَا عَنْهُمْ عَنْهَا عَنْهُمَا عَنْهُنَّ عَنْكَ عَنْكُما عَنْكُمْ عَنْكِ عَنْكُما عَنْكُنَّ عَنِّى عَنَّا
فِیهِ  فِیهِمَا  فِیهِمْ  فِیهَا  فِیهِما  فِیهِنَّ  فِیكَ  فِیكُما فِیكُم فِیكِ فِیكُما فِیكُنَّ فِیمِى فِيْنَا
اِلَیْهِ  اِلَیْهِمَا اِلَیْهِمْ  اِلَیْهَا  اِلَیْهِما اِلَیْهِنَّ  اِلَیْكَ  اِلَیْكُما اِلَیْكُم اِلَیْكِ اِلَیْكُما اِلَیْكُنَّ اِلَیَّ اِلَیْنَا
عَلَیْهِ عَلَیْهِمَا عَلَیْهِمْ عَلَیْهَا عَلَیْهِما عَلَیْهِنَّ عَلَیْكَ عَلَیْكُما عَلَیْكُم عَلَیْكِ عَلَیْكُما عَلَیْكُنَّ عَلَیَّ عَلَیْنَا
.
متصل ضمیر اسم کا لاحقہ بنا تو مرکب اضافی بناتی ہے اور مجرور بالااسم کہلاتی ہے…  اور مرکب اضافی مبنی نہیں معرب ہوتا ہے…اسکی تفصیل مرکبات میں ہے…  
 
رَبُّهُ رَبُّهُمَا رَبُّهُمْ رَبُّهَا رَبُّهُمَا رَبُّهُنَّ رَبُّكَ رَبُّكُما رَبُّكُمْ رَبُّكِ رَبُّكُما رَبُّكُنَّ رَبِّى رَبُّنَا
.
فعل ماضی اورفعل مضارع میں هُوَ هِيَ أَنَا نَحْنُ  کی ضمیریں  مستتر ہیں… جبکہ اَلِفُ الْاِ ثْنَیْنِ ، وَاؤُالجَمَاعَةِ ، نُونُ النِّسْوَةِ… یہ تینوں فعل ماضی اورفعل مضارع مضارع  کی بارز ضمیریں ہیں… اور يَاءُ الُمخَاطِبَةِ فعل مضارع کی بارز ضمیر ہے… انکی تفصیل فعل میں دی گئی ہے…
.
.
 
جملے  
.
اسم التفضیل کے جملے 
.
العِلْمُ اَفْضَلُ مِنَ الْمَالِ – علم مال سے بہتر ہے
لَیْلَی اَکْبَرُ مِنْ اُخْتِھَا  لیلی – اپنی بہن سے زیادہ بڑی ہے
أَنَا اَصْغَرُ مِنْ خَدِیجَةُ سِنًّا – میں خدیجہ سے عمر میں چوٹی ہوں
خَطُّکَ اَحْسَنُ مِنْ خَطِّی – آپ کا خط میرے خط سے زیادہ اچھا ہے
اللُّغَةُ الْعَرَبِیَّةُ اَسْھَلُ مِنَ اللُّغَةُ الْاِ نْجَلِیْزِیَّةِ  – عربی زبان، انگریزی زبان سے زیادہ آسان ہے 
الرِّیَا ضِیَّاتُ اَصْعَبُ عَلَیَّ مِنَ الْعُلُومِ – میرے لئے ریاضی، سائنس سے زیادہ مشکل ہے 
الصَّلَاةُ خَیْرٌ مِّنَ النَّومِ – نماز نیند سے بہتر ہے
لَیْلَةُ اْلقَدْرِ خَیْرٌ مِّنْ اَلْفِ شَهْرٍ لَیْلَةُ اْلقَدْرِ – ہزار مہینوں سے بہتر ہے 
الجُبْنُ شَرٌّ مِّنَ الفَقْرِ – بزدلی غربت سے بدتر ہے 
أَنَا اَکْثَرُ اِجْتِھَادًا مِنْ خَالِدٍ – میں خالد سے زیادہ محنتی ہوں 
هُمْ اَکْثَرُ اِکْرَامًا لِلضُّیُوفِ مِنِّی  – وہ مجھ سے زیادہ مہمانوں کا احترام کرنے والے ہیں
خَالِدٌ اَقَلُّ اِجْتِھَادًا مِنْ حَسَنٍ  – خالد حسن سے کم محنتی ہے 
هَذَا الْوَرَقُ اَشَدُّ بَیَاضًا مِنْ ذَاکَ  یہ کاغذ اس سے زیادہ سفید ہے

.
.
.
مصدر هيئة کے جملے 
.
لَا تَمْشِ مِشْیَةَ الْمُخْتَالِ -غرور کی چال نہ چل 
فَاَ مَّا مَنْ ثَقُلَتْ مَوَازِیْنُهُ  فَھُوَ فِی عِیْشَةٍ رَّاضِیَةٍ (سوره العادیات کی آیات)
.
.
.
اسم الفاعل کے جملے 
.
الطُّلَّابُ جَالِسُونَ وَ الْمُدَرِّسُ وَاقِفٌ  طلبہ بیٹھے ہیں اور معلم کھڑا ہے 
الوَالِدُ نَائِمٌ عَلَی السَّرِیْرِ  والد چارپائی پر سو رہے ہیں 
المُصَلُّونَ سَاجِدُونَ الْآنَ  نمازی اب سجدہ کر رہے ہیں 
المُدِیْرُ مُسَافِرٌ الْیَوْمَ اِلَی الْکُوَیْتِ  مدیر صاحب آج کویت روانہ ہونگے 
المُوَظَّفُونَ مُشْتَغِلُونَ فِی اَعْمَالِھِمْ   ملازمین اپنے کاموں میں مصروف ہیں 

نَحْنُ رَاجِعُونَ – ہم لوٹ رہے ہیں 
اَنْتُمْ رَاجِعُونَ مِنَ الْمَدْرَسَة – تم مدرسے سے لوٹ رہے ہو 
اَلْمُعَلِّمَةُ جَالِسَةٌ فِی الْکُرْسِیِّ – استانی کرسی پر بیٹھی ہے 
النَّاسُ غَافِلُونَ عَنِ الدِّینِ – لوگ دین سے غافل ہیں 
أَنَا نَاظِرٌ اِلَیْکُمْ – میں تمہیں دیکھ رہا ہوں 
خَالِدٌ غَائِبٌ اَلْیَوْمَ – خالد آج غیر حاضر ہے 
مَسْعُودٌ صَائِمٌ – مسعود روزے سے ہے 
الوَالِدَةُ نَائِمَةٌ – والدہ سو رہی ہیں 
.
.
اسم المفعول کے جملے 
.
السَّطْلُ مَمْلُوْءٌ بِا لْمَاءِ – بالٹی پانی سے بھری ہے 
نَحْنُ مَسْرُورُونَ بِنَجَا حِکَ – ہم تیری کامیابی سے خوش ہیں 
عُذْرُکَ مَعْقُولٌ – تمہارا عذر معقول ہے 
.
.
.
اسم الصفہ یا صفہ مشبہ کے جملے 
.
بَیْتُ الْمُدَرِّسِ جَمِیْلٌ جِدًّا  معلم کا گھر بہت خوبصورت ہے 
عُمْدَةُ الْقَرْیَةِ رَجُلٌ شَرِیْفٌ  گاؤں کا نمبردار معزز آدمی ہے 
صُعُودُ هَذَا الْجَبَلِ صَعْبٌ   اس پہاڑ پر چڑھائی مشکل ہے 
اللُّغَةُ الْعَرَبِیَّةُ سَھْلَةٌ عربی زبان آسان ہے 
غِلَافُ الْکِتَابِ أَخْضَرُ  کتاب کا کور سبز ہے 
الحَارِسُ شُجَاعٌ وَ اللِّصُّ جَبَانٌ  پہریدار بہادر ہے اور ڈاکو بزدل ہے 
.
.
.
اسم زمان کے جملے 
.
خَرَجْتَ مِنَ الْمَنْزِلِ مَطْلَعَ الشَّمْسِ   میں طلوع آفتاب کے وقت گھر سے نکلا 
یَبْدَأُالْفَلَّاحُ عَمَلَهٌ مَطْلَعَ الفَجْرِ  کسان طلوع فجر کے وقت کام شروع کرتا ہے 
مَرْحَلُ الْحُجَّاجِ غَدًا  حاجیوں کی روانگی کا دن کل ہے 
مَوْعِدُنَا السَّاعَةُ الثَّالِثَةُ یَوْمُ الْجُمُعَةُ   ہماری ملاقات کے وقت جمعہ کے روز تین بجے ہے 
مَرْجِعٌ الْوَالِدِ یَوْمُ الْخَمِیْسِ   والد کی واپسی کا دن جمعرات ہے 
یَوْمُ عَرَفَةَ مَوْعِدٌ لِقَبُولِ التَّوبَةِ  یوم عرفہ توبہ کی قبولیت کا وقت ہے 
شَهْرُ رَمَضَانَ مَوْسِمٌ لِلْعِبَادَةِ وَ اِصْلَاحِ النَّفْسِ  ماہ رمضان عبادت اور اصلاح نفس کا موسم ہے 
اِسْتَیْقَظْتُ مُنْتَصَفَ اللَّیْلِ  میں نصف شب کے وقت جاگ اٹھا 
.
.
.
اسم آلہ کے جملے 
.
یُسْتَعْمَلُ الْمِجْھَرُ لِفَحْصِ الْجَرَاثِیْمِ – جراثیم کے معائنے کے لئے خوردبین استعمال ہوتی ہے
نَلْعَبُ بِالْکُرّةِ وَ الْمِضْرَبِ – ہم گیند اور بلّے سے کھیلتے ہیں
تُکْنَسُ الْبُیُوتُ بِالْمِکْنَسَةِ – گھروں کو جھاڑو سے جھاڑا جاتا ہے 
جَفِّفْ بَدَنَکَ بِا لْمِنْشَفَةِ – اپنے بدن کو تولئے سے خشک کرو 
یَحْرُثُ اْلفَلَّاحُ الْاَرْضَ بِالْمِحْرَاثِ – کسان زمین کو ہل سے کاشت کرتا ہے  
اِحْفَظْ مَا فَضَلَ مِن الطَّعَامِ فِی الثَّلَّا جَةِ – جو کھانا بچ گیا ہے اسے فرج میں محفوظ کردو 
سَاَ غْسِلُ الْمَلَا بِسَ بِا لْغَسَّالَةِ  – میں کپڑے واشنگ مشین میں دھوؤں گا 
.
.
.
 اسم منسوب کے جملے
 
,عَبْدُ الرَّحْمنِ طَالِبٌ بَاکِسْتَانِیٌ تَخَرَّجَ فِي مَعْھَدٍ اِسْلَامِیٍّ، وَھُوَ مَعْھَدُ اللٌّغَةِ العَرَبِیَّةِ فِي اِسْلَامَ آبَاد، ثُمَّ سَافَرَ اِلَی الْمَمْلَکَةِ الْعَرَبِیَّةِ السُّعُودِیَّةِ وَالْتَحَقَ بِالجَا مِعَةِ الْإِ سْلَامِیَّةِ بِاالْمَدِینَةِ المُنَوَّرَةِ لِدِرَاسَةِ اللُّغَةِ العَرَبِیَّةِ وَالعُلُومِ الشَّرْعِیَّةِ – وَیَدْرُسُ بِتِلْکَ الْجَامِعَةِ طُلَّابٌ مِنْ بُلْدَانٍ وَ جِنْسِیَّاتٍ کَثِیرَةٍ مِنْھُمْ العَرَبِیُّ وَالأَفْرِیقِیُّ وَالھِنْدِیُّ وَالتٌّرْکِیُّ وَا لإِ نْدُونِیْسِیُّ المَالِیْزِی وَالصِّیْنِی وَالأُورُبِّیُّ وَ الأَ مَرِیکِیُّ وَ غَیْرُھُمْ –
.
.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: