Get Well Soon Edhi!

Just heard about respected Mr. Edhi being hospitalized.

Ya Allah (SWT)! Mr. Edhi is running half Pakistan.  Please keep him healthy and active as he’s always been.  If something happens to him , who’s gonna provide me with kafn and dafn.  So please have Mercy on him.  Ameen!  😥

But if You want to do a great favor, please take Zardari, Altaf Yazeed, Nawaz Sharif and Shahi Syed ‘s souls away.

.

Advertisements

Happiness for Elderly People – خوشیاں بزرگوں کے لئے

The sources of happiness are innumerable.  They are spread all around and are present in every colour, even in dark in form of sweet dreams.
.
Happiness matters a lot in old age.  Elderly people should know how to make their last years cheerful for themselves and memorable for others.  Humans are not scarce and all mankind is one family.  They can make new ties and build new relationships.  It is a blessing to spend time among a group of your own age.  Oldies can make new friends, listen to their stories, comfort each other, share good memories and enjoy hobbies, such as reading, writing, painting, watching movies.  They are weak physically but still can discuss ideas.
.
In Pakistan, retirees, disabled or unwanted parents or grandparents who get to live in shelters or charities should be grateful to God Almighty for handing them over to better care-takers and new companions.  They should also be thankful to the administration, staff and donors to supply them with food, water, clothes and accommodation.
.
To make Pakistan a productive society, people must change their mind-set of relying upon their children in old age.  It was a problem long ago, not now.  Kudos to Mr. Abdus-Sattar Edhi and many other charities for their life time services in this regard.  Recalling the apathy and insensitivity of blood relation instead of enjoying the new fortune is ungratefulness and not a healthy exercise.
.
Old age is not a curse or a disease.  People just need to remind themselves that they can’t be completely useless after having a life time experience of almost everything.  If nothing they can do, still can use their tongue to express their feelings, say invocations in abundance, speak out the truth, teach the goodness, recite Qur’an, names of Allah, wazaif, pure words and say prayers for everyone.
.
However, there are many examples of how some men and women in old age succeeded in sustaining themselves.  There is a lady, illiterate though and underprivileged, at the age of 60, she has found a job to look after disabled old lady in a well-off family.  I have spoken to many rickshaw drivers aged above 70 who are driving rickshaw and making their own money because they don’t want to be a burden on their sons and daughters.  There is a gol-gappay wala, a decent man with a charming smile, age around 65, still working while his sons are earning too.  Many gardeners of age above 70 work at road-side nurseries and provide home services for taking care of plants.
.
If elderly people can find working opportunities under these crucial circumstances, why can’t the educated youth of Pakistan?
.
.
شکایت کیوں اسے کہتے ہو یہ فطرت ہے انساں کی
مصیبت میں خیال عیش رفتہ آ ہی جاتا ہے….
جوش ملیح آبادی
کون کہتا ہے نجومی، ہاتھ دیکھنے والے، زائچہ بنانے والے لوگوں کے مستقبل کے بارے میں پتہ ہوتا ہے کہ کل کیا ہوگا… ہمیں تو یہ بھی نہیں پتہ ہوتا کہ صبح اٹھہ کر کیا دیکھنا نصیب ہوگا یا شام کو اچانک کیا خبر مل جائے گی… ابھی یہی ہوا… اچانک دروازے پر دستک ہوئی، چوکیدار نے کہا باجی نیچے ڈاکٹر ریحانہ آئی ہے آپ کو بلا رہی ہے… میں نے کہا انکو کیسے پتا چلا کہ کہ میں یہاں ہوں اور وہ خود اوپر کیوں نہیں آئیں… کہنے لگا ہمیں نہیں پتہ، آپ نیچے آ کر خود بات کرو… میں گئی تو واقعی وہی تھیں… تین سال بعد دمام سے واپس آئیں ہیں، بتانے لگیں کہ وہاں کینسر ہو گیا تھا، پھر آپریشن ہوا، اب ٹھیک ہیں… شکر خدا کا… حالانکہ نفسیاتی ڈاکٹر نہیں ہیں پھربھی خواتین کو زندہ دلی کے ساتھ زندگی گزارنے کے طریقے بتانے کی ماہر ہیں… ڈاکٹر بھی اپنے علاج کے لئے کبھی کبھی دوسرے ڈاکٹروں کا محتاج ہو جاتا ہے… 
آج کے دور میں سب سے زیادہ کس کی اہمیت ہے؟  بالکل ٹھیک کہا، ٹی وی کی…چلیں ڈراموں کی بات کرتے ہیں… صرف تین ڈرامے…
ڈراموں پر اطہر شاہ خان جيدي کے دو شعر یاد آ گۓ…  
اک اداکار رکا ہے تو ہوا اتنا ہجوم
مڑ کے ديکھا نہ کسي نے جو قلمکار چلا
چھيڑ محبوب سے لے ڈوبے گي کشتي جيدي
آنکھ سے ديکھ اسے ہاتھ سے پتوار چلا
.
“ہمسفر” دیکھنے میں اچھا ہے لیکن اس پر بات کرنے کو کچھہ خاص نہیں ہے…
.
“میرے قاتل میرے دلدار” اچھا ہے، اس میں ہیروئن کا فیصلہ اچھا لگا کہ اس نے اپنے جیٹھہ سے شادی کرلی جس نے اس کا گھر تباہ کیا تھا… کیوں باقی لاٹھی اسی کے ہاتھہ میں ہے جس سے وہ سب کو ٹھیک رکھتا ہے… 
.
“جنت سے نکالی ہوئی عورت”… بڑا اچھا لگا اس میں ثمینہ پیرزادہ کا کردار… گوکہ مجھے یہ خاتون پسند نہیں لیکن ہیں خوبصورت اور بہت اچھی اداکارہ بھی… ایک خاتون کو ساٹھہ سال کی عمرمیں طلاق ہو جائے تواسکی زندگی کیا ہو جاتی ہے… لیکن مجھے بہت ہی پسند آیا کہ ایک تو یہ خاتون جاب کرتی ہیں اور دوسرے کسی کا معاملات میں نہیں بولتی اور تیسرے یہ کہ بیٹے کے گھر میں اپنی وجہ سے مسلے دیکھہ کر وہ اپنے والد کے پرانے گھر میں آ جاتی ہے اور اکیلے رہنے لگتی ہے…
.
اسی طرح کرنا چاہیے، غصے میں نہیں، بلکہ اپنی آزادی اور اختیار کے لئے… مرد ہو یا عورت، جوان ہو یا بوڑھا… کیا ضروری کہ کسی پر بھی بلاوجہ بوجھہ بنا جائے اور اولاد یا کسی بھی رشتے پر اخلاقی اور جذباتی دباؤ ڈالا جائے… بلکہ مجھے تو ان بوڑھے لوگوں پرغصہ آتا جو ایدھی اور مختلف اداروں میں زندگی گذار رہے ہیں، کھانا پینا مل رہا ہے، ایک چھت کے نیچے ہیں، بہت سے کمانے والوں کا پیسہ ان پر خرچ ہورہا ہے… اور پھر وہ ان رشتوں کو روتے رہتے ہیں جو انکو چھوڑ کر چلے گئے… کیا پتہ مجبوری ہو… اور نہ بھی ہو تو بھئی نئے رشتے بنالیں… انسانوں کی کمی نہیں… شکرکریں کہ گھر کی چخ چخ سے جان چھوٹی… دعا دیں انکو جنہوں نے اتنا انتظام کیا، آپ کو سڑک پر رلنے سے بچا لیا… اب نئی جگہ پر نئے لوگوں سے لطف لیں… ضروری نہیں کہ پچھلوں کی شکایتیں کریں کہ ہے کیسے نکلے… یہ سوچیں آپ نے کہاں کہاں کس کس کو اپنی اولاد کی خاطر نقصان پہنچایا… اور کیا کبھی اولاد کو الله کے احکامات اور احترام انسانیت سکھایا… جس طرح آپ اپنی زندگی کا کنٹرول چاہتے تھے اسی طرح آپ کی بہو بیٹے بیٹیاں بھی چاہتے ہیں… ان کے سر پر سوار نہ رہیں… خود بھی خوش رہیں اور انھیں بھی خوش رہنے دیں… 
بزرگ بہت خوش رہ سکتے ہیں اگر وہ یہ سوچ لیں کہ وہ بیکار نہیں ہیں… اتنی زندگی کے تجربات کے بعد بیکار ہو بھی نہیں سکتے… اگر کچھ بھی نہیں کر سکتے تو کم از کم زبان سے قرآن، درود، کلمات، دعائیں تو پڑھ سکتے ہیں… 
.
اس ڈرامے کی طلاق کا کیس دیکھہ کر باجی کی کالج کی ایک دوست یاد آ گئیں… ان کے والد نے اسی طرح ایک دن غصے میں کھانےکی میز پراپنی خاموش صفت بیوی کو طلاق دے کر بائیس تئیس سال کی شادی ختم کردی… ایک بیٹے کو جو کالج میں ماں کے ساتھ رہنا پڑا اور بیٹی جو کالج میں تھیں اور چھوٹے بیٹے کو باپ کے ساتھہ… پتہ نہیں کیسے سامنا کیا ہوگا ان سب نے باقی سب کا…
.
جب سے پاکستان بنا ہے، کراچی کی قوم پاکستان سے پہلے کی خوشیوں کو روۓ جا رہی ہے… اور پاکستان کے ذریعے ملنے والی تمام خوشیوں کے مواقع برباد کئے چلے جا رہی ہے… پرانی رسمیں، پرانی یادیں، حسرتیں، ملامتیں، اپنےعزیز رشتوں سے کبھی انتہا ہمدردی کبھی شدید انتقام کبھی نہ ختم ہونے والی شکایتیں کبھی دھمکیاں… بس ایک چکرہے جوچلے چلے جا رہا ہے، سب اس سے پریشان لیکن کوئی اسے روکنے پرتیارنہیں…
.
بھئی الله نے اتنی بڑی دنیا بنائی ہے کچھہ اس پر بھی توجہ دے لو، ہزاروں قسم کے لوگ ہیں، حسین نظارے ہیں… خوشحالی اور خوشی وہ چیزیں ہیں جو ہرجگہ اورہررنگ میں بکھری پڑی ہیں… حتی کہ اندھیرے میں بھی خوابوں کی شکل میں… بس لوگوں کے پہچاننے کی دیر ہوتی ہے…
.
.

Human Empowerment – مرد کے سکون اور عورت کے اختیار کی ابتدا

‘Women Empowerment’, what is so fascinating about this slogan?  And more stupid it sounded when thousands of men sent their women on streets to beg before a politician who being the citizen of another country, self-exiled for many years, promised them to help in getting their rights through Pakistani parliament.  It appeared to be even more hideous when women started the jalsa with emotional speeches and ended with singing and dancing for no reason.

Which rights and authority are they talking about – that women will not be treated inhumanly at homes (the homes that they had come from), get their rights of education and making decisions for their life?  These rights are already mentioned in both constitutions – Qur’an and the national constitution of Pakistan.  It is only that men and women don’t respect both of them and obey none.

Those women at Bagh-e-Jinnah were representing thirty or fourty thousand families of Karachi.  Were they there as a victim of their men’s injustice at home?  Then what would parliament do about this?  If Altaf Hussain is their saviour, as their quaid he can just order the Karachiite men to behave and that is it.  This way it would set an example for ‘macho man’ all over Pakistan.

So basically, what I think that this jalsa was arranged to achieve many goals, such as, diverting people’s attention from Balochistan issue and to warm Imran Khan to keep his hands off Karachi – but to solve women’s issues.

Just think about it.  There was no Altaf Hussain when Ms. Fatimah Jinnah, Mrs. Rana Liaquat Ali Khan and Mrs. Bilqees Edhi were born.  How these honourable ladies grew up to be so powerful and stepped forward with leading and administrative qualities.  Their men at home encouraged them and helped them, not the stupid strangers on the streets.

LEARNING is important for women.  Women need to learn how to read, write and calculate, how to raise their sons not as their supporting cane but as a useful citizens for all, how to discuss issues with their men at home and find their solution, how to keep their honour while being out on the streets.  Why do they wait for men to give them a purpose of life, define their status in society, teach them what Qur’an says about their status?

Men’s period of tranquility begins when they accept women as equal human beings and let them live and perform accordingly. Crushing women’s rights in the name of securing their honour and dignity results in men’s own destruction.

عبدالستار ایدھی کو پاکستان نے ایک شناخت دی جس کا بدلہ انہوں نے نیکیوں کے ایک ختم نہ ہونے والے سلسلے کو شروع کر کے دیا…اور آج ایدھی صاحب ذاتی طور پر ایک بہت بڑا نام ہی نہیں بلکہ پاکستان کی پہچان ہیں… 
١٩٢٨ گجرات میں پیدا ہو ۓ… انیس سال کی عمر میں ١٩٤٧ میں ہجرت کر کے پاکستان آۓ… ١٩٥١ میں اپنی مدد آپ کے اصولوں کے تحت ایدھی ٹرسٹ کے نام سے  میٹھادر میں ایک ڈسپنسری  قائم کر کے باقاعدہ فلاح وہ بہبود کا سلسلہ شروع کیا… ١٩٦٥ میں ٣٧ سال کی عمرمیں ١٨ سالہ  بلقیس ایدھی صاحبہ سے شادی کی جو کے انکی ہی ڈسپنسری میں نرس تھیں… انکے دو بیٹوں اور دو بیٹیوں نے اپنے والدین کے نقش قدم پر چلتے ہو ۓ انکے مشن میں انکا ساتھہ دیا… 
انسانوں کی فلاح و بہبود کے اسلامی تصور کو عملی طور پر ثابت جس طرح ان دونوں نے کیا، آج کے زمانے میں اور پاکستان میں اسکی مثال نہیں ملتی… 
انکی کامیابی کا راز کیا ہے… دونوں میاں بیوی کوئی خاص تعلیم یافتہ نہیں… دولتمند بھی نہیں تھے… دونوں انگلش سے بلکل فارغ… لیکن بچے پڑھے لکھے بلکہ فیصل ایدھی تو ڈاکٹر ہیں… سٹائلش بھی نہیں… لیکن حکومت کی برابری کی سطح پر ایک فلاحی نظام قائم کر کے دکھانا اور چلانا بہت بڑا کارنامہ ہے… کونسی فلاحی عامه کی سروس ہے جسکا ایدھی فاونڈیشن  نے انتظام نہیں کیا ہوا ہے… 
انکی اہلیہ بلقیس ایدھی صاحبہ گو کہ کبھی کبھی ایدھی صاحب کی ایک شوہر کی حیثیت سے.شکایات کرتی نظر آتی ہیں .. لیکن انہوں نے ایدھی صاحب کا جس طرح ساتھہ دیا خاص طور پر خواتین کے معاملات حل کرنے میں اور انکو صحیح سوچ دینے میں، انکو عزت کا راستہ دکھانے میں، انکو ایک چھت مہیا کرنے میں… وہ انکا بڑا کارنامہ ہی نہیں بلکہ انکی حکمت اور سمجھداری کی علامت ہے… ایدھی صاحب لا کھہ کوشش سے بھی خواتین کے لئے خود کچھ نہیں کر سکتے تھے… 
مادرملّت اور رعنا لیاقت علی خان کی  قائدانہ اور انتظامی صلاحیتیں تمام پاکستانی خواتین کا لئے مثال ہیں… محترمہ فاطمه جناح اور رعنا لیاقت علی خان کے بعد بلقیس ایدھی صاحبہ تیسری خاتون ہیں جنہوں نے اپنے عورت ہونے کا ہر لحاظ سے بہترین استعمال کیا… اور اپنے ہی گھر کے مردوں کے ساتھہ مل کر پاکستان کی بہتری کے لئے کام کیا… عورتوں کے حقوق، آزادی، اختیار کیا ہوتا ہے کس حد تک ہوتا ہے اور اسے پاکستان کی عزت، معاشرتی قدروں اوردینی حدود کو قائم رکھتے ہوۓ کس طرح استعمال کیا جاتا ہے، کس طرح خود کوعورتیں قابل بھروسہ اورقابل عمل بنا سکتی ہیں… ان خواتین نے سکھایا… 
یہ وہ خواتین ہیں جن کو سخت ترین حالات ملے کام کرنے کے لئے، اپنی صلاحیتوں کو منوانے کے لئے، عورت کی طاقت اور ہمّت کا صحیح مظاہرہ کرنے کے لئے، عورت کا ایک انسان ہونے کے ناطے اپنا حق اور اختیار استعمال کرنے کے لئے، عورت کے درست اور بروقت فیصله  کرنے کی اہلیت دکھانے کے لئے … انکو عیش وعشرت، سہولتوں، گھر کی چار دیواری میں بیٹھ کر معاشرے کو جہنّم بنانے کے طریقوں، چار نوالوں اور پانچ کپڑوں اور چند زیورات کے لئے سازش اور چالاکیاں کرنے، شوہر کو قابو کرنے اور بھائیوں کو بھڑکانے کے منصوبوں سے کوئی سروکار نہ تھا… انکی زندگی کا مقصد اپنے جسم کی چوٹی چوٹی خواہشات پوری کرنا نہیں تھا بلکہ پاکستان جیسے تحفے کا احترام کرنا، اس خطہ زمین کا نام روشن کرنا اور اپنی قوم کے لوگوں کو انکے پیروں پر کھڑا کرنا اور انھیں خودداری کا راستہ دکھانا تھا…
اگر انکے گھر کے مرد انکی راہ میں رکاوٹ بنتے تو کیا یہ اتنا سب کچھ کر پاتیں؟  یا اگر یہ خواتین اپنے مردوں کی راہ کی رکاوٹ بن جاتیں تو وہ مستقل مزاجی کے ساتھ کام کر پاتے؟  کیا تحریک پاکستان کامیاب ہوتی اور پاکستانی میں اتنے بڑے بڑے فلاحی ادارے قائم ہوتے؟  تو بات ساری ہے ایک دوسرے کو سمجھنے کی…. معاشرے ہمیشہ سے مردوں کے ہاتھوں میں رہے ہیں اور شاید قیامت تک رہیں گے… کامیاب صرف وہ معاشرے ہو ۓ جہاں مردوں نے خواتین کو انسان تسلیم کیا اور پہلے انکو انکے حقوق اور عزت انکے گھروں میں دئے…. 
چاہے معامله عورتوں کو گھرکی چار دیواری کے اندر بٹھاکر رکھنے کا ہو یا تعلیم، ملازمت یا کسی بھی مقصد کے لئے گھر سے باہر جانے کی اجازت دینے کا… ملک و قوم کی ترقی اور خوشحالی تب ہی ہوتی ہے جب ایک خاندان کی عورتیں اور مرد مل کر کوئی فیصلہ کرتے ہیں، کسی بھی قسم کے حالات میں کوئی متفقہ راستہ اختیار کرتے ہیں، گھر کے اندر انصاف اور آزادی را ۓ کی فضا پیدا کرتے ہیں… ہر رشتہ دوسرے رشتے کی آزادی اور حقوق کا خیال رکھتا ہے… ایک گھر کے افراد ایک دوسرے پر بھروسہ کرتے ہیں… 
یہ ہوتی ہے مرد کے سکون اور عورت کے اختیار کی ابتدا… جب مرد اور عورت مل کرخوشی خوشی  ذمہ داریاں بانٹ لیتے ہیں… جس کو جو آسان لگے اور وہ اسے ایک طویل عرصے تک انجام دے سکے…

 

Housing for Single Women

Life is really rough and tough for single women in Pakistan.  At government level, there has never been any project under consideration to solve their problems, no expectations from them in next hundred years.

I tried but I couldn’t find any information about any such housing facilities.  Edhi Foundation, Darul-Aman and another one (I forgot the name) take girls or women in severe cases but their environment is not suitable for normal single women.

Usually these women do earn their livelihood but obviously cannot run the whole budget on one income.  Separate housing is unaffordable because of high rents.  Sharing a house with family members or relatives means share the food and utility expenses, plus the unrest by family visitors.  Mostly they become the victim of sexual harassment by their own relatives, which they are expected to ignore in courtesy.  Finally, being overburdened with family favors, they are usually deprived off the right of taking decisions for their own children.

I wish if there was a hostel type of  housing available in Karachi for single women or single mothers at reasonable cost.  It is not that hard.  Someone just need to build three or four story building with few spacious rooms with attached bath, one study room, a cafeteria, a hall in the middle to be used for various purposes and a lawn or a playground.  The residents can be charged for rent, utilities and food.  They should be made responsible to follow regulations and to maintain the premises.  As soon as they save enough money, they can move out to place of their own.

In our society, women are counted as dependent upon their fathers, brothers, husbands or sons.  They are not allowed to do their financial activities independently, they don’t open separate bank accounts, they are expected to handover their inheritance to their men in house and most of them don’t even travel unless accompanied by their male family members.  Even if they want to do all this, they still need a male support to deal with the men outside otherwise they are cheated very easily.  They are not aware of the laws, they don’t know the documents, they have no idea about the legal process of any activity.  If they employed then their employment gradually causes them to lose the main financial support from their husbands.

Pakistani women need to do something about making their life easier.  They need to learn to do things on their own.  They should find out the ways that can lead them to a peaceful and independent life style.

 

From Cradle to Grave

Years ago, when I was asked what would I do if I fail to do anything in Pakistan?  My reply was that I will still prefer to live in Pakistan because they have Edhi Centers.  From cradle to grave, they take care of everything.

The name “Edhi” in Pakistan is the symbol of humanity, sincerity and trust.

I had to spend the whole day yesterday at the funeral of one of our relative.  She died in her nineties.  On Tuesday night she was taken to the hospital and an hour later her body was sent to Edhi Center to be kept in freezer until it was ready for burial.  The next morning, her daughters and a couple of relatives reached there to wash the body (ghusl) and wrapped it in white clothes (kafn) and brought it home for final procession (i.e. the family members may apologize the deceased person, his/her debts are paid off, pardoned or transferred to another person, final sight and funeral prayer).

Few years ago, Mr. Edhi made an exclusive request to donate for burial services.  They needed money to buy land for grave, coffin and clothes for unclaimed dead bodies.

Now I came to know that most of the dead bodies, even of the well off people, are brought to Edhi Center for this purpose.  They use electricity, maintain the premises, buy wood to prepare coffins, buy clothes for kafn, pay to workers and drivers, use petrol or CNG, use stationary for documentation.  I am not sure if they charge everyone for their services but they should.  Why Edhi Centers?  Isn’t it the responsibility of government hospitals or private hospitals to provide this facility?

If they can’t, then….

1) people should force government to allocate land and funds to establish Edhi funeral homes all over Pakistan

2) professionals from related fields can sponsor training sessions for their workers

3) rich people can sponsor jobs or the salary of Edhi’s staff on yearly basis or they can finance their own employees to spend few hours a week or month to work at different branches of Edhi Foundation.

4) Schools, colleges and universities can arrange practical workshops for their students to volunteer at Edhi centers on weekends or holidays.  The hours of their volunteer services and their progress report should have points to be included in their mark sheets.

There is a lot that people can do for them to maintain and beautify their centers.  Their gates , grills and walls need to be painted, their floors need to be leveled, their passages need to be filled with plants and flowers, their slaughter house need to supplied with disinfectants, their children need to be provided with activities, their animal shelter need to be equipped with vet-staff, animal food, grassy patches, trees, flowers, plants, water and handy food for their workers at the shelter.

Edhi Foundation is not a charity anymore.  It has become the soul of Pakistan, a trust-building amenity between all Pakistanis.  Edhi’s name and services should immediately be made the part of our educational curriculum from Elementary to Ph.D.  His photos deserve to be placed right next to Allama Iqbal, Quaid-e-Azam and Ms. Fatima Jinnah.  May God bless him and his family and the entire team for symbolizing Pakistan with true spirit of humanity, Ameen!

 

A peaceful man in beard

 

http://edhidoc.com/

http://natashasuleman.wordpress.com/2010/07/23/the-man-called-edhi/