Confusions in Basic Arabic Grammar – عربی قواعد میں پیچیدگیاں

One of the miracles of is that it is the only book which is read and memorized by millions without understanding its language.

The miracle of Arabic language is that millions of Muslims learn Arabic with the intention of understanding Qur’an without having any attachment with Arabs.

Pakistanis learn Arabic for the same purpose.  The great advantage they have is that all (29) Arabic Alphabets are the part of Urdu Alphabets and are pronounced same in both languages.  More than 75% of Urdu words are taken from Arabic language and are used in the same meanings.  That is why the process of understanding Qur’an is much easier for Pakistanis as compared to other nations.

The books that are used in madrassahs and language institutions to teach Arabic make Arabic learning little complicated.  Putting the contents in all books together even don’t give an organized image of Arabic grammar.  Most books either explain more about verbs than noun and particles.  The writers select contents on the basis of their own preference of grammatical terms.

Generally, what they all teach is that Arabic alphabets compose two kinds of words; Mozoo’ (meaningful words) and Muhmil (meaningless).  Muhmil words have no types so they end right here.

Mozoo’ words are then categorized into two kinds; Mufrid (single word) called Kalimah and Murakkab (compound) which could be a sentence too.

Kalimah (single meaningful word) is divided into three types; Noun, Verb and Particles.  This means that entire Arabic vocabulary of meaningful words belong to one of these types.  Each type has its own definition and properties and words following the properties fall into that category.

.

The examples of these properties are as follows:

1- Particles are Mabni (their movements/sounds don’t change).  They have no gender, no numbers, no common or proper state and no cases of being subject or object.

2- Verbs are divided into past and present (present tense with signs makes future tense).  Past tense is all Mabni.  Verbs have gender, number and case of being subject or object beside action.  They have no common or proper state.

3- Nouns have gender, number, state of common and proper noun and case of being subject or object.  There is no concept of it in Arabic language.  A word has to be either masculine or feminine.

.

Still there are many things mentioned in the books are uncleared and create confusions for non -Arab students.  Although these complications are only literally and may cause confusion in learning language but not in Qur’anic understanding.  For example,
1- Ism Mushtaq (nouns derived from Masdar, the true nouns) are said to be six, seven or eight, depending upon how writers understand it.
2- Zameer (pronouns) are called noun but are not put under noun’s category.  Neither they are categorized as a separate one.
3- All verbs are said to be derived from Masdar (like Ism Mushtaq) but have their own category due to their own particular signs and formation.  
4- Ism Mansoob (nouns that show relation, like Pakistani, Arabian, Semitic) is neither under noun nor compound.
5- Some books include Murakkab Mana Sarf and Mazji (two kinds of compound) in compounds and some don’t.
6- Verbs have either three types or five, while all formations of verbs are derived from the two basic tenses, past and present.
7- Words of question or interrogation are called nouns while they don’t fulfill the properties to be a noun but particles.
8- “harf amilah dar fail mazara’ jazmah” (particles which cause change in ending sound and make it soundless) are either four or five?
9- Some words are called ‘noun to show time and place’  and at the same time they are called preposition without the change in their use or meaning.
.
.
قرآن دنیا کی وہ واحد کتاب ہے جسکو کروڑوں لوگ سمجھے بغیرپڑھنا سیکھ لیتے ہیں… یہ بات خود قرآن کے معجزات میں سے ایک ہے… عربی زبان دنیا کی وہ واحد زبان ہے جسکو کروڑوں لوگ عربی قوم سے کسی تعلق، نسبت یا انسیت کے بغیر صرف اسلام سے محبت کی وجہ سے سیکھتے ہیں… یہ عربی زبان کا معجزہ ہے…
.
پاکستان کے مدارس اور لسانی ادارے عربی زبان کے قواعد پڑھانے کے لئے جو بھی کتابیں استعمال کر رہے ہیں… ان میں کافی قدریں یا اصول مشترک ہیں… لیکن ساتھ ساتھ کچھ پیچیدگیاں بھی ہیں… یہ پیچیدگیاں شاید عربیوں کے لئے نہ ہوں یا انکے لئے کوئی معنی نہ رکھتی ہوں کیونکہ وہ اہل زبان ہیں… ویسے بھی اہل زبان کے لئے ضروری نہیں کہ انھیں اپنی زبان کے قواعد کا پتہ ہو… جبکہ عجمی یعنی کہ غیرعرب یا تو عربوں کے ساتھ رہ کر بغیرکسی قواعد کے یہ زبان سیکھتے ہیں… یا انہیں قرآن کو سمجھنے کے لئے عربی زبان سیکھنی پڑتی ہے… اہل زبان کی عربی اور قرآن کی عربی میں بہر حال فرق ہے جیسا کہ ہر زبان کی بولی اور قواعد میں فرق ہوتا ہے… اہل زبان کہیں کے بھی ہوں، وہ بات چیت کرتے وقت قواعد کے بارے میں نہیں سوچتے… قواعد کی ضرورت یا تو لکھنے لکھنے کے لئے ہوتی ہے… یا پھر کسی دوسری زبان کو سیکھنے کے لئے…
.
پاکستانی بھی عربی زبان کو قرآن و حدیث کو سمجھنے کے لئے ہی سیکھتے ہیں…
قرآن میں جو عربی کے الفاظ استعمال ہوۓ ہیں ان میں کوئی بھی حرف یا لفظ بلا وجہ نہیں ہے… بلکہ ہر حرف، لفظ اور حرکت کا کوئی نہ کوئی مطلب اور مقصد موجود ہے… اس لئے جو لوگ قرآن کو سمجھنے کے لئے عربی سیکھنا چاہتے ہوں انھیں قرآن ہی کے ذخیرہ الفاظ اور جملوں کی بناوٹ پر غور کرنا چاہیے… اور ایسا ممکن نہیں جب تک کہ عربی حروف تہجی، انکے مخرج، الفاظ، انکی حرکات کی پہچان نہ ہو… پاکستانیوں کے لئے یہ بات بھی مسئلہ نہیں کیونکہ اردو زبان کے پچھتر فیصد سے بھی زیادہ الفاظ عربی زبان سے ہی لئے گئے ہیں… اور عربی کے تمام حروف تہجی اردو میں موجود ہیں اور اسی ترتیب میں ہیں…
.
البتہ احادیث مبارکہ کو سمجھنے کے لئے عربی قواعد کے علاوہ عام فہم عربی زبان سے واقف ہونا بھی ضروری ہے…
.
عربی زبان سیکھتے وقت بتایا جاتا ہے کہ عربی حروف تہجی سے دو قسم کے الفاظ بنتے ہیں… موضوع یعنی با معنی الفاظ اور مہمل یعنی بے معنی الفاظ…
مہمل الفاظ کی کوئی قسم نہیں لہذا اگر یہ ہیں تب بھی یہیں ختم ہو جاتے ہیں… جسکا مطلب ہے کہ باقی سارے الفاظ با معنی ہیں… 
موضوع الفاظ دو قسم کے ہوتے ہیں… مفرد یعنی اکیلا لفظ جسے کلمہ بھی کہتے ہیں…اور مرکب یعنی کچھ الفاظ کا مجموعہ،  جو کہ جملہ بھی ہو سکتا ہے… 
کلمہ کی تین قسمیں ہیں… اسم، فعل اور حرف … اس کا مطلب ہے کہ تمام کے تمام با معنی الفاظ ان تین میں سے کسی ایک سے تعلق ضرور رکھتے ہوں گے… ورنہ وہ مہمل ہونگے…
.
کلمات کو اسم، فعل اور حرف میں تقسیم کرنے کی وجہ انکی علامات، حرکات اور استعمال ہے…
مثال کے طور پر…..
١) تمام حروف مبنی ہوتے ہیں یعنی انکے اعراب تبدیل نہیں ہوتے… حروف میں  مذکر موَنث، واحد تثنیہ جمع، رفع نصب جر اور نکرہ اور معرفہ  نہیں ہوتا…
٢) فعل میں مذکر موَنث، واحد تثنیہ جمع اور رفع نصب جر کی خاصیت موجود ہوتی ہے لیکن نکرہ  معرفہ نہیں ہوتا… فعل ماضی پورا مبنی ہوتا ہے…
٣) اسم میں مذکر موَنث، واحد تثنیہ جمع، رفع نصب جر اور نکرہ اور معرفہ کی خصوصیت ہوتی ہیں… اسم مبنی بھی ہو سکتے ہیں اور معرب بھی…
.
.
پیچیدگیاں:
.
١) عربی زبان کو سکھانے کے لئے لکھی گئی کتابوں میں اکثر اصطلاحات کی تعریفوں میں صرف فرق ہی نہیں ہوتا بلکہ انکی تقسیم بھی عجیب انداز سے کی گئی ہوتی ہے… مثال کے طور پر کسی کتاب میں اسم مشتق کی چھ ، کسی میں سات اور کسی میں آٹھ قسمیں ہیں… مطلب کہ کسی نے ایک قسم کو دوسرے سے ملا دیا تو کسی نے علحیدہ رکھا… ایک کتاب میں فعل اور اسم کے کچھ حصّے ہوتے ہیں اور دوسرے 
٢) ضمائر کو اسم بھی کہا گیا ہے لیکن نہ تو انہیں اسم کے ما تحت رکھا گیا ہے نہ انکی کوئی الگ قسم بنائی گئی ہے… کیونکہ بہر حال یہ فعل اور حرف تو ہیں نہیں…
٣) فعل کو الگ کلمہ کیوں بنایا گیا ہے جبکہ تمام افعال اسم مصدر سے ماخوذ ہوتے ہیں… اور سواۓ نکرہ معرفہ (عام اور خاص) کے باقی تینوں حالتیں موجود ہوتی ہیں…
٤) اسم منسوب کو نہ اسم میں رکھا گیا ہے نہ مرکبات میں…
٥) کچھ کتابوں میں مرکب منع صرف اور مرکب مزجی کو مرکبات میں شامل نہیں کیا گیا…
٦) کہیں فعل یا افعال کی قسمیں تین فعل ماضی، فعل مضارع اور فعل امر بتائی ہیں اور فعل نہیں اور کہیں فعل جحد ملا کرپانچ….
٧) کسی میں “حرف عاملہ در فعل مضارع جازمہ” چار ہیں اور کہیں پانچ…

٨) استفہامیہ یا سوالیہ کلمات کو اسم میں کیوں ڈالا جبکہ یہ حرف کو خصوصیات پر پورا اترتے ہیں، اسم کی نہیں…
٩) کچھ الفاظ کو اسم ظروف بھی کہا گیا ہے اور ساتھ ہی حرف عاملہ در اسم” میں “حرف جر” بنایا گیا ہے… کیوں؟ جبکہ استعمال وہی ہے…
.

About Rubik
I'm Be-Positive. Life is like tea; hot, cold or spicy. I enjoy every sip of it. I love listening to the rhythm of my heart, that's the best

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: